درد جدائی .....قسط 30

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی ۔۔۔۔قسط ۔30۔ ۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر کہیں پوسٹ کرنا منع ہے

مجھے چھوڑ دو پلیز ۔۔۔میں تمہیں نہیں جانتی ۔۔۔۔میں نے تمہارا کیا بگاڑا ہے ۔۔۔عدن روتے ہوۓ بولی ۔۔۔

تم نے کچھ نہیں بگاڑا پر میجر غازان نے بہت کچھ بگاڑا ہے ۔۔۔۔۔۔اور تم تو اس کی محبت ہو ۔۔۔۔بس اب دیکھنا کیسے میجر تمہاری وجہ سے ہمارے پاس آئے گا ۔۔۔۔۔ اسے تڑپا تڑپا کر ماریں گے ۔۔۔۔۔وہ خود خدا سے موت کی فریاد کرے گا ۔۔۔۔۔۔ارجن کے چہرے پر شیطانی مسکراہٹ طاری ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔

بھول ہے تمہاری ۔۔۔۔۔ہمارے فوجی جوان تو چاھتے ہیں ۔۔۔۔ان کو شہادت جیسا رتبہ ملے ۔۔۔۔ وہ رب سے دعا کرتے ہیں اپنی شہادت کی ۔۔۔۔۔ماں سے کہتے ہیں ماں دعا کر تیرا لال شہید ہو جاۓ ۔۔۔۔۔تمہیں کیا لگتا ہے تم ان سے راز نکلوا لو گے ۔۔۔۔۔بھول ہے مسٹر تمہاری ۔۔۔۔۔۔سپاہی مقبول حسین کا تو سنا ہوگا نہ ۔۔۔۔۔چالیس سال دشمن کی قید میں رہے دشمنوں نے ان سے کہا پاکستان مردہ باد بولو وہ ہمیشہ پاکستان زندہ باد کا نعرہ لگاتے تھے یہاں تک کے دشمنوں نے ان کی زبان بھی کاٹ دی اور پھر انھوں نے اپنے خون سے پاکستان زندہ باد لکھا ۔۔۔۔۔۔ ہمارے گمنام ہیروز بیشک پکڑے جائیں لیکن کبھی بھی راز نہیں بتاتے ۔۔۔۔۔اور تم لوگوں کو ایک تھپڑ پڑھ جاۓ فر فر سارے راز بتا دیتے ہو۔ اب کلبوشن یادیو کو ہی دیکھ لو ۔۔۔۔۔۔۔

بکواس بند کرو بدتمز لڑکی ۔۔۔۔۔۔۔۔ارجن غصہ سے چلایا ۔۔۔۔۔

ارے ارے مسٹر آپ تو غصہ ہی ہو گئے ابھی تو صرف ایک ہی گمنام ہیرو کی کہانی سنائی ہے ۔۔۔۔۔۔اور ۔۔۔۔

بس بہت ہوا ۔۔۔۔میں یہاں تمہارا لیکچر سنے نہیں آیا ۔۔۔۔۔تم اسی کمرے میں بند رہو گی اب ۔۔۔۔ارجن غصہ سے دروازہ بند کر کے چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن پلیز مجھ سے اتنی نفرت نہیں کرو ۔۔۔ جس دن تمہیں سچ پتہ چل جاۓ گا اس دن تمہارے دل سے میرے لئے نفرت ختم ہو جاۓ گی ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن کے دماغ میں بار بار غازان کی باتیں گھونج رہی تھی ۔۔۔۔۔۔

نہیں غازان میں تم سے نفرت نہیں کرتی ۔۔ بس غصہ تھی کے تم نے ایسا کیوں کیا ۔۔۔۔۔۔کاش میں تمہیں سمجھ سکتی ۔۔۔۔۔۔میں نے تمہیں غصہ میں کیا کچھ نہیں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔گھٹیا انسان ۔۔۔۔اور بھی پتہ نہیں کیا کیا ۔۔۔۔۔ تم چپ کر کے سہتے گئے ایک بار نہیں بتایا عدن یہ سب میں نے تمہارے لئے کیا۔۔۔۔ تم تو مجھے ان درندوں سے بچا رہے تهے ۔۔۔۔۔یا اللّه یہ کیا کر دیا میں نے ۔۔۔۔کاش میں غازان کو یوں چھوڑ کر نہیں آتی ۔۔۔۔۔وہ پریشان ہو گا ۔۔۔۔۔۔ وہ مجھے ڈھونڈ رہا ہو گا ۔۔۔۔۔۔میں کیا کروں ۔۔۔۔۔عدن مسلسل روئے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔لگتا میجر غازان آگۓ ہیں ۔۔میں لے کے آتا ہوں انہوں ۔۔۔ٹاٸیگر کیٹ سے کہتا ہوا باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔
سر خیریت ۔۔۔۔؟آپ پریشان کیوں ہیں ۔۔۔؟خیریت تو ہے ناں ۔۔۔۔؟ غازان جیسے مضبوط شخص کے چہرے پر پریشانی صاف دکھاٸ دے رہی تھی ۔۔۔ہاں میں ٹھیک ہو ۔۔۔بتاٶ کیوں بلایا ہے ۔۔۔؟میجر بلیک ٹاٸیگر سے پوچھنے لگا ۔۔۔سر بات ہی کچھ ایسی ہے ۔۔۔کہ آپ بھی چونک جاٸیں گے ۔۔۔پہلے آپ بتاٸیں ۔۔آپ نے برگیڈیٸر عریب کو رام داس کے بارے کچھ بتایا تو نہیں ۔۔۔؟ ٹاٸیگر کے اس انداز نیں بات کرنے پر غازان چونکا تھا ۔۔۔۔پہیلیاں کیوں بجھوا رہے ہو صاف صاف بات کرو ۔۔۔ٹاٸیگر نے سارے پروف اور ریکارڈنگز غازان کو دکھا دیں تھی ۔۔۔۔۔غازان نے شدّت کرب سے اپنی مٹھیاں بھینچ لیں تھیں ۔۔۔
بلیک ٹاٸیگر اور بلیو کیٹ سوالیہ نظروں سے غازان کو دیکھنے لگے ۔۔۔
تو شیر کے روپ میں بھیڑیا نکلا ۔۔۔۔۔غازان زیرلب بڑبڑایا تھا ۔۔۔۔اور خفیہ ٹرانسمیٹر پر کسی کو ہدایات دینے لگا ۔۔۔۔ہاں ارجن بولو ۔۔۔ٹرانسمیٹر پر بھاری اور کرخت آواز ابھری ۔۔۔۔عدن ہمارے قبضہ میں ہے باس ارجن خوشی سے چیختے لہجے میں بولا تھا ۔۔۔۔ٹھیک ہے تم ہوٹل سیون سٹار روم ٣٠٥ میں پہنچا دو اسے روم بھی تمہارے نام بک کروا دیا ہے میں نے ۔۔۔وہاں پہنچو اور مجھے انفارم کرو جلدی ۔۔۔توباس کیا آپ کو پہلےپتہ چل گیا۔۔۔۔۔۔۔ابے گدھے ۔۔جتنا کہا ہے اتنا کرو ۔۔۔باس دھاڑتے لہجے میں بولا اور رابطہ منقطع کر دیا تھا ۔۔۔۔۔
۔......... .
وکی اس لڑکی کو ریڈی کرو ہمیں ابھی نکلنا ہو گا ۔۔۔ارجن جلدی جلدی وکی سے کہتا ہوا واپسی کیلۓ مڑا ۔۔۔لیکن سر وہ تو کوٸ آفت ہے ۔۔۔وہ جانے کیلۓ کیسے ریڈی ہو گی ۔۔۔۔
اسے کہو کہ اس کے باپ سے ڈیل ہو گٸ ہے ۔۔۔۔اسے ہر حال میں چلنا ہو گا ۔۔۔۔زیادہ مسٸلہ کھڑا کرے تو مجھے بتانا ۔۔
اوکے سر وکی اثبات میں سر ہلاتا ہوا عدن کے روم کے جانب مڑا تھا ۔۔۔۔
اب کیا لٕینے آۓ ہو یہاں دفعہ ہو جاٶ ۔۔۔عدن نے ٹیبل پر رکھا ہواگلاس اٹھا کر وکی کے سر میں دے مارا ۔۔۔۔اور چیخنے لگی ۔۔۔۔عدن کے اچانک حملے سے وکی بوکھلا گیا اپا بچاٶ نہ کر سکا اس کے ماتھے سے خون کا فوارہ پھوٹ پڑا ۔۔۔۔۔
شور کی آواز سن کر ارجن عدن کے روم کی طرف بھاگا تھا ۔۔۔۔۔
عدن کو گردن سے پکڑ کر دھکا دیا ۔۔۔۔اور جلدی جلدی رسی کی مدد سے باندھنے لگا ۔۔۔
إک لڑکی کو نہیں سنبھال سکے دفعہ ہو جاٶ یہاں سے ارجن دھاڑا ۔۔۔وکی جلدی سے کمرے بڑبڑاتا ہوا نکلا ۔۔۔۔عجیب خونی لڑکی ہے ۔۔۔باس کی خصوصی تاکید نہ ہوتی تو میں اس کی بوٹی بوٹی علیحدہ کر دیتا ۔۔۔وکی غصے اور نفرت سے مسلسل بڑ بڑا رہا تھا ۔۔۔۔۔
تمہیں ایک بات سمجھ کیوں نہیں آتی ۔۔۔؟ تمہیں اندازہ بھی نہیں ہے کہ تمہاری اس حرکت کے بدلے ہم تمہارے ساتھ کیا کچھ کر سکتے ہیں ۔۔۔کس چیز پر اتنا اترا رہی ہو ۔۔۔۔ارجن بندھی ہوٸ عدن کے چہرے پر ہاتھ پھیرتے ہوۓ گھٹیا انداز میں بولا ۔۔۔عدن ارجن کے چہرے پر تھوکتے ہوۓ بولی ۔۔۔۔اوۓ پاگل کتے مجھ کھول پھر میں تجھے بتاتی ہوں میں کون ہوں ۔۔۔
ارجن جارحانہ انداز میں آگے بڑھا لیکن کچھ سوچ کر رک گیا ۔۔۔۔۔
اپنے باپ کے کرتوتوں کا نہیں پتہ تجھے ۔۔۔۔اتنی نفرت تمہارے منہ سے اچھی نہیں لگتی ۔۔۔ہمارے لیۓ ۔۔۔ہمارا پیسہ کھاتا ہے تمہارا باپ اور تمہیں کھلاتا ہے ۔۔۔تم واقعی کچھ نہیں جانتی ۔۔۔
یہ لو سن لو اپنے کانوں سے یہ ریکارڈنگ ۔۔
ی۔۔۔۔۔۔یہ یہ کیا ہے ۔۔۔۔میرے بابا ایسا نہیں کر سکتے جھوٹ بولتے ہو تم ۔۔۔۔۔جیسا کہا ہے ویسا کرو ۔۔۔اگر فیملی سے ملنا ہے تو ۔۔۔نہیں تو یہیں پر میرے ساتھ رہ جاٶ ۔۔۔بہت خوش رکھوں گا تمہیں ۔۔۔۔ارجن خباثت سے ہنسا تھا ۔۔۔۔
ٹھیک ہے جیسا تم کہو گے میں ویسا کروں گی ۔۔۔اگر بابا نے یہی کہا ہے تو ۔۔۔عدن کا وجود زلزلوں کی زد میں تھا ۔۔۔لیکن اسے بہادری سے حالات کا مقابلہ کرنا تھا ۔۔۔۔ہاٶ سویٹ بے بی ۔۔۔مجھے یہی امید تھی تم سے ۔۔۔چلو پھر تیار ہو جاٶ جلدی سے ۔۔۔ارجن عدن کو رسیوں سے آزاد کرتے ہوۓ کہنے لگا

۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے )

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 85 Articles with 50561 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
27 Nov, 2019 Views: 453

Comments

آپ کی رائے