درد جدائی ۔۔۔بیسویں قسط

(Shafaq kazmi, Karachi)

عدن کل شام تمہارا میرے ساتھ نکاح ہے ۔۔۔۔۔۔ منیب نے عدن عدن کے سر پر بم پھوڑا ۔۔۔۔۔

ن۔ ۔۔ن۔ ۔۔۔۔نکاح ۔۔۔۔۔۔م۔ ۔مم۔ ۔ مگر کس سے ۔۔۔۔؟عدن سہمے ہوۓ لہجے میں بولی ۔۔مجھ سے محترمہ اور کس سے منیب عدن کی آنکھوں میں دیکھتے ہوۓ بولا ۔۔۔۔ میں نہیں کروں گی نکاح تمہارے ساتھ ۔۔۔۔۔۔ عدن غصے سے چیختے ہوۓ بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔

نکاح تو تمہارا میرے ساتھ ہی ہوگا محترمہ ۔۔۔۔ کیوں کے تم میری مرضی کے بغیر کہیں جا نہیں سکتی ۔۔یہاں سے نکل نہیں سکتی ۔۔۔۔ عدن نے منیب کو دھکا دے کر پرے کیا اور روم سے جانے لگی ۔۔ نکاح تو میں تم سے خیر زبردستی بھی کر سکتا ہوں . مگر بھلائی اسی میں ہے تم دل سے مان جاؤ منیب نے عدن کی کلاٸ سختی سے پکڑی ۔۔اور اسے باہر جانے سے روکا ۔۔۔۔چھوڑوں مجھے درد ہورہا ہے ۔۔۔منیب ۔۔۔تکلیف سے عدن کی آنکھوں میں آنسو آگۓ ۔۔۔ تم اگر میری بات شرافت سے سن لیا کرو ۔۔۔تو مجھے کوٸ شوق نہیں کہ میں بار بار تمہارا ہاتھ پکڑوں ۔۔۔۔۔منیب نے سخت لہجے میں کہا ۔
تمہاری بات ماٸ فٹ ۔۔۔تمنے سمجھ کیا رکھا ہے مجھے ۔۔۔میں تہماری غلام ہوں کہ تمہارے حکم مانتی رہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں تم سے نکاح ہرگز نہیں کروں گی تم سے نکاح کرنے سے اچھا ہے کے میں خود کی جان لے لوں ۔۔۔۔۔۔۔عدن نفرت سے منیب کو دیکھتے ہوۓ کہنے لگی ۔۔۔۔۔

ارے ۔۔۔۔۔اتنا پیارا اور ہینڈ سم تو ہوں ۔۔۔۔اتنا برا بھی نہیں ہوں میں ۔۔۔۔۔خیر بیوی تو تم میری ہی بنو گی .۔۔۔۔۔۔۔منیب کلیۓ عدن کی نفرت سہنا مشکل ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔جن سے آپ شدید محبت کرتے ہوں ۔۔۔۔ان کی نظروں میں گر کر ۔۔۔۔زندہ رہنا بہت مشکل ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔منیب ہر دفعہ اک نٸ اذیت میں مبتلا ہو جاتا تھا ۔۔۔۔۔عدن کا نفرت بھرا انداز اس کی ذات کی دھجیاں بکھیر دیتا تھا ۔۔۔۔وہ ہر بار نۓ سرے سے ٹوٹ جاتا تھا ۔۔۔۔منیب بکھرے لہجے میں کہنے لگا ۔۔۔ نکاح تو تمہارا مجھ سے ہی ہو گا ۔۔۔۔بیوٹیشن آجاۓ گی مہندی لگوانے ۔۔۔کوٸ تماشا مت بنانا ۔۔۔اور تیار بھی ہوجانا ۔۔۔نخرے دکھانے کی ضرورت نہیں ہے ۔۔۔

مجھے نہیں لگانی کوئی مہندی نہ ہی نکاح کرنا ہے سمجھے تم ۔۔۔۔۔۔عدن کی آنکھوں میں آنسوں آگئے.۔۔۔۔

عدن نکاح تو تمہارا میرے ساتھ ہی ہوگا تم مانو یا نہ مانو ۔۔۔۔۔میں زبردستی تم سے نکاح کر لوں گا کیوں کہ میری مرضی کے بغیر تم۔ یہاں سے نہیں جا سکتی ہو ۔۔۔۔۔میں کوئی غلط قدم نہیں اٹھانا چاہتا ہوں۔۔۔آگے تم سمجھدار ہو ہی ۔۔۔منیب سمجھانے والے انداز میں عدن کو کہہ کر باہر چلا گیا ۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پلیز میری ایک بار میرے گھر والوں سے بات کروا دو ۔۔۔میں وعدہ کرتی ہوں میں تم دونوں کو بھی یہاں سے نکلوا دوں گی تم لوگ بھی اس قید سے آزاد ہوجاؤ گے پلیز ایک بار ۔۔۔۔۔۔۔عدن رو رو کر منتیں کر رہی تھی ۔۔۔۔

دیکھو ہم تمہاری بات نہیں کروا سکتے ۔۔۔۔۔۔ منیب اچھا لڑکا ہے تمہیں خوش رکھے گا کرلو نکاح ۔۔۔۔۔۔

اچھا لڑکا ہے ؟؟ میری زندگی برباد کردی ۔۔۔۔میرے گھر والے مجھے ڈھونڈھ رہے ہوں گے ۔۔۔۔پتہ نہیں ماما بابا زرنش ۔۔۔۔میرب ۔۔۔ کیسے ہوں گے ۔۔۔سب میرے لئے پریشان ہوں گے ۔۔۔۔۔ماما بھی بیمار ہے بابا بھی۔۔۔۔۔ابھی بھی تم لوگ اس کو شریف اور اچھا کہ رہے ہو ۔۔۔ جس نے تم لوگوں کو بھی اغوا کیا تم لوگوں کے ماں باپ سے دور کیا تم لوگوں کو ۔۔۔۔۔عدن زور زور سے رونے لگی ۔۔۔۔۔تھک گئی تھی عدن سب کچھ برداشت کرتے کرتے سہتے سہتے ۔۔۔۔۔۔کتنی تکلیف ہوتی ہے نہ جب آپکا کوئی قصور بھی نہ ہو پھر بھی آپ کو مجرم قرار دیا جاۓ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تھک جاتا ہے انسان ٹوٹ کر بکھر جاتا ہے ۔۔۔۔

دیکھو رونا بند کرو ۔۔۔ ہم تمہیں کچھ نہیں بتا سکتے ۔

کتنی عجیب لڑکیاں ہیں ناں ۔۔۔۔۔عجیب جاہل ۔۔۔۔۔جن کو اپنی پرواہ نہیں اپنی عزت کی پرواہ نہیں ۔۔۔ایک نا محرم کے ساتھ رہ رہیں ۔،پتہ نہیں کب سے ۔۔۔۔اور منیب پتہ نہیں کس غلطی کی سزا دی ہے مجھے تم نے ۔۔۔۔کاش میں اس دن جاتی ہی نہ شاپنگ پر ۔۔۔۔تو یہ سب نہ ہوتا ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
یا اللّه پتہ نہیں میری بچی کہاں ہو گی کس حال میں ہو گی ۔۔۔۔۔یا اللّه اس کو اپنے حفظ و آمان میں رکھنا پتہ نہیں کون لے گیا اس کو ۔۔۔۔۔میری بچی ہے بھی بہت معصوم ۔۔۔۔یا اللّه عدن کو سہی سلامت واپس لے آئیں ۔۔۔۔۔عفاف عاید رو رو کر دعا کر رہی تھی ۔۔۔۔۔

ماما بابا نے کہا ہے نہ ان کو پتہ ہے عدن کہاں ہے وہ ٹھیک ہو گی ۔۔۔۔۔۔میرب ماں کو تسلی دے رہی تھی اندر اندر اس کا بھی دل گھبرا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

ہم لوگوں کو کیا منہ دیکھائیں گے ۔۔۔۔تمہاری پھوپھو نے ویسے بھی خاندان بھر میں بدنام کر رکھا ہے ۔۔۔۔۔۔

اللّه ہے نہ ماما سب ٹھیک ہو جاۓ گا آپ پریشان نہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔عدن آجاۓ گی واپس ۔۔۔۔۔۔

اللّه کرے آجاۓ ۔۔۔۔۔۔

کاش اس دن میں عدن کو جانے ہی نہ دیتی ۔۔۔تو آج ہماری بہن ہمارے پاس ہوتی ۔۔۔۔۔پر مجھے بھی کچھ نہیں پتہ تھا ۔۔۔۔۔خیر ماما آپ پریشان نہ ہوں عدن جلد ہی آجاۓ گی ۔۔۔۔۔ہم بابا سے پوچھنے کی کوشش کریں گے بابا آجاٸیں تو میرب اور عدن ماما کو تسلی دینے لگیں ۔۔ ۔۔۔۔۔

تمہارے بابا کچھ بھی نہیں بتا رہے پتہ نہیں کہاں چھوڑ آئے میری بچی کو ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منیب پلیز مجھے گھر چھوڑ دو پلیز نہیں کرو نہ ایسا ۔۔۔۔۔عدن منیب کے پاس آگئی ۔۔۔منیب لیپ ٹاپ پر کچھ کام کر رہا تھا ۔۔۔لیپ ٹاپ بند کردیا ۔۔۔اور اٹھ کر کھڑا ہوگیا ۔۔۔

منیب پلیز .۔۔۔۔عدن کی آنکھیں سرخ ہوگئی تھیں رو رو کر ۔۔۔۔ ۔۔۔۔ منیب سے عدن کا یہ حال دیکھا نہیں جا رہا تھا ۔۔منیب نے عدن کے بہتے آنسوں صاف کئے ۔۔۔۔

عدن۔ تم ۔۔۔تم۔۔۔تمہیں تو اتنا تیز بخار ہے ۔۔۔۔تم نے بتایا کیوں نہیں ۔۔۔۔۔چلو ریسٹ کرو۔۔۔۔۔۔۔۔

منیب نہیں۔۔۔ پلیز جانے دو نہ۔۔ نہیں کرو میرے ساتھ ایسا۔۔ میں نے کیا بگاڑا ہے تمہارا ۔۔ ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔اٹھو ۔۔۔چلو میں تمہیں کمرے تک لے جاؤں .
تمہیں تو میں ہمیشہ ہنستے ہوۓ اچھی لگتی تھی نہ منیب ___،

تم مجھے اب بھی ہنستے ہوۓ ہی پسند ہو عدن ۔۔۔۔یوں روتے ہوۓ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔منیب اداس سا مسکرایا ۔۔۔۔۔

پھر کیوں رلا رہے ہو مجھے اور میرے گھر والوں کو ۔۔۔۔میرے گھر والے پریشان ہوں گے ۔۔۔ میرے کردار پر باتیں بنیں گیں ۔۔۔بابا ماما کی تربیت پر لوگ باتیں کریں گے ۔۔۔۔۔۔

کوئی کچھ نہیں کہے گا پریشان نہیں ہو جب تک میں زندہ ہوں کوئی تمہیں کچھ نہیں کہہ سکتا بس کل تمہارا میرے ساتھ نکاح ہوجاۓ گا۔۔۔میں تمہارا محرم بن جاؤں گا ۔۔۔

ماما بابا پریشان ہوں گے ۔۔۔میں ان کی اچھی بیٹی نہیں بن سکی ۔۔۔۔مجھے مر جانا چاہئے ۔۔۔۔۔

چپ ۔۔۔بکواس نہیں آئندہ مرنے کا نام نہیں لینا تم نے ۔۔۔۔اور تم گھر والوں کی فکر نہیں کرو تمہارے بابا کو پتہ ہے تم میرے ساتھ ہو ۔۔۔۔۔باقی باتیں میں ابھی تمہیں نہیں بتا سکتا ۔۔ بس اتنا کہوں گا میں جو کر رہا ہوں اس میں تمہاری بھلائی ہے ۔۔۔۔۔تمہیں وقت آنے پر سب پتہ چل جاۓ گا عدن ۔۔۔۔۔

کیا کہہ رہے ہو تم بابا کو پتہ ہے ۔۔بابا مجھے یہاں کیوں رہنے دے رہے ہیں ۔۔ وہ اب تک کیوں نہیں آئے ۔ مجھے لینے ۔۔۔۔۔تم جھوٹ کہہ رہے ہو ۔۔۔

میں سچ کہہ رہا ہوں عدن ۔۔۔۔۔تمہارے بابا جانتے ہیں تم میرے ساتھ ہو پر وقت آنے پر میں تمہیں ساری حقیقت بتا دوں گا ۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں میں نے جو کیا اس سے تمہیں مجھ سے نفرت ہو گئی ہے پر ۔۔جب تمہیں حقیقت پتہ چلے گی میں نے ایسا کیوں کیا تو تمہارے دل میں میرے لئے نفرت نہیں ہوگی ۔۔تم چاہ کر بھی نفرت نہیں کر سکو گی مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔
منیب پلیز میری ایک بار گھر والوں سے بات کروا دو ۔۔۔۔اتنے دن ہوگئے ہیں میں نے کسی سے بھی بات نہیں کی۔۔۔ میرا دل بہت اداس ہے پلیز منیب۔۔۔۔۔

عدن تمہیں بہت تیز بخار ہے پہلے تم دوائی لے لو پھر کرواتا ہوں تمہارے گھر والوں سے بات ۔۔۔۔

نہیں مجھے دوائی نہیں کھانی پہلے بات کرنی ہے ۔۔۔۔اُس دن بھی تم نے کہا تھا پہلے کھانا کھا لو پھر بات کرواؤں گا ۔۔۔۔لیکن تم نے نہیں کروائی تھی بات ۔۔۔۔عدن کی اس طرح معصوم سی ضد اور شکایت پر منیب کو ہنسی آگئی ۔۔۔۔عدن کو بہت تیز بخار تھا ۔۔۔۔ منیب جانتا تھا عدن کی یہ حالت پریشانی کی وجہ سے ہوئی ہے وہ مزید پریشان نہیں دیکھ سکتا تھا عدن کو۔۔۔۔ منیب حالات کو مد نظر رکھ کر سچ تو نہیں بتا سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔

اچھا سنو ۔۔۔۔یہ لو فون کر لو بات گھر والوں سے ۔۔۔منیب نے عدن کو فون پکڑا دیا ۔۔۔۔

عدن کے چہرے پر خوشی آگئی ۔۔۔۔عدن نے جلدی سے فون لے لیا اور نمبر ڈائل کردیا ۔۔۔

ہیلو ۔۔۔میرب نے فون اٹھایا ۔۔۔۔۔

ہیلو آپی میں عدن ۔۔۔۔۔۔عدن کھڑی ہوگئی ۔۔۔۔۔

عدن ۔۔۔۔تم ۔۔۔ماما ۔۔۔ماما عدن کی کال آئ ۔۔۔ سب بھاگ کر آگئے ۔۔۔۔عدن کہاں ہو تم کسی ہو۔۔۔۔۔تم ٹھیک تو ہو نہ

آپی مجھے نہیں پتہ کہاں ہوں میں ۔۔۔۔

میرب فون سپیکر پر لگاؤ ۔۔۔۔زرنش اور ماما نے کہا ۔۔

عدن تم ٹھیک تو ہو نہ ۔۔۔

آپی مجھے نہیں پتہ میں کہاں ہوں ۔۔۔کل میرا نکاح ہے ۔۔۔۔عدن آنسوں صاف کرتے ہوۓ بولی منیب نے عدن کی جانب دیکھا ۔۔۔منیب کو ترس آرہا تھا عدن پر ۔۔۔۔

کیا نکاح ۔۔۔۔۔؟؟؟ پر کس سے ۔۔۔۔؟؟؟
زرنش ۔۔۔عفاف_ _میرب پریشانی سے ایک دوسرے کی طرف دیکھنے لگیں ۔۔۔۔۔

ہاں آپی ۔۔۔اور یہ کہہ رہا ہے کے بابا کو سب پتہ ہے میں کہاں ہوں ۔۔۔

ہاں م بابا سب جانتے ہیں کے تم کہاں ہو ۔۔۔ہم نے بہت بار پوچھنے کی کوشش کی مگر وہ بتاتے نہیں کہتے وقت آنے پر سب پتہ چل جاۓ گا ۔۔۔تم بتاؤ کہاں ہو ۔۔۔۔ہم آجاتے ہیں لینے۔۔

کیا بابا جانتے ہیں سب ۔۔۔۔ان کی بیٹی اتنے دنوں سے گھر پر نہیں وہ سکون سے ہیں .۔۔۔۔کیسے ۔۔۔۔۔مجھے یقین نہیں آرہا ۔۔۔عدن کو چکر آنے لگے منیب نے عدن سے فون لے لیا اور کال کاٹ دی ۔۔۔

عدن تم ٹھیک تو ہو ۔۔۔۔ منیب نے عدن کو سہارا دیا ۔۔۔۔

منیب بابا جانتے ہیں سب ۔۔۔۔۔ بابا کیوں ایسا کر رہے ہیں ۔۔۔۔ب۔ ۔۔ب۔ ۔۔ب۔ ۔با۔ ۔۔بابا ،، عدن یہ کہتے ہوۓ بے ہوش ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن ۔۔۔۔عدن اٹھو ۔۔۔۔عدن کیا ہوگیا ہے تمہیں ٹھیک تو ہو ۔۔۔۔۔۔

رابعہ رابعہ ۔۔۔۔۔۔

جی جی سر کیا ہوا ۔۔۔۔۔رابعہ بھاگ کر آئ ۔۔۔۔۔

جاؤ جلدی سے ڈاکٹر کو بلاؤ جلدی ۔۔۔۔

سر یہ عدن کو کیا ہوا ۔۔۔۔۔رابعہ نے عدن کو بے ہوش دیکھ کر منیب سے پوچھا

انویسٹیگیشن بند کرو ڈاکٹر کو بلاؤ جلدی منیب چلّایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یس سر ۔۔۔۔۔۔ رابعہ ڈاکٹر کو بلانے بھاگی ۔۔۔

(جاری ہے )
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 84 Articles with 48719 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
13 Nov, 2019 Views: 483

Comments

آپ کی رائے