درد جدائی ۔۔۔۔۔قسط 28

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی .۔۔۔ قسط 28 ۔۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے

۔................
ڈاکٹر فیصل ۔۔۔۔ دیکھیں پتہ نہیں عدن کو کیا ہو رہا ہے اس کی طبعیت خراب ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔

گھبرانے کی بات نہیں ہے سر ۔۔۔۔۔۔۔میں نے انجکشن لگا دیا ہے کچھ دیر میں ہوش آجاۓ گا ۔۔۔۔ آپ بے فکر ہو جاۓ ۔۔۔۔۔

ہممم شکریہ ڈاکٹر فیصل ۔۔۔۔۔۔

*۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*

منیب ۔۔۔۔۔۔۔۔ عدن نے منیب سے کچھ کہنا چاہا ۔۔۔۔۔

چپ کر کے آرام کرو *۔۔۔۔۔۔* ایک تو تم بھی نہ بندے کو یکدم ڈرا دیتی ہو *۔۔۔۔۔۔۔* کہا بھی تھا زیادہ نہ بولو ۔۔۔۔۔مگر تم ہو کے سنتی ہی نہیں ضدی کہیں کی *۔۔۔۔۔۔۔* . منیب نے عجیب سا منہ بنا کر کہا *۔۔۔۔۔۔*

انسان سب سے زیادہ ضد وہاں کرتا ہے ۔۔۔۔جہاں اسے مان ہوتا ہے ۔۔۔۔اس کے ناز اس کے نخرے اٹھانے والا کوئی ہے *۔۔۔۔۔* لیکن ایک وقت آتا ہے وہ انہی عادتوں کی وجہ سے بہت اکیلا ہوجاتا ہے ۔۔۔۔جسے میں ہوں *۔۔۔۔۔۔۔* عدن نے اپنے بہتے آنسو بے دردی سے صاف کیئے *۔۔۔۔*

اچھا آرام کرو *۔۔۔۔۔* پھر جلدی سے پہلے کی طرح ٹھیک ہو جاؤ *۔۔۔۔۔۔۔*

آرام وہ کرتے ہیں جن کی زندگی میں کوئی پریشانی نہیں ہوتی *۔۔*

اچھا نہ سو جاؤ اب۔۔۔ چپ کر کے *۔۔۔*
اس سے پہلے عدن کچھ کہتی ۔۔۔۔منیب نے عدن کو آرام کرنے کا کہہ دیا ۔۔۔۔منیب نہیں چاہتا تھا ۔۔۔ عدن گزرے ہوئے پل پھر سے یاد کر کہ پریشان ہو ۔۔۔ اور اس کی طبیعت مزید خراب ہو جاۓ ۔۔۔۔ عدن نے خاموشی سے اپنی آنکھیں بند کر لیں۔ ۔۔۔

********۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*********

مجھے ماما سے ملنا ہے زرنش اور میرب آپی سے ملنا ہے *۔۔۔۔۔۔*
مجھے پتہ ہے منیب مجھے نہیں ملوائے گا مجھے خود کسی طریقے سے اس ہسپتال سے باہر نکلنا ہوگا *۔۔۔۔۔* عدن سوچنے لگ گئی *۔۔۔۔*
منیب بھی عدن کی دوائی لینے گیا ہوا تھا ۔۔۔روم میں کوئی نہیں تھا *۔۔*
عدن نے اٹھنے کی کوشش کی *۔۔۔۔* عدن سے اٹھا نہیں جا رہا تھا بہت مشکلوں سے چکراتے ہوئے گرتے سمبھلتے ہوئے عدن وہاں سے اٹھی *۔۔۔۔۔۔* صوفے پر شال پڑی ہوئی تھی جس پر عدن کی نظر پڑھ گئی عدن نے اٹھا کر نقاب کر لیا *۔۔۔* منیب کے آنے سے پہلے عدن بہت مشکلوں سے سب کی نظروں سے خود کو بچاتے ہوۓ ہسپتال سے نکلنے میں کامیاب ہوگئی *۔۔۔۔۔*
کچھ دیر یوں ہی چلتی رہی *۔۔۔۔ *۔۔۔۔۔۔۔۔* عدن کے چہرے پر بہت زیادہ خوف طاری تھا *۔۔۔۔۔* پیاس سے گلہ خشک ہوگیا تھا *۔۔۔۔۔۔* اس کی آنکھوں کے سامنے اندھیرا چھانے لگا۔ ابھی وہ گرنے ہی کو تھی کہ سامنے سے آنے والی سیلور چمکتی ہوئی گاڑی کے ڈرائیور کی نظر اس پر پڑی اس نے فوراً ہی اپنی گاڑی روکنے کی کوشش کی پر اس کی گاڑی کا رخ اس کی جانب ہو گیا اور وہ گاڑی کے سامنے ہی گر پڑی ۔

یہ کون بدتمیز لوگ ہیں سڑک پر چلنے کی تمیز نہیں ہیں ان لوگوں سے *۔۔۔۔۔* گاڑی میں بیٹھے بندے نے کرخت لہجہ میں کہا *۔۔۔*

س۔۔۔۔۔۔۔س ۔۔۔۔سر میں دیکھتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ڈرائیور نے گھبراتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

تو جاؤ نہ ۔۔۔۔۔۔ یہاں بیٹھ کر میرا کیا منہ دیکھ رہے ہو *۔۔۔۔۔۔*

ج ۔۔۔۔۔۔۔جی سر ۔۔۔۔۔۔۔ ڈرائیور گھبراتا ہوا عدن کے پاس آیا *۔۔۔۔۔* عدن کو دیکھ کر ڈرائیور کو جھٹکا لگا اور وہ واپس موڑ کر اس بندے کی طرف بھاگا *۔۔۔۔۔*

س ۔۔۔۔۔۔سر ارجن سر *۔۔۔۔

کیا مسئلہ ہے ڈرائیور ۔۔۔۔ مجھے دیر ہو رہی ہے اوپر سے تم نے گاڑی مار دی کسی کو ۔۔۔۔۔ارجن نے کرخت لہجے میں کہا۔۔۔۔

سر یہ تو عدن ہے *۔۔۔۔۔۔*
میجر غازان کی محبت ۔۔۔۔۔ جس نے آپ لوگوں کی اہم فائل آئی ایس آئی والوں کو دے دی تھی ۔۔۔۔ یہ اسی باس کی بیٹی ہے *۔۔۔۔۔۔* جس پر آپ لوگوں نے قاتلانہ حملہ کروایا تھا ۔۔۔۔

شاباش ۔۔۔۔ ڈرائیور اس کو ساتھ لے کر چلتے ہیں *۔۔۔۔* میں یہ خبر رام داس سر کو بتاؤں گا وہ مجھ سے خوش ہوں گے *۔۔۔* ارجن کے چہرے پر شیطانی مسکراہٹ طاری ہوگئ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔

گاڑی چلانے کی تمیز نہیں ہے لڑکی کو گاڑی مار دی میں ابھی پولیس کو کال کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ کسی بندے نے ڈرائیور کو غصہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میری بیٹی ۔۔۔۔۔۔ہائے میرا بچہ ۔۔۔۔۔۔۔ یہ تو میری بیٹی ہے ۔۔۔۔۔ تمہیں شرم۔ نہیں آتی میری بیٹی کو گاڑی مار دی ۔۔۔۔۔دیکھو نہ میری بیٹی کیسے زخمی ہوگئی ہے ۔۔۔۔ ارجن ڈرامہ کرنے لگا ۔۔۔۔

سوری سر ۔۔۔۔۔غلطی ہوگئی ۔۔۔۔۔۔

چلو جلدی سے میری بیٹی کو گاڑی میں ڈالو ۔۔۔۔۔

یہ آپ کی بیٹی ہے ۔۔۔۔۔۔ اس بندے نے پھر سے سوال کیا ۔۔۔۔۔۔

جی میری بیٹی ہے زخمی ہوگئی ہے میں اسے ہسپتال لے کر جا رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پلیز راستہ دیں ۔۔۔۔۔

۔ ۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عدن ۔۔۔۔یہ تمہاری دوائیاں ۔۔۔۔۔منیب اپنے خیال میں آرہا تھا ۔۔۔۔۔منیب نے بیڈ کی طرف دیکھا عدن غائب تھی ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

عدن ۔۔۔۔۔۔عدن ۔۔۔۔ کہاں ہو ۔۔۔۔۔۔ یہ کہاں چلی گئی ۔ یا اللّه ۔۔۔۔عدن سے تو اٹھا بھی نہیں جا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔ منیب پریشان ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔،

کیا ہوا سر منیب ۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر راؤنڈ پر تھا ۔۔۔۔منیب کی آواز سنتے ہی منیب کے پاس آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹر فیصل عدن نہیں ہے وہ پتہ نہیں کہاں چلی گئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیب پریشانی میں اپنے بہتے آنسو صاف کرتے ہوۓ بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہاں جا سکتی ہے سر منیب وہ ایسا کیسے ممکن ہے اس کی تو طبعیت ٹھیک نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔

مجھے لگتا ہے عدن کو کسی نے کڈنیپ کرلیا ہے ۔۔۔۔۔

اچھا پریشان نہ ہو مل جاۓ گی ۔۔۔۔۔چلو سی سی ٹی وی فوٹیج دیکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پتہ چل جاۓ گا . ۔۔۔۔۔۔

جی جی ڈاکٹر فیصل چلیں ۔۔۔۔۔۔۔جلدی چلیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے )
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 84 Articles with 48374 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
22 Nov, 2019 Views: 533

Comments

آپ کی رائے