با پ بیٹا

(Abdullah Umar, )

 ایک با پ نے اپنے بیٹے سے کہاـــاپنی بیوی کو طلاق دے دو۔ بیٹا حیران ہوا۔کیو نکہ میاں بیوی بچوں سمیت ہنسی خوشی کی زندگی گزار رہے تھے۔ بیوی میاں کی خدمت کرتی۔ہر حا لت میں صبرو شکر سے رہتی۔مگر والد بضد تھے ۔ بیوی کو طلاق دو ۔اور دلیل یہ دیتے ابر ہیم ؑ نے اپنے بیٹے کو طلا ق دینے کا کہا تو ان کے بیٹے نے طلاق دے د ی۔بیٹابڑا پر یشان ہو۔ا ایک طر ف با پ کا حکم دوسری طر ف بیوی بچوں کے مستقبل کا سوال ۔ اگر باپ کا حکم مانتا ہے تو بیوی بچوں کا مستقبل تباہ ہو جائے گا۔ اگر حکم کے خلاف کرتاہے تو اﷲ نارا ض ہوتا ہے۔نوجوان نے یہ سن رکھا تھا۔مفتی کے پا س ہر مسئلے کا حل موجود ہوتا ہے۔اس نے سو چا موقع اچھا ہے۔چلو اس بات کو آزماتے ہیں۔وہ خوف اور امید کے جذ بات لے کر ۔مفتی صا حب کے پاس پہنچا۔۔مفتی صا حب نے نو جوا ن کو گھبرایا ہوا دیکھ کر پوچھا کیا با ت ہے؟آپ کچھ پر یشان نظر آرہے ہیں؟ نو جوا ن کو ان کے لہجے میں ہمدردی نظر آ ر ہی تھی۔ نو جوا ن نے سا را مسئلہ مفتی صا حب کو بیا ن کیا۔ سا را مسئلہ سن کر مفتی صا حب بو لے کچھ اور آپ کہنا چا ہیں گے۔ نو جوا ن بو لا ہاں ایک اہم بات یاد آئی میر ی بیوی میرے با پ کے لئے حقہ نہیں تیار کر تی۔اب آپ بتاآئیے میرے لئے کیا حکم ہے۔مفتی صا حب بولے اگر مسئلہ ایسے ہی ہے جیسے آپ نے بیا ن کیا ہے۔اگر آپ کے والد صا حب ابر ہیم ؑ کی طرح اور آپ اسماعیلؑ طر ح ہیں تو طلاق دے دیں ورنہ نہ دیں۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Abdullah Umar

Read More Articles by Abdullah Umar: 5 Articles with 3922 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
10 Jul, 2018 Views: 434

Comments

آپ کی رائے