درد جدائی قسط 27

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی ۔۔۔۔قسط 27۔ ۔۔۔۔۔۔مصنفہ شفق۔ کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر کہیں پوسٹ کرنا منع ہے

منیب ۔۔۔عدن نے منیب کی جانب دیکھا ۔۔۔۔۔۔عدن کچھ کہنا چاہتی تھی پر خاموش ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔۔

ہاں عدن بولو ؟؟؟ خاموش کیوں ہو گئی ہو ۔۔۔۔۔؟

منیب ۔۔۔۔وہ ۔۔۔۔۔۔ماما بابا ۔۔۔۔۔۔عدن نے دھیمے لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔پھر خاموش ہوگئی ۔۔۔۔۔۔عدن سے ٹھیک سے بولا نہیں جا رہا تھا ۔۔۔۔۔

ماما بابا سے ملنا ہے ۔۔۔۔۔؟ ۔منیب عدن کی ادھوری بات سمجھ گیا تھا ۔۔۔۔عدن کو بولنے میں تکلیف ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن نے خاموشی سے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔اور نظریں نیچے کر لیں۔۔۔۔۔۔۔

ٹھیک ہے تم جلدی سے ٹھیک ہو جاؤ پھر میں تمہیں تمہارے گھر چھوڑ آوّں گا ۔۔۔۔۔پر ابھی تم کچھ مت بولو تم سے بولا نہیں جا رہا ۔۔۔۔ابھی ریسٹ کرو ۔۔۔۔۔۔۔

عدن نے خاموشی سے آنکھیں بند کر لیں۔ ۔۔۔۔۔۔ چھوڑ آوّں گا ؟؟؟؟ کیا واقع منیب مجھے چھوڑ دے گا ۔۔۔۔۔ہاں تو ٹھیک ہے چھوڑ دے نہ ۔۔۔۔۔اچھی بات ہے ۔۔۔۔۔۔ عدن دل ہی دل میں خود سے سوال کر رہی تھی خود کو خود جواب دے رہی تھی ۔۔۔۔۔کہیں نہ کہیں منیب کو کھونے کا ڈر عدن کو بے چین کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

۔...................۔
رام داس ابھی تک ہانپ رہا تھا ۔۔۔اس کے چہرے سے واضح خوف جھلک رہا تھا ۔۔۔۔۔
بلیک ٹاٸیگر نے دیوار پر لگا ریڈ بٹن دبایا تھا ۔۔۔۔۔بپ کی آواز آتے ہی ۔۔۔باقی تین قیدیوں کی الیکٹرک چیٸرز پلک جھپکتے ہی فرش کے نیچے موجود تہہ خانے میں چلی گٸی تھیں اور فرش برابر ہوگیا۔۔۔۔رام داس نے خوف سے اپنی آنکھیں بند کر لیں ۔۔۔۔۔۔
بلیک ٹاٸیگر اس کی حالت دیکھ کر نفرت بھرے لہجے میں بولتے ہوۓ آگے بڑھا ۔۔۔۔میری بات غور سے سنو ۔۔۔یہ تمہارا ٹرانسمیٹر ہے ۔۔۔جس پہ اپنے باس سے بات کرتے ہو ۔۔۔سب سے پہلے تو اسے اطلاع کرو کہ مشن مکمل ہوگیا ہے ۔۔اور وہ فاٸل تمہارے پاس پہنچ چکی ہے ۔۔۔۔یہ اطلاع پہنچاٶ اس کو۔۔۔جلدی کرو ۔۔۔ہوشیاری دکھاٸ تو تمہارے جسم کے ٹکڑے ٹکڑے کر کے کتوں کے آگے ڈال دوں گا ۔۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر کا لہجہ اس قدر سرد اور بھیانک تھا ۔۔۔کہ رام داس کانپنے لگا ۔۔۔۔۔۔
اتنے میں بلیک ٹاٸیگر کی واچ واٸبریٹ کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر آپریشن روم میں چلا آیا ۔۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر نے کلاٸ پر بندھی واچ کے ڈاٸل کو ٹچ کیا ۔۔۔۔اور بولا ۔۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر سپیکنگ اوور ۔۔۔۔مشن کی تفصیل بتاٶ اوور ۔۔۔۔باس کی نرم مگر سنجیدہ آواز سناٸ دی ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلیک ٹاٸیگر سارے انتظامات مکمل ہیں ۔۔۔۔تو رام داس کو خود بھیجو گے تم یہاں ۔۔۔۔بلیو کیٹ بلیک ٹاٸیگر سے پوچھنے لگی ۔۔۔یہ رسک نہیں لیا جاسکتا ۔۔۔۔ایجنٹ 0009 کا قد کاٹھ رام داس جیسا ہے ۔۔۔۔اور وہ لہجے بدلنے کا بھی ماہر ہے ۔۔۔تم جانتی ہو ۔۔۔۔یہ مشن ہمارے لیۓ کتنا اہم ہے اگر ہم را ٕ کے ایجنٹس پکڑنے میں کامیا ب ہوگۓ تو ۔۔۔۔کچھ عرصے تک کیلۓ ہمارے دشمن ملک کے حوصلے پست رہ سکتے ہیں ۔۔۔اور دہشت گردی کی آگ سرد پڑ سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔ اب تک ہم اپنے دو ایجنٹس کھو چکے ہیں ۔۔۔۔۔بلیک زیرو نے ٹھنڈی سانس لی ۔۔۔اور مزید کہنے لگا ۔۔۔۔۔دھرتی ماں کی حفاظت کی خاطر ہی ماٶں بیٹے قربان ہوتے ہیں ۔۔۔اور لہو کی قربانی کبھی راٸیگاں نہیں جاتی بلیو کیٹ ۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر سرد لہجے میں بولا تھا ۔۔۔۔

۔....
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے گھر جانا ہے ۔۔۔۔مجھے ماما بابا سے ملنا ہے ۔۔۔۔۔عدن ڈاکٹر کے سامنے رونے لگ گئی ۔۔۔ایک چھوٹے بچے کی مانند ضد کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔

دیکھیں عدن میڈم آپ ابھی قومہ سے باہر آئیں ہیں آپ کو ریسٹ کی زیادہ ضرورت ہے ۔۔۔۔۔۔لہٰذا آپ ریسٹ کریں ۔۔۔آپ کے لئے سٹریس لینا بہتر نہیں.......

نہیں ڈاکٹر انکل مجھے گھر جانا ہے مجھے ڈسچارج کردیں پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں بلکل ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔عدن نے اٹھنے کی کوشش کی .........

عدن ۔۔۔۔۔۔۔۔منیب عدن کی جانب بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔عدن کی آنکھوں میں آنسوتھے جسے دیکھ کر منیب کے دل کو کچھ ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔

منیب مجھے آپ سے بات کرنی ہے آئیں میرے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر منیب کو اپنے ساتھ لے گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیکھیں منیب عدن ابھی قومہ سے باہر آئیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔میں نے آپ کو پہلے بھی سمجھایا تھا ان کو کسی قسم کا ڈیپریشن نہ دیں۔۔۔۔۔ان کے لئے اور ان کی صحت کے لئے بہتر نہیں ہے لہٰذا وہ جو کہیں جیسا کہیں بہتر ہوگا آپ ان کی ہر بات مانیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جی ٹھیک ہے ڈاکٹر صاحب ۔۔۔۔۔۔بہت بہت شکریہ ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے کہا ہے کے کسی قسم کی ٹینشن نہیں لینی ۔۔۔۔ورنہ میری جان جا سکتی ہے میں کبھی بھی جنّت کی تتلی بن سکتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن نے معصوم سی شکل بنا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔

عدن بکواس بند کرو ۔۔۔۔۔۔خبردار جو دوبارہ مرنے کا نام بھی لیا تو میں جان نکل کر رکھ دوں گا تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔منیب نے ناراض ہو کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔

جب مر جاؤں گی تو جان کیسے نکالو گے میری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدن تپانے والی مسکراہٹ کرتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔

عدن تم مار کھا لو گی اب مجھ سے ۔۔۔۔۔ریسٹ کرو شاباش ۔۔۔۔۔۔۔اچھے بچوں کی طرح سو جاؤ ۔۔۔۔۔۔منیب عدن کو بچوں کی طرح ٹریٹ کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

دیکھو میں مرنے والی ہوں میری آخری خواہش سمجھ کر پورا کر دو ۔۔۔۔۔۔۔۔عدالت بھی تو سزائےموت سے پہلے مجرم سے آخری خواہش پوچھتی ہے ۔۔۔۔۔ مجھے گھر والوں سے ملوا دو بابا کے علاوہ سب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن کی آنکھوں میں آنسوں آنے لگے

یہ کیا بکواس کر رہی ہو تم ۔۔۔۔۔۔مرنے کا نام لینے سے ایک بار منع کیا ہے ۔۔۔۔تمہیں سمجھ نہیں آتی ایک بات ۔۔۔۔۔۔۔۔منیب غصہ سے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور بابا سے کیوں نہیں ملنا تمہیں ۔۔۔۔۔۔

کیونکہ بابا نے خود تمہارے پاس مجھے چھوڑا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب میں ساری زندگی ان سے نہیں ملوں گی انہوں نے مجھے ایک نا محرم کے پاس چھوڑ دیا ۔۔۔۔عدن منیب کے غصہ سے خوف زدہ ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن میری بات سنو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آہ ہ ہ ہ ۔۔۔۔۔۔۔اففففف ۔۔۔۔۔۔عدن نے زور سے اپنا۔ سر پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔

عدن کیا ہوا تم ٹھیک تو ہو ۔۔۔۔۔۔عدن ۔۔۔۔۔۔۔۔

منیب میرے سر۔۔۔۔۔۔۔آہ ہ ہ

کہا بھی تھا ریسٹ کرو سنتی تو ہو نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عدن کی حالت خراب ہونے لگ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔منیب عدن کی حالت خراب دیکھتے ہوئے پریشانی سے ڈاکٹر کو بلانے کے لئے بھا گا

۔۔(جاری ہے )
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 86 Articles with 51004 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
21 Nov, 2019 Views: 453

Comments

آپ کی رائے