درد جدائی ۔۔۔ پہلی قسط ۔

(Shafaq kazmi, Karachi)
ایک ایسی بچی کی کہانی جس کو سب نے تنہا کردیا ۔۔۔ سب کے ہوتے ہوۓ بھی وہ بہت اکیلے تھی کوئی نہیں تھا اس کا ۔۔۔۔۔۔

درد تنہائی ۔۔۔۔۔ قسط نمبر ١ ۔۔۔۔۔از قلم شفق کاظمی

ماما مجھے بھی آپ کے ساتھ جانا ہے باہر گھومنے کے لئے پلیز لے جاؤ نہ پلیز ۔۔۔

تنگ نہیں کرو ۔۔۔ عدن میں نہیں لے کر جا رہی تمہیں لے کر جا کر شرم آتی ہے ہمیں ایک تو لوگ بھی پہچان لیتے ہیں تمہیں دیکھ کر ۔۔۔کے ہم ہے ۔۔۔ تم گھر پر ہی رک جاؤ میں اور آپی تمہاری جا رہے ہیں ۔۔

ماما پلیز نہ مجھے لے جاؤ ماما آپ کو کیوں شرم آتی ہے مجھے لے جا کر ۔۔۔۔ کیا میں اتنی بری ہوں ؟

تنگ نہیں کرو ۔۔۔ اور گھر پر بیٹھو ۔۔۔

ننھی عدن گھر بیٹھ کر روتی رہی ۔۔۔

آخر کیوں ماما آپ مجھے کہیں نہیں لے کر جاتی آخر کیوں آپ کو اتنی شرم آتی مجھ سے کیا میں آپ کی بیٹی نہیں ہوں ۔۔۔۔۔روتی رہی عدن
۔۔۔۔۔۔۔
عدن جب پیدا ہوئی تو عدن کی ماما کا ایکسیڈنٹ ہوگیا تھا

عدن کا بھائی ابنارمل تھا ۔۔۔ جس کی وجہ سے عدن کی ماما کو زیادہ وقت عدن کے بھائی زیان کو دینا پڑھتا تھا

عدن کی دو بہنے میرب اور زرنش تھی

دونوں عدن سے بڑی تھیں ۔۔۔
عدن شروع سے ہی اپنی بڑی بہنوں ساتھ رہتی تھی ان کے ساتھ سوتی تھی ۔۔۔ تو کبھی ماما سے اتنی خاص اٹیچ نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن تمہیں پتہ ہم لوگ گھمنے گئے تھے پوری فیملی بہت مزہ آیا تھا

ویسے سب کہیں نہ کہیں ویکینڈ پر گھمنے گئے تھے ۔۔۔

عدن تم نہیں گئ کیا ۔۔۔۔حریم نے عدن سے پوچھا ۔۔حریم عدن کی دوست تھی ۔۔۔


نہیں یار ہم کہیں بھی نہی گئے ۔۔۔


کیوں عدن ؟

بس کسی کو گھمنے کا شوق نہیں تبھی ۔۔۔ہاں پر ماما اور بہنے شاپنگ کرنے گئے تھے

تو تم نہیں گئ؟

یار چلو کلاس میں دیر ہو رہی شاید مس آمنہ آگئ ہیں ۔۔۔عدن نے بات کو چینج کر دیا یکدم ۔۔۔

ہاں اچھا چلو ۔۔۔۔۔

یار بتاؤ نہ تم نہیں گئ شاپنگ پر ۔۔۔حریم نے کلاس روم جاتے ہوۓ پوچھا ۔۔۔

یار آج تو مس نے ٹیسٹ بھی دیا تھا مجھے ایک نظر دیکھنا ہے ۔۔عدن نے پھر بات کو گھوما ۔ دیا ۔۔۔۔۔

اوکے چلو ۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔،۔۔. ۔۔۔۔۔۔۔
ماما کیسی ہیں آپ ؟ عدن ماما کے پاس لیٹ کر بولی ۔۔۔۔

عدن میرے پاس نہیں لیٹو روم میں جاؤ مجھے تمہاری عادت نہیں ہے میرے جسم میں درد ہو تا ہے۔۔۔۔۔

عدن اداس ہو کر اپنے روم میں آگئی ۔۔۔۔

آپی کیا کر رہی ہو ۔۔۔۔ عدن نے میرب سے پوچھا

عدن پلیز مجھے پڑھنے دو میں اخبار پڑھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔

مجھے بھی گیم کھیلنی ہے ۔۔مجھے بھی کھیلا ؤ نہ پلیز ۔۔۔۔۔۔عدن نے زرنش کو کہا ۔۔۔۔

عدن کیا مسئلہ ہے کھیلنے دو مجھے ابھی ۔۔۔۔۔۔۔آجاتی ہو ہر وقت تنگ کرنے ابھی تو لیپ ٹاپ اٹھایا ۔۔۔۔

ماما زرنش کو کہیں نہ مجھے بھی گیم کھیلا دے اپنے ساتھ ۔۔۔

نہیں ماما میں نے ابھی لیپ ٹاپ لیا اس کو کہیں کچھ اور کر لے ۔۔۔۔۔

عدن بڑی بہن ہے چلانے دو۔ اس کو لیپ ٹاپ ۔۔۔

پر ماما ۔۔۔۔

پر ۔۔۔ور کچھ نہیں جاؤ اسکول کا کام کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن مایوس ہو کر گلی میں کھیلنے چلی گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن سو جاؤ دوپہر کا ٹائم ہے ۔۔۔۔۔ماما نے عدن سے کہا ۔۔۔

نہیں ماما مجھے نیند نہیں آتی دوپہر کو ۔۔۔۔

گھر میں سب سو رہے تھے بس عدن جاگ رہی تھی ۔۔۔۔

بھائی سب سو گئے میں بور ہو رہی ۔۔۔ آپ میرے ساتھ کھیلو ۔۔۔

گھر میں جو لڑکا کام کرتا تھا عدن اس سے بات کر رہی تھی ۔۔۔۔کے اتنے میں باہر گلی سے بال آگئی بچھے کرکٹ کھیل رہے تھے ۔۔۔۔۔۔

افف بھائی بال آگئی ۔۔۔ اب دیکھنا یہ سب شور مچا دیں گے سب سو رہے جاگ جائں گے ۔۔۔۔

عدن نے بال اٹھا کر گلی میں پھینک دی تاکہ کوئی دروازہ نہ بجاۓ ۔۔۔


اتنے میں بچوں نے زور سے دروازہ بجانا شروع کردیا ہماری بال دو ۔۔۔

ارے یار پھینک تو دی ہے چیک کرو ۔۔۔

بھائی بال آگئی ۔۔۔اتنے میں کسی نے اس کو کہا ۔۔۔

اوہ اوکے سوری ۔۔۔۔۔

عدن کس سے باتیں کر رہی ہو اندر آؤ ۔۔۔۔ ماما کی آواز آئ ماما نیند میں تھی ۔۔۔۔

ماما کچھ نہیں آپ سو جاؤ ۔۔۔

میں کہتی ہوں اندر آؤ

عدن افف ماما ۔۔۔۔

عدن جسے اندر آئ ماما نے مارنا شروع کردیا ۔۔۔۔۔ شرم نہیں آتی لڑکوں کے ساتھ کھیلتی ہو ۔۔۔۔

نہیں ماما میں لڑکوں ساتھ نہیں کھیل رہی تھی آپ بھائی سے پوچھے لو ۔۔۔۔

بکواس بند کرو ۔۔۔۔ ماں ساتھ جھوٹ بولتی ہو ۔۔۔

آہ ہ ہ ہ ۔۔۔۔۔ماما سچ بال رہی ہوں ۔۔۔ ماما نے عدن کے کان زور سے پکڑے تھے

بی بی جی عدن میرے ساتھ کھیل رہی تھی یہ باہر نہیں گئ تھی ۔۔

تم چپ کرو اس کی سائیڈ لے رہے ہو ۔۔۔۔ ماما نے عدن کو اتنا مارا کے اس کے جسم میں درد شورع ہوگیا وہ سارا دن سوئ رہی ۔۔۔ہمت ہی نہیں تھی اٹھنے کی ۔۔۔۔

ہائے آج میں نے اپنی بچی کو بہت مارا ۔۔۔۔ماما نے عدن کے سر پر بوسہ دیتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔۔

ماما کیوں مارا آپ نے ۔۔۔۔ میرب نے سوال کیا ۔۔۔

لڑکوں کے ساتھ کھیل رہی تھی ۔۔۔۔

نہیں میں نہیں کھیل رہی تھی لڑکوں ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔

بکواس نہیں کرو ماں ساتھ جھوٹ بولتی ہو ۔۔۔۔۔ ماما نے عدن کو ایک تھپڑ لگایا عدن کے بدن میں ویسے ہی درد تھا اٹھا نہیں جا رہا تھا وہ واپس سے ہی گر گئ اور سو گئ
۔.......................
(جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 513 Print Article Print
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 36 Articles with 9119 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے میں کراچی سے ہوں ابھی ایف ایس سی کیا ہے میں حافظ قرآن ہوں۔ میں نے ہماری ویب پر لکھنا شروع کیا جہاں سے میرا ایک نام بنا پہچان ب.. View More

Reviews & Comments

Wow zabardast please epi 2 jaldi likhean .. sabar nahi ho raha
By: Komal, Islamabad on Oct, 08 2019
Reply Reply
0 Like
Language: