ایران نے اپنی سرزمین پر امریکی ڈرون مار گرایا

ایران کے محافظین انقلاب نے اپنی ویب سائٹ پر دعویٰ کیا ہے کہ انہوں نے ایرانی سرزمین پر امریکا کا ایک ڈرون طیارہ مار گرایا ہے۔ امریکی فوج نے مگر تردید کی ہے کہ اس کا کوئی ڈرون ایرانی سرزمین کے اوپر پرواز کر رہا تھا۔

نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق ایرانی محافظین انقلاب نے جمعرات بیس جون کو اپنی ویب سائٹ پر دعویٰ کیا کہ اس نے امریکا کا یہ ڈرون طیارہ جنوبی صوبے ہرمزگان کی فضا میں پرواز کرتے ہوئے مار گرایا۔ سرکاری خبر رساں ادارے اِرنا نے انقلابی حفاظتی دستوں کی ویب سائٹ 'سپاہ نیوز‘ پر شائع کردہ اس دعوے کی تفصیلات بتاتے ہوئے لکھا کہ یہ امریکا کا RQ-4 گلوبل ہاک طرز کا ایک ڈرون تھا، جو ہرمزگان کے ایک جنوبی ضلع میں ایرانی فضائی حدود میں داخل ہو گیا تھا۔
 


'سپاہ نیوز‘ نے بتایا کہ یہ واقعہ بدھ انیس جون کو پیش آیا۔ اس کے برعکس امریکی فوج نے اس ایرانی دعوے کی تردید کرتے ہوئے بدھ کو رات گئے کہا کہ کسی امریکی ڈرون نے ایرانی فضائی حدود کی کوئی خلاف ورزی نہیں کی۔ امریکی فوج کی مرکزی کمان کے ترجمان اور بحریہ کے کپتان بِل اربن نے کہا، ’’ایرانی فضائی حدود میں امریکا کا کوئی ڈرون موجود ہی نہیں تھا۔‘‘

اس سے قبل گزشتہ ہفتے امریکا نے اس بات کی تصدیق کر دی تھی کہ ایران نے اس سے کچھ عرصہ قبل ایک امریکی ڈرون طیارے کو مارا گرانے کی کوشش کی تھی۔ تب واشنگٹن نے یہ واضح نہیں کیا تھا کہ آیا اس وقت یہ امریکی ڈرون ایران کی فضائی حدود میں موجود تھا۔

مسلسل بڑھتی ہوئی کشیدگی
ایران اور امریکا کے مابین برسوں سے چلی آ رہی کشیدگی گزشتہ ایک ماہ کے دوران اور زیادہ ہو چکی ہے۔ پچھلے چند روز میں واشنگٹن کی طرف سے ایران پر یہ الزامات بھی لگائے جا چکے ہیں کہ خلیج عمان کے علاقے میں دو تیل بردار بحری جہازوں پر حملوں سمیت ایران خلیج فارس کے خطے میں اپنی 'منفی‘ سرگرمیوں میں اضافہ کرتا جا رہا ہے اور اسی لیے امریکا نے خطے علاقے میں اپنے فوجی دستوں اور بحری طاقت کی موجودگی میں بھی اعلانیہ اضافہ کر دیا ہے۔

آئل ٹینکروں پر حملے
گزشتہ ہفتے خلیج عمان کے علاقے میں جن دو آئل ٹینکروں پر حملے کیے گئے تھے، ان میں سے ایک پر جاپان اور دوسرے پر ناروے کا پرچم لہرا رہا تھا۔ بعد میں امریکا نے اپنے طور پر ایک ایسی ویڈیو بھی جاری کر دی تھی، جو واشنگٹن کے بقول اس بات کا ثبوت تھی کہ ان تیل بردار بحری جہازوں پر حملوں میں مبینہ طور پر ایران ملوث تھا۔ ایران تاہم ان حملوں کے سلسلے میں اپنے خلاف لگائے گئے جملہ الزامات کی تردید کرتا ہے۔ اسی تناظر میں منگل اٹھارہ جون کو جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے بھی پہلی بار کہہ دیا تھا کہ اس امر کے 'مضبوط شواہد‘ موجود تھے کہ ان دونوں سمندری حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ تھا۔


Partner Content: DW

Reviews & Comments

Language:    
DUBAI- A US official confirmed Thursday morning that a US military drone was shot down in international airspace over the Strait of Hormuz by an Iranian surface-to-air missile. Iran's elite Revolutionary Guards claimed earlier that they shot down a U.S. "spy" drone in the southern province of Hormozgan, which is on the Gulf, the Guards' news website Sepah News said..