تبدیلی کے لیے ملک کا تعلیمی نظام اور نصاب یکساں بنائیں۔۔۔۔

(Abdul Qayum, )

 پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں تبدیلی کے لیے کام شروع کردیا ہے ان کے ایجنڈے میں لوٹ مار کرنے والوں کا احتساب کرکے کرپشن کا خاتمہ کرنا سرفہرست ہے یقینی طور پر یہ پاکستان کا ایک اہم ترین مسئلہ ہے ملک کے اکثر اداروں میں کرپشن کا ناسور موجود ہے جس کا خاتمہ ہونا چاہیے لیکن ملک میں اس کے علاوہ بھی بہت زیادہ مسائل ہیں جن پر حکومت کو توجہ دینے کی ضرورت ہے ۔ ان میں ایک بہت ہی اہم مسئلہ تعلیم کا ہے اس شعبے میں بہت زیادہ خامیاں اور خرابیاں ہیں جنھیں دور کرکے تعلیمی اصلاحات کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ یہ ایک افسوسناک حقیقت ہے کہ ماضی میں برسراقتدار لوگوں نے اپنی ذمہ داریاں احسن طریقے سے سرانجام نہیں دیں حکمران عوام کے مسائل حل کرنے اور ملک و قوم کی ترقی کے لیے کام کرنے کی بجائے اپنے مفادات پورے کرنے میں مصروف رہے یہ لوگ پاکستان میں اپنا مفاداتنا ہی سمجھتے تھے کہ انھوں نے یہاں کے عوام کو چھوٹے نعروں سے ورغلا کر اور سبز باغ دکھا کر ووٹ حاصل کرنے ہیں اور حکومت کرنی ہے یہ حکمران اقتدار کے بل بوتے پر لوٹ مار کرکے ساری دولت بیرونی ممالک میں جمع کرتے رہے اپنے کاروبار اور جائدادیں دوسرے ملکوں میں بنا ئیں یہ اپنا علاج بیرونی ممالک کے بڑے ہسپتالوں میں کراتے اور ان کے بچے بھی دوسرے ممالک میں تعلیم حاصل کرتے انھوں نے ملک اور قوم کو درپیش مسائل حل کرنے کی ذمہ داری ادا کرنے سے چشم پوشی کی اور تعلیم جیسے اہم شعبے کو بھی بری طرح نظرانداز کیا جس کا نتیجہ یہ ہے کہ ملک اس وقت بیشمار مسائل سے دوچار ہے۔یقینی طور پر نئی حکومت کے سامنے بہت زیادہ مسائل ہیں جن کی جانب توجہ دینے کی ضرورت ہے لیکن ایک نہایت اہم شعبہ تعلیم کا ہے جس پر ترجیحی بنیادوں پر توجہ دینے کی ضرورت ہے کسی بھی ملک کی ترقی اور خوشحالی کے لیے تعلیم نہایت ہی اہم ہوتی ہے پاکستان میں تعلیم جیسا اہم ترین شعبہ بیشمار مسائل میں گھرا ہوا ہے ضرورت تو اس امر کی تھی ملک میں تعلیم کے شعبے کو جدید دور کے تقاضوں کے مطابق ترقی دی جاتی اورہر حکومت تعلیم کے فروغ کو اپنی اولین ترجیحات میں شامل رکھتی اور شعبہ تعلیم کی ترقی کے لیے زیادہ سے زیادہ فنڈز خرچ کیے جاتے تاکہ ہمارے بچے بہترین زیور تعلیم سے آراستہ ہو کر ملک کی ترقی کی دوڑ میں دنیا کا مقابلہ کرتے۔لیکن افسوس کہ ایسا نہیں ہوا قیام پاکستان سے لے کر آج تک ہر حکومت نے اہم ترین شعبہ تعلیم کو بری طرح نظرانداز کیا گیااس کا سب سے بڑا ثبوت یہ کہ تعلیم کی مد میں قومی بجٹ کے اندر بہت ہی معمولی رقم رکھی جاتی ہے جس کا نتیجہ یہ ہے کہ ہمارا تعلیمی معیار نہ صرف دنیا کے مقابلے میں بہت ہی نیچے ہے بلکہ ایک اندازے کیمطابق اڑھائی کروڑ بچے سکول نہیں جاتے یہ بچے ہمارا مستقبل ہیں تعلیم حاصل کرنا ہر بچے کا حق ہے اور بچوں کو تعلیم دینا ریاست کا فرض اور ذمہ داری ہوتی ہے جس سے غفلت برتی جا رہی ہے اس جانب فوری طور پر توجہ دینے کی اشد ضرورت ہے۔نیز بچوں کو اعلیٰ تعلیم دلانے کے لیے ملک میں معیاری تعلیمی اداروں کا فقدان ہے بچوں کواچھی تعلیم حاصل دلانے کے لیے بیرونی ممالک کے تعلیمی اداروں کا رخ کرنا پڑتا ہے جو عام آدمی کے بس کا روگ نہیں ہوتا حکمران ملک میں اچھے تعلیم ادارے قائم کرنے کی بجائے اپنے بچوں کو اعلیٰ تعلیم کے لیے دوسرے ممالک میں بھیج دیتے تھے اس وقت ملک میں تعلیم کے کئی نظام اور مختلف نصاب ہیں سرکاری سکولوں اور کالجز کا تعلیمی نظام نجی تعلیمی اداروں سے مختلف ہوتاہے امیروں اور غریبوں کے بچے مختلف نصاب اور نظام کی تعلیم حاصل کرتے ہیں اس طرح تعلیم کی ابتداسے ہی قوم کے بچوں میں تفریق پیدا ہوجاتی ہے کہ یہ امیروں کے بچے ہیں جنھوں نے اچھے پرائیویٹ تعلیمی اداروں سے اچھی اور اعلیٰ تعلیم حاصل کرکے بڑے عہدے حاصل کرنے ہیں اور غریبوں کے بچوں نے سرکاری سکولوں میں تعلیم حاصل کرکے معمولی ملازمتیں حاصل کرنی ہیں سب سے بڑی قباحت جو شعبہ تعلیم میں مختلف نصاب اور دوہرے نظام سے پیدا ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ غریب لوگوں کے بچوں میں احساس کمتری پیدا ہونے کیساتھ قوم میں تفریق اور تقسیم پیدا ہوتی ہے جوقوم کے لیے کسی بھی طور فائدہ مند نہیں بلکہ یہ ہر لحاظ سے ملک کے لیے نقصان دہ ہے۔وزیراعظم عمران خان کو چاہیے کہ وہ جہاں بہت سارے بڑے اہم کام کرنے جارہے ہیں وہاں شعبہ تعلیم کو بھی اپنی پہلی ترجیح میں شامل رکھیں اور تعلیم کی بہتری کے لیے اقدامات کریں خاص طور پر ملک کے اندر تعلیم کا نظام اور نصابیکساں بنادیں تو یہ ان کا ایک بہت بڑا کارنامہ ہوگا جسے ملک کی تاریخ میں ہمیشہ سنہری حروف یاد رکھا جائیگا۔کیونکہ ملک میں تعلیم عام ہونے کیساتھ معیاری اور جدید تقاضوں کیمطابق یکساں قومی تعلیمی نصاب ہو تو اس سے قوم میں تقسیم اور تفریق پیدا ہونے کی بجائے اتحاد پیدا ہو گا اور معیاری تعلیم کی بدولت ملک ترقی اور خوشحالی منزلیں طے کرکے دنیا کا مقابلہ کرسکتا ہے امید ہے کہ پی ٹی آئی حکومت اس اہم ترین قومی مسئلے کی جانب توجہ دے کربھرپور ٹھوس اقدامات کرے گی تاکہ ملک میں صیح معنوں میں تبدیلی آسکے اور ملک و قوم ترقی اور خوشحالی کی منزلیں طے کریں اس کے لیے پرائیویٹ تعلیم اداروں پر پابندی لگاکر سرکاری سکولوں،کالجز اور یونیورسٹیوں کی حالت زار اور تعلیمی معیار کو بہتر بنایاجائے اس کے لیے ملک بھر میں تعلیمی نصاب یکساں بنایا جائے اور قومی بجٹ میں شعبہ تعلیم کی مد میں بجٹ بڑھایا جائے ۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Abdul Qayum

Read More Articles by Abdul Qayum: 25 Articles with 9863 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
28 Aug, 2018 Views: 481

Comments

آپ کی رائے