" ماں جی "

(Rehana Parveen, Karachi)

لوگوں کا ایک جمِ غفیر تھا جو ماں جی کے گھر پر اُمڈا پڑا تھا ، ہر آنکھ اشکبار تھی ، ماں جی کے لبوں پر ازلی پُرسکون مسکراہٹ تھی ، جیسے کہ پُرسکون نیند کی وادی میں ہوں ، دیکھنے والوں کو یقین ہی نہ آتا تھا کہ ماں جی کی روح کب کی پرواز کر چکی ہے ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
" ماں جی " پچھلے چالیس سال سے اس محلے میں آباد تھیں ، شوہر کی ایک ٹریفک حادثے میں ناگہانی موت کا دکھ اٹھانے والی ماں جی گیارہ سالہ " ساحر " کے ساتھ ساتھ کب پورے محلے کی ماں جی بن گئیں پتہ ہی نہ چلا ، شوہر کی اچانک وفات کے بعد اپنے بیٹے اور بوڑھی ساس کو یوں سنبھالا کہ ہر شخص ان کی ہمت پر حیران تھا ، ساحر کے والد " بزنس مین " تھے ، بہت زیادہ نہ سہی لیکن اتنا چھوڑ گئے تھے کہ کسی کے سامنے ہاتھ نہیں پھیلانے پڑے ، ، لیکن گھر بیٹھے کھانے سے تو قارون کا خزانہ بھی ختم ہو جاتا ہے ،اور ماں جی اس وقت بلکل جوان ، ایک پُر کشش بھر پور عورت تھیں ، باہر قدم نکالتیں تو جگہ جگہ لوگوں کی ہوس زدہ نظروں ﷽ سے خود کو بچاتیں یا رزق کے حصول کے لیئے جدوجہد کرتیں ۔۔؟۔۔
جبکہ ماں جی کے پیشِ نظر اپنی ذات کے ساتھ ساتھ ساس کا وجود بھی تھا اور " ساحر " کا مستقبل بھی ، کہ ایک ماں ہونے کے ناطے وہ کہیں بھی بیٹے کے لیئے تذلیل کا باعث نہیں بننا چاہتی تھیں ،
یہی سوچ کر ماں جی نے گھر کے چار کمروں میں سے ایک کمرہ جس کا ایک دروازہ باہر کی جانب بھی کھلتا تھا، اس میں ضروریاتِ زندگی کا سامان ڈلوا کرایک چھوٹے سے جنرل اسٹور کی صورت دے دی اور ساس کے بیٹھنے کا انتظام کر دیا ، ساحر سکس کلاس میں تھا ، اسکول سے ا کر وہ بھی دادی کے ساتھ بیٹھنے لگا ، ماں جی اندرونی معاملات دیکھتیں ، گھر گرہستی ، ساتھ ساتھ ساحر اور ساس کا بھی مکمل خیال رکھتیں ، نیک نیتی سے کھولے گئے اس جنرل اسٹور کو اللہ نے بہت جلد اس قابل بنا دیا کہ تینوں نفوس کے رزق کا بندوبست بخوبی ہونے لگا ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقت ذرا آگے سرکا اور ساحر نے میٹرک کر لیا ، اس خوشی کے ساتھ ہی اللہ نے ایک دُکھ پھر ماں جی کی جھولی میں ڈال دیا کہ ساحر کی دادی بھی داغِ مفارقت دے گئیں ، ماں جی نے یہ کٹھن وقت بھی بڑے ہمت اور حوصلے سے گزارا ، اب ساحر اِس قابل تھا کہ اسٹور چلا سکے لیکن اس کی تعلیم بھی ضروری تھی سو ماں جی کے کہنے پر ساحر نے کالج میں ایڈمیشن لے لیا ، اب گھر کے ساتھ ساتھ مان جی نے اسٹور کی ذمےداری بھی سنبھال لی ، کسی بھی گاہک کے لیئے بنا عمر کی تخصیص کے ماں جی نے ایک ہی رویہ اپنائے رکھا ، ہر ایک کو بیٹا کہہ کر مخاطب کرتیں ، اور بارعب انداز اپناتیں ، جس سے اتنا اثر پڑا کہ کبھی کسی کو کوئی غلط بات یا حرکت تو دور کبھی غلط اشارے ، کنائے کی بھی ہمت نہ پڑی ، اور یوں رفتہ رفتہ ماں جی سب کی " ماں جی " بن گئیں ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انہی دنوں ماں جی کے پڑوسی وسیم صاحب کا بیٹا اسٹور پر ایا جو اکثر ہی گھر کا سامان لینے آیا کرتا تھا ، لیکن اس دن اس کا چہرہ اترا ہوا بلکہ کسی حد تک سُتا ہوا تھا ، ماں جی نے پوچھا ،
بیٹا کلیم گھر میں سب ٹھیک تو ہے نہ ۔؟۔۔
کلیم : جی ماں جی سب ٹھیک ہے ،
ماں جی : بیٹا تم مجھے کچھ پریشان لگتے ہو ۔؟۔۔
کلیم نے چند لمحے سوچا پھر سر جھکاتے ہوئے بولا ، ماں جی اس بار کالج کی فیس نہیں دے پایا اور اگلی فیس کی ڈیٹ بھی آ گئی ہے ، پاپا چاہ کر بھی انتظام نہیں کر پائے ، میرا بی،اے کا آخری سال ہے ، اچانک پاپا کو بزنس میں نقصان اٹھانا پڑ گیا ہے اسی لیئے تنگی ہو گئی ہے ، بس یہی پریشانی ہے ،
ماں جی نے بغور ساری بات سنی اور کہا ، بیٹا ایسا کرنا جب شام میں ساحر گھر آ جائے تو تم اپنے ماں باپ کو لے کر میرے گھر آنا ، اور پریشان مت ہونا کہ اللہ بڑا مسبب الاسباب ہے ، ابھی یہ سودا لو اور گھر جاؤ تمہاری ماں انتظار کر رہی ہو گی ، کلیم شکریہ کہہ کر حیران حیراں سا گھر لوٹ گیا ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات نو بجے کے قریب کلیم اپنے ماں باپ کے ساتھ ماں جی کے گھر پر موجود تھا ، ماں جی نے بڑے سبھاؤ کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا ، اللہ نے بےشک بہت نوازا ہے ، بڑا کرم ہے اللہ کا ، لیکن اگر پڑوسی کے بارے میں جان کر بھی انجان رہی تو کہیں اللہ کی پکڑ میں نہ آ جاؤں ، آج مجھے کلیم کی زبانی آپ لوگوں کی مشکل کے بارے میں پتہ چلا تو میں نے سوچا شاید میں کسی کام آجاؤں ،
ماں جی نے کلیم کی ماں کے ہاتھ پر پیسے رکھتے ہوئے کہا ، یہ بیس ہزار ہیں ، کلیم کے کالج کی فیس ادا کر دو بچے کا آخری سال ہے اللہ اپنا کرم کرے گا جلد ہی بھائی صاحب کا ہاتھ بٹانے کے قابل ہو جائے گا تو لوٹا دینا ، اگر میں کسی اور کام آ سکی تو ضرور بتائیے گا ، کلیم کے ماں باپ تشکر آمیز جذبات سے ماں جی کو تک رہے تھے ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کے بعد تو جیسے ماں جی نے محلے والوں کی خبرگیری اپنے روز مرہ کے معمول میں شامل کر لی ، ہر کسی کے مسائل سے آگاہ ہونے کے ساتھ ساتھ ماں جی حتی الامکان مدد بھی کرنے لگیں کبھی روپے ، پیسے سے تو کبھی حوصلہ افزا باتوں سے ، کبھی اپنے مفید مشوروں سے ، یوں وہ مزید ہر دل میں بستی گئیں ، اب ہر کوئی بلاجھجک اپنے مسائل ماں جی سے ڈسکس کرنے لگا ، اللہ نے ماں جی کی روزی میں برکت ڈالی ، ساحر یونیورسٹی سے فارغ ہو کر اپنا بزنس کرنے لگا ، لیکن چاہ کر بھی جنرل اسٹور کو بند نہ کروا سکا کہ بقول ماں جی ، بیٹا اسی اسٹور کی وجہ سے تم یہاں تک پہنچے ہو ، اس کو یونہی چلنے دو ، اللہ تمہارے بزنس کو ترقی دے ، مزید نوازے ، ساحر ہمیشہ سے فرماں بردار بیٹا رہا ، کبھی ماں کو پریشانی سے دوچار نہ کیا ، سعادت مندی سے یہ بات بھی مان گیا ، ساحر کی شادی ہو گئی ، ماں جی اپنی بہو سے بھی بہت خوش تھیں ، پورا محلہ ماں جی کا نام لیوا تھا ، ماں جی کی ہر بات محلے والوں کے لیئے حرفِ آخر کی حیثیت رکھتی تھی ، ماں جی نے جنرل اسٹور کے نرخ اس قدر ارزان کر دیئے تھے کہ ہر خاص و عام ماہانہ سودا سلف اسی اسٹور سے لے جاتا ، اب تو دور دراز کے لوگ بھی " ماں جی جنرل اسٹور " پر آنے لگے تھے ، محلے والوں نے خود ہی اسٹور کو یہ نام دے دیا تھا ، گھر گھر میں ماں جی کے کردار و حوصلے کی مثالیں دی جاتی تھیں ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھری جوانی میں بیوگی کا دکھ اٹھانے پر بھی " ماں جی " کے قدم کبھی نہ لڑکھڑائے ، ہمیشہ عورت ذات کا بھرم رکھا ، چار دیواری کے اندربڑی تدبیر سے رزق کا بندوبست کیا ، کبھی بلا ضرورت گھر سے باہر قدم نہیں نکالا کہ کسی کو اُن پر انگلیاں اٹھانے کی ہمت ہوتی ، ساحر کی ماں ہونے کے ناطے کبھی لفظ " ماں " کی حُرمت کو پامال نہ کیا ، جس کا صلہ رب نے فرمانبردار اولاد ، رزقِ حلال ، کی صورت عطا کیا اور بھر پورعزت سے نوازا ، اب ماں جی اپنے بیٹے ، بہو ، اور دس سالہ پوتے کے ساتھ زنگی سے مزید خوشیاں کشید رہی تھیں ، پوتے میں ان کی جان تھی تو پوتا بھی ان پر جان وارتا تھا ، یونہی خوشیوں کے ہنڈولے میں جھولتے ، عزت و آبرو کی زندگی گذارتے ہوئے کب قضا کا وقت آ گیا پتہ ہی نہیں چلا ، رات میں تمام ضروری حاجات و فرائض سے فراغت پا کر ماں جی بستر پر لیٹیں اور نیند میں ہی کب اپنی جان مالکِ کائنات کے سپرد کر دی پتہ ہی نہیں چلا کہ اللہ نے ساری عمر ہمت و حوصلے کی چٹان بنی ماں جی پر موت اس قدر آسان کر دی کہ انہیں خود خبر نہ ہوئی ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور آج ہر آنکھ اشکبار تھی ، کسی کو یقین ہی نہ آتا تھا ، بہت سے لوگوں کو یہ محسوس ہو رہا تھا جیسے ان کی اپنی ماں اِس دنیا میں نہ رہی ہو ، ساحر کو یوں لگا وہ جیسے آج ہی " یتیم " ہوا ہے ، بے شک ماں جی کا کردار عورت کی عظمت کا ایک بلند مینار ہے ،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Rehana Parveen

Read More Articles by Rehana Parveen: 13 Articles with 8233 views »
میرا نام ریحانہ اعجاز ہے میں ایک شاعرہ ، اور مصنفہ ہوں ، میرا پسندیدہ مشغلہ ہے آرٹیکل لکھنا ، یا معاشرتی کہانیاں لکھنا ، .. View More
29 May, 2018 Views: 803

Comments

آپ کی رائے