بھارت کی امریکا کے خلاف جوابی کارروائی

بھارت نے اتوار کے روز سے 28 امریکی مصنوعات پر اضافی محصولات عائد کر دیے ہیں۔ یہ فیصلہ امریکا کی طرف سے رواں ماہ کے آغاز میں بھارت کو دی جانے والی تجارتی مراعات کے خاتمے کے ردعمل میں کیا گیا ہے۔
 


جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق نئی دہلی میں بھارتی وزارت خزانہ کی طرف سے ہفتہ 15 جون کی شب امریکی مصنوعات پر اضافی محصولات عائد کرنے کا نوٹیفیکشن جاری کیا گیا اور آج اتوار 16 جون سے اس پر عملدرآمد شروع ہو گیا ہے۔

بھارت کی طرف سے عائد کردہ ان محصولات کی زد میں جو 28 امریکی مصنوعات آئی ہیں ان میں بادام اور دیگر نٹس، دالیں اور سیب بھی شامل ہیں اور یوں ان مصنوعات کی قیمتیں بھارتی مارکیٹ میں بڑھ جائیں گی۔

بھارت کے 'سینٹرل بورڈ آف اِن ڈائریکٹ ٹیکسس اینڈ کسٹمز‘ (CBIC) نے اپنے ایک سابق آڈر میں ترمیم کرتے ہوئے لکھا کہ یہ ''جوابی محصولات امریکا میں پیدا ہونے والی یا وہاں سے درآمد کی جانے والی 28 اشیاء پر لاگو کیے گئے ہیں‘‘ جبکہ دیگر ممالک سے آنے والی انہی اشیاء پر اضافی محصولات کا اطلاق نہیں ہو گا۔

بھارت نے پہلی مرتبہ اضافی محصولات کا اعلان جون 2018ء میں اُس وقت کیا تھا جب امریکا نے اسٹیل اور ایلمونیم جیسی بھارتی مصنوعات پر محصولات میں اضافہ کر دیا تھا۔ تاہم اس کے اطلاق میں بار بار تاخیر کی جاتی رہی اور آخری ڈیڈ لائن آج اتوار 16 جون کو ختم ہو رہی تھی۔
 


بھارت اور امریکا قریبی تجارتی تعلقات سے استفادہ حاصل کرتے رہے ہیں حالانکہ امریکا متعدد مرتبہ بھارت کو زائد محصولات کا حامل ملک قرار دیتا رہا ہے جس کی وجہ سے امریکی مصنوعات کی بھارت کی انتہائی بڑی مارکیٹ تک رسائی محدود تھی۔

یکم جون کو امریکا نے بھارت کو حاصل خصوصی مراعاتی تجارتی حیثیت کا خاتمہ کر دیا تھا۔ بھارت نے امریکا کی طرف سے 'جنرلائزڈ سسٹم آف پریفرینس‘ (GPS) سے بھارت کو خارج کرنے کے عمل کو 'بدقسمتی‘ قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ بھارت ایسے معاملات میں ہمیشہ اپنے مفادات کو مقدم رکھے گا۔

امریکا کی طرف سے جی پی ایس پروگرام 1976ء میں شروع کیا گیا تھا جس کا مقصد ترقی پذیر ممالک کی معاشی نمو میں مدد دینا تھا۔ جن ممالک کو یہ خصوصی تجارتی حیثیت دی جاتی ہے وہ اپنی دو ہزار کے قریب تجارتی اشیاء امریکا میں بغیر کسی ڈیوٹی کے درآمد کر سکتے ہیں۔ بھارت اس سہولت سے سب سے زیادہ فائدہ اٹھانے والا ملک رہا ہے۔


Partner Content: DW

Reviews & Comments

Language:    
India will impose higher tariffs on 28 American products including almonds, apples and walnut effective June 16, the government said in a notification on Saturday. The retaliatory tariffs, triggered by the US announcing higher duties on Indian steel and aluminium last year, were deferred multiple times in view of the trade dialogue between the two countries.