چائلڈ لیبر اور غربت

(Raana Kanwal, Islamabad)

اس حقیقت سے انکار نہیں ہوتا کہ بچے کی مزدور ہمارے سماج میں بدترین برائیوں میں سے ایک ہے.دنیا دن بہ دن جدید ہوتی جا رہی ہے، پاکستان کی شرح خواندگی بچوں کی مشقت کی وجہ سے گھٹ رہی ہے۔ بچوں کو اسکولوں سے باہر رکھنے اور انہیں گھروں اور کھیتوں میں ملازمت کی وجہ سے، تعلیم یافتہ آبادی کی شرح فیصد کمی کی طرف جا رہی ہے. غربت کے حالات عام طور پر چائلڈ لیبر کو جنم دتیے.اس کی بنیادی وجوہات میں سے ایک وجہ ہے کہ خاندانوں ان کے خراب حالتوں کی وجہ سے اپنے بچوں کو تعلیم فراہم کرنے کی بجائے ذریعہ معاش کی کمائی کو ترجیح دیتے ہیں.

بچوں کی مشقت کے بنیاد غربت ہے. غربت تعلیم کے نقطہ نظر کو کم کرتی ہے اور متاثرین کو ان کی بقا کے لئے کم از کم ماحول بنانے کی اجازت دیتی ہے. پوپرز خاندان کے لئے روٹی کا ایک ذریعہ تلاش کرنے کے علاوہ اور کچھ نہیں کر سکتا. وہ دیگر تمام غیر معمولی چیزیں جیسے تعلیم، ذاتی مشورے اور مستقبل کی ترقی، ان سے واقف نہیں ہے. جب غربت مشکل زندگی کے انتخاب پر مجبور کرتی ہے تو غربت اس فرد کا وجود پوری طرح کمزور کرتی ہے.

اس طرح کے رکاوٹوں کو دیکھنے کے بعد، غربت زدہ اپنے کرتا دھرتا سے اجرت ادھارلے کر خود کی مدد شروع کرتے ہیں. وہ خاندان کع غذائیت فراہم کرنے کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں - کم پیسہ کماتے ہیں، لیکن کم از کم انہیں روزانہ کھانا کھلاتے ہیں غریب لوگ تقریبا ہر چیز سے جو کہ انسانوں کو آسانی سے اپنی زندگی میں زندہ رہنے کی ضرورت ہوتی سے محروم ہیں۔

زیادہ تر والدین، تعلیم کی قدر نہیں جانتے ہیں اور خود ان پڑھ ہونے کی وجہ سے ، اپنے بچوں کو تھوڑا سا پیسے، روٹی اور مکھن کے لئے کام کرنے کو ترجیح دیتے ہیں. ان میں سے اکثر ایسے کام کرنے پر زور دیتے ہیں کیونکہ ان کی آمدنی کا کوئی ذریعہ نہیں ہے. ان کے بچوں کو تعلیم سے آگاہ کرنے کے لئے محدود وسائل موجود ہیں.

ہر والدین کواپنے بچوں کو قلم اور کاغذ سے آگاہ کرنا چاہیں ؛ تاہم، پیسے کی قلت، انہیں ڈپریشن کی طرف لے جاتی ہے.تعلیم حاصل کرنا بچہ کا بنیادی حق ہے لیکن چائلڈ لیبر یہ حق چھین لیتا ہے.ایسا لگتا ہے جیسے تعلیم اور غربت دونوں پتھروں کے درمیان درمیانی طبقے کے خاندان پھنس گیے ہیں. بچوں کو ان کے والدین کے زیادہ معتبر اور منافع بخش خواہشات سے پہلے اپنے خوابوں کو کچلنا پڑتا ہے.

بچوں کو جو تعلیم حاصل کرنے میں دلچسپی رکھتے ہیں وہ سیکھنے کے بجائے کمانے کے لئے پابند ہیں. ان کے خوابوں کو کچل دیا جاتا ہے تاکہ وہ اپنے خاندان کے تمام ممبروں کے پیٹ بھرنے کے لۓ کچھ کر سکیں۔ بچے علم سیکھنے کی بجائے ویٹر، نوکروں، سینیٹری کارکنوں، اور مزدوروں کے طور پر کام کرتے ہیں.

اں بچوں کے، جو مستقبل کے سائنسدانوں، فلسفیوں، اور ٹیکنوکریٹس ہو سکتے ہیں کے لئے ایک المیہ نہیں ہے؟ وہ کمائی یا سیکھنے کی پہیلی میں پھنس گئے ہیں. خدا نے انسان کو بہترین شخصیت کی خصوصیات عطا کی. انہیں ان کو ایک پیچیدہ انداز میں استعمال کرنا چاہئے. انہیں دنیا کے سامنے اپنی ثقافتی اور اخلاقی تصویر مکمل طور پر پیش کرنی چاہیے.

نتیجتا، چائلڈ لیبر ہمارے معاشرے کے لیے ایک دھچکا ہے. یہ اعلی حکام کی ذمہ داری ہے کہ ایک ترجیحی بنیادوں پر اس مسئلے کو دور کیا جائے۔ ذمے دار والدین پر بھی ذمہ داری عائد ہوتی ہے جو رضاکارانہ طور پر اپنے بچوں کو لیبر فورس کے ایک حصے کے طور پر ملازمت کرواتے ہیں. انہیں عقل اور حکمت کے ساتھ بچوں کو ایک کامیاب مستقبل کے لئے تیار کرنے کے لئے کام کے بارے میں آگاہ کیا جانا چاہئے.

چائلڈ لیبر جہالت اور ناخواندگی کی وجہ سے پاکستان کی آئندہ نسلوں کو تباہ کر سکتا ہے. اس ملک کے کامیاب مستقبل کے لئے چائلڈ لیبر کی بیماری خطرناک ہو گی. پاکستان میں امیر دانشوروں کو یہ یقینی بنانا چاہئے کہ نئی نسل میں تعلیم کی اہمیت، ان کے مقاصد اور اس تکنیکی دنیا میں ان کے وجود کے مقصد سے واقف کروانا چاہیے. یہ بڑے پیمانے پر یقین کیا جاتا ہے کہ نوجوان ایک ملک کا مستقبل ہیں، لیکن یہ عملی طور پر ہونا چاہئے. بچوں کو لازمی تعلیم دی جانی چاہئے کیونکہ مناسب تعلیم انہیں ان کے نظریات، اور اپنے ملک کے اقدار کو درست طریقے سے پیش کرنے کی سمجھ بوجھ دیتی ہے۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Raana Kanwal

Read More Articles by Raana Kanwal: 50 Articles with 16216 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
26 Jul, 2019 Views: 212

Comments

آپ کی رائے