سموگ سے گھبرائیں نہیں ۔۔۔احتیاط کریں

(Yousaf Leghari, Layyah)

وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی ہدایت پرسموگ پر کنٹرو ل ، احتیاطی تدابیرسے آگہی اورسموگ سے بچاؤ کے لیے مختلف ہدایات جاری کی گئیں ہیں ۔اس سلسلہ میں پنجاب حکومت نے صوبے میں سموگ پر کنٹرول کیلئے بڑا اقدام اٹھا لیا، فصلوں کی باقیات، ٹائر، ربڑ کی مصنوعات جلانے پر دفعہ 144 نافذ کر دی گئی۔پنجاب حکومت کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق جن اشیا کے جلانے پر دفعہ 144نافذ کی گئی وہ موسم سرما میں سموگ پیدا ہونے کا باعث بنتی ہیں۔ اس لیے سموگ کے خطرہ سے نمٹنے کیلئے فوری اقدامات کیے جا رہے ہیں۔فضا کو سموگ سے بچانے کیلئے پرانے ڈیزائن کے بھٹوں کو بند رکھا جائیگا ،صرف زِگ زیگ ٹیکنالوجی استعمال کرنے والے بھٹوں کو کام جاری رکھنے کی اجازت ہوگی۔

حکومت پنجاب کی جانب سے ایڈائزری جاری کی گئی ہے کہ پنجاب بھر میں دھندلا بادل (سموگ )کے ممکنہ خدشات ہیں جو کہ نہ صرف آنکھوں میں شدید تکلیف اور حدنگاہ میں خطرناک کمی کا باعث بن سکتا ہے بلکہ سانس اور پھیپڑوں کی بیماری کا سبب بھی بن سکتا ہے اس لیے سموگ پھیلنے پر متاثرہ حصوں پر جانے سے گریز کرنا چاہیے تاہم اگر وہ پورے شہر کو گھیرے ہوئے ہے تو گھر کے اندر رہنے کو ترجیح دیں اور کھڑکیاں بند رکھیں۔ باہر گھومنے کے لیے فیس ماسک کا استعمال کریں اور عینک کو ترجیح دیں اگر دمہ کے شکار ہیں تو اپنے پاس انہیلر رکھیں اگر نظام تنفس کے مختلف مسائل کے شکار ہیں اور سموگ میں نکلنا ضروری ہے تو گنجان آباد علاقوں میں جانے سے گریز کریں سٹرک پرٹریفک جام ہونے کی صورت میں زہریلے دھوئیں سے بچنے کے لیے گاڑی کی کھڑکیاں بند رکھیں۔

پنجاب بھر میں اس وقت ایئرکوالٹی انڈیکس کی موجودہ صورتحال بہتر ہے۔اس وقت انڈیکس 189ریکارڈہے ،ایئرکوالٹی300تک خطرناک نہیں۔ایئرکوالٹی انڈیکس 500سے تجاوز کرجائے تو انسانی صحت کے لیے مضرثابت ہوتا ہے تاہم دوران سموگ احتیاطی تدابیر کاخیال رکھتے ہوئے روزانہ زیادہ پانی پیئں،گھروں کی کھڑکیاں اور دروازے بندرکھیں،گلیوں بازاروں یاسڑکوں پر زیادہ چلنے پھرنے سے پرہیز کریں اور زیادہ وقت گھر میں گزاریں،گھروں میں صفائی کے دوران جھاڑوکی بجائے گیلا کپڑا استعمال کریں ۔

محکمہ تحفظ ماحول پنجاب کی جانب سے بھی اس سلسلہ میں آگہی جارہی ہے کہ حالیہ موسمی صورت حال کا سبب فضائی آلودگی اور موسمی بارش کا نہ ہوناہے اس لیے سموگ سے گھبرانے کی بجائیں حفاظتی تدابیر کو اپنائیں اس ضمن میں گھرسے نکلتے وقت چہرے چہرے پر ماسک یارومال کا استعمال کریں،میلے ہاتھو ں سے جسم کو مت چھویں باہر سے گھر واپسی یا دفتر پہنچنے پر اپنے ہاتھ، چہرے اور جسم کے کھلے حصوں کو دھولیں،آنکھوں میں چھبن ہونے پر آنکھیں دھویں،زیر استعمال گاڑیوں کی دیکھ بھال ،بروقت ٹیوننگ و موبائل آئل تبدیل کروائیں،عوامی مقامات پر کوڑاکرکٹ،ٹائروں اور فصلوں کی باقیات کو مت جلائیں اس سے فضاآلودہ ہوتی ہے جو بعد میں سموگ کا باعث بنتی ہے جبکہ پنجاب انوائرئمنٹ پروٹیکشن ایکٹ کے تحت صنعتی و فضائی آلودگی پھیلانا سنگین جرم بھی ہے اس سلسلہ میں دفعہ 144کا نفاذ بھی کردیا گیا ہے -

انفرادی ،اجتماعی اور ذمہ دارشہری ہونے کے طور پرہماری ذمہ داری ہے کہ ہم تحفظ ماحول کے سبق کو یادرکھیں اور احتیاطی تدابیر کو اپنانے کے ساتھ اپنے اردگرد کے ماحول کو بھی صاف رکھیں تاکہ ہم اپنے اور اپنی آنے والی نسلوں کے لیے صاف ماحول قائم رکھ سکیں۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 254 Print Article Print
About the Author: Yousaf Leghari

Read More Articles by Yousaf Leghari: 2 Articles with 562 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: