درد جدائی ۔۔۔۔۔قسط 25

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی .۔۔۔ قسط 25 ۔۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے

ویلکم میم۔۔۔ آپ کو کچھ چاہیۓ ۔۔۔۔ایک ویٹر اس کی ٹیبل پہ آیا ۔۔اور اس سے پوچھنے لگا ۔۔۔۔پچھلے بیس منٹ سے وہ اس کا انتظار کر رہی تھی ۔۔۔ڈارک براٶن شولڈر کٹ بال اس نے چہرے کی باٸیں ساٸیڈ اورکندھے پر گرا رکھے تھے تاکہ اس کا چہرہ واضح نہ ہو ۔۔۔۔بلیک جینز اور ڈیپ ریڈ ٹاپ پہننے وہ مسلسل اپنی رنگ گھما رہی تھی ۔۔۔۔اور اضطراب کا شکار لگتی تھی ۔۔۔کورنر ٹیبل پر ہونے کی وجہ سے وہ ہر نۓ آنے والے کی نظروں سے اوجھل ہوگٸ تھی ۔۔۔لیکن وہ خود جس ڈاٸریکشن میں بیٹھی ہوٸ تھی ۔۔۔ہوٹل میں داخل ہونے والے ہر شخص کو دیکھ سکتی تھی ۔۔۔۔ اتنے میں ایک شخص آتا دکھاٸ دیا بلیک تھری پیس پہنے وہ ایک معزز شخص دکھاٸ دیتا تھا ۔۔۔اس کے پچکے گال چھوٹی لیکن چمکدار آنکھیں ۔۔اس کے۔مکار اور بدفطرت ہونے کا پتہ دیتی تھی ۔۔۔ ۔۔۔اس کے داٸیں باٸیں دو آدمی اور بھی تھے وہ تینوں ایک ٹیبل کی طرف بڑھ گۓ تھے ۔۔۔۔۔۔ وہ چونک گٸ اور ان کو دیکھنے لگی ۔۔۔

۔ایک اور شخص جو ان کا ساتھی معلوم ہوتا تھا ۔۔ ان تینوں آدمیوں سے کچھ فاصلے پر موجود تھا ۔۔۔اور ان تینوں سے لا تعلق نظر آرہا تھا ۔۔

۔اتنے میں ریڈ ٹاپ والی لڑکی کی رنگ واٸبریٹ کرنے لگی ۔۔۔اس نے آنکھوں پر گلاسز چڑھا ۓ اور واش روم کی طرف بڑھ گٸ ۔۔۔۔

اس نے رنگ کو پریس کیا بلیک ٹاٸیگر سپینگ اوور ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ رنگ کی شکل کا ٹرانسمیٹر تھا ۔۔۔۔وہ آچکا ہے اوور۔۔۔۔۔پلان کے مطابق سب ایجنٹس ریڈی ہیں ۔۔۔جو بیرے ٹارگٹ کے قریب ہیں ۔۔وہ اپنے ایجنٹس ہے ۔۔۔میرا کام مکمل ہو گیا ہے ۔۔۔میں جا کر ٹارگٹ کی گاڑی کو کنٹرول میں لیتی ہوں ۔۔۔تم ان کے چوتھے ساتھی کو اپنے کنٹرول میں لو ۔۔وہ ہوشیار معلوم ہوتا ہے اوور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بلیو کیٹ بلیک ٹاٸیگر کو اندر کے حالات بتا کر ایگزٹ ڈور کی طرف بڑھتی چلی گٸ ۔۔۔۔

انہوں نے ٹیبل پر بیٹھتے ہی ایک ویٹر کو اپنی طرف آنے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔اور اسے بلیک کافی آرڈر کی ۔۔۔۔۔
وہ ویٹر مستعدی سے آرڈر نوٹ کر کے جا چکا تھا ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔.
چار لوگ زنجیروں سے بندھے بے ہوش تھے ۔۔۔جیسے ہی ان کو ہوش آۓ ۔۔۔مجھے انفارم کر دینا ۔۔۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر اپنے راٸیٹ ہینڈ کو ہدایت کر کے آپریشن روم کی طرف بڑھ گیا
اور باس کو کال کرنے لگا۔۔
آہستہ آہستہ ان چاروں کو ہوش آگیا تھا ۔۔۔۔وہ اپنے آپ کو ایک کمرے میں دیکھ کر خوف زدہ ہو گۓ تھے ۔۔۔۔

باس یہ کیسے ہو گیا ۔۔۔انہوں نے ہمیں ڈھونڈ کیسے لیا ۔۔۔۔۔۔ایکس زیرو دہشت زدہ لہجے میں کہنے لگا ۔۔۔۔

ابے لوزر چپ کرو ۔۔۔۔تم تینوں اندھے تھے نظر نہیں رکھ سکتے تھے کہ تعاقب ہو رہا ہے ہمارا ۔۔۔پچکی گالوں والا جو ان کا باس معلوم ہوتا تھا چیختے ہوۓ کہنے لگا ۔۔۔۔۔۔
لوزر تو تم ہو ۔۔۔۔۔تم تو معمولی سپاہی بننے کے لاٸق نہیں اور باس بنے پھرتے ہو ۔۔۔۔اگر میں بندھا ہوا نہ ہوتا تو تمہاری پچکی ہوٸ شکل کو دیوار سے چپکا دیتا ایکس زیرو غصے سے چیختے ہوۓ بولا۔

۔ایکس زیرو یہ لڑنے کا وقت نہیں ہے ۔۔۔۔اب یہ سوچو کہ کرنا کیا ہے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عدن آج میں تمہیں سب کچھ سچ سچ بتاتا ہوں ۔۔منیب نے عدن کا ہاتھ تھاما منیب کی آنکھوں سے آنسوں بہہ رہے تھے ۔۔۔ تمہیں پتہ ہے میں کون ہوں ۔۔۔۔میں منیب نہیں ہوں ۔۔۔۔میرا نام محمّد غازان ہے ۔۔۔۔میں پاک آرمی میں ہوں میجر ہوں ۔۔۔۔۔۔۔تمہیں لگتا ہے کے میں نے تمہیں اغوا کیا ہے ۔۔۔۔۔۔میں تو تمہیں اس دن ان درندوں سے بچا رہا تھا ۔۔۔۔۔عدن تمہارے بابا ہمارے باس ہیں ۔۔۔۔کچھ راء کے بندے ہیں جن کی اہم۔ فائل ہمارے ہاتھ لگ گئی تھی اس میں ان کے اہم راز تھے ۔۔۔۔وہ اس فائل کو حاصل کرنا چاھتے تھے ۔۔۔۔۔۔ان کو پتہ چلا تم باس کی بیٹی ہو ۔۔۔وہ تمہیں شاپنگ مال میں کڈنیپ کر کے تمہارے بابا کو بلیک میل کرنا چاھتے تھے ۔۔۔۔۔یہ خبر ہم تک پہنچ گئی کے تم کڈنیپ ہونے والی ہو . ۔۔۔۔۔۔۔۔اس وجہ سے میں تمہیں اس دن وہاں سے لے آیا تھا اور سیف ہاؤس میں رکھا وہ دو لڑکیاں بھی پاک آرمی میں ہیں جو تمہارا خیال رکھ رہیں تھیں ۔۔۔۔عدن تمہیں لگا میں غلط بندہ ہوں ۔۔تمہیں لگا میں نے ان لڑکیوں کو بھی اغوا کیا ہے ۔۔تمہیں لگا میں نے ان کی عزتوں کے ساتھ کھیلا ہے ۔۔۔عدن میں کسی کی عزت ساتھ کیسے کھیل سکتا ہوں ۔۔میں تو موحافظ ہوں۔۔۔۔۔تم نے مجھے گھٹیا اور گرا ہوا سمجھا ۔۔۔تم مجھ سے نفرت کرتی چلی گئی ۔۔۔۔۔میں لمحہ لمحہ کس کرب سے گزر رہا تھا تمہیں بتا نہیں سکتا ۔۔۔عدن میں۔ مجبور تھا میں تمہیں سچ نہیں بتا سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔اور یہ بات تمہارے بابا کو بھی پتہ تھی عدن ۔۔۔۔۔عدن میں تم سے نکاح اس وجہ سے کرنا چاہتا تھا کیوں کے میں نہیں چاہتا تھا کل کو کوئی تمہارے کردار پر بات کرے۔۔۔۔۔کل کو کوئی تمہارا جینا مشکل کردے ۔کل کو کوئی کہے تم کسی نا محرم ساتھ رہ چکی ہو ۔۔۔۔۔اس لئے میں تمہارا محرم بننا چاہتا تھا ۔۔۔۔اور عدن میں تم سے بے پناہ محبت کرتا ہوں میں تمہیں اس حال میں نہیں دیکھ سکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز واپس زندگی کی طرف آجاؤ عدن ۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز خود کو صدمے سے باہر لے آوّ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔منیب روۓ جا رہا تھا ۔۔ضبط کا بندھن ٹوٹا۔۔۔۔ تو لفظ بھی ٹوٹنے لگے عدن کا ہاتھ پر اپنے لبوں پر رکھ کر رونے لگا ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(جاری ہے )
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 84 Articles with 48284 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
18 Nov, 2019 Views: 547

Comments

آپ کی رائے