ناول درد جدائی۔۔۔۔۔قسط 35

(Shafaq kazmi, Karachi)

ناول درد جدائی۔۔۔۔۔قسط 35....مصنفہ شفق کاظمی

کیا کیا کہا تم نے میں اور کھڑوس ؟

جی جی بلکل آپ سے ہی مخاطب ہوں میں ۔۔۔۔۔۔عدن نے ہنستے ہوۓ میسج ٹائپ کیا ۔۔۔۔۔۔

محترمہ رمشہ آپ جانتی بھی ہیں آپ کس سے بات کر رہی ہیں ۔۔۔؟

جی جی بتایا تو کھڑوس سے بات کر رہی ہوں میں ۔۔۔۔۔ویسے آپ شکر کریں کے آپ جج نہیں ہیں ۔۔۔اگر آپ کے پاس کوئی کیس آجاتا ۔۔۔تو آپ کہتے ۔۔۔۔تمام گواہوں اور ثبوتوں کو مد نظر رکھتے ہوۓ یہ عدالت اس نتیجے پر پہنچی ہے کے مجھے کیس کی سمجھ نہیں آرہی ۔۔۔مجھے دونوں وکیلوں کا لڑنا اچھا لگا لہٰذا دونوں کے معقل کو پھانسی پر لٹکا دیا جاۓ ۔۔۔۔ہاہاہا

عجیب لڑکی ہو ۔۔۔۔نہ جان نہ پہچان فضول میں سر کھا رہی ہو ۔۔۔۔۔۔

نہیں نہیں میں۔ بہت رحم دل لڑکی ہوں میں آپ کا سر نہیں کھا سکتی کیوں کہ آپ۔ کے سر میں جوئیں ہوں گی ۔۔۔۔۔۔اور بیچاری خامخواہ در بدر ہوجائیں گی ۔۔۔بیچاری در بدر کی ٹھوکریں کھاتی پھریں گی ۔۔۔۔۔
حد ہے ویسے ۔۔۔۔غزان نے غصہ والا ایموجی بھجا ۔۔۔۔۔۔۔

جی جی بے حد ہے بے پناہ ہے ۔۔۔۔۔۔عدن نے پھر سے غزان کو تنگ کرتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔

کیا ۔۔۔۔؟ غزان نے حیرانگی سے پوچھا ۔۔۔۔۔

کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔عدن نے منہ بنانے والا ایموجی بھج دیا ۔۔۔۔۔۔

اوکے ٹھیک ہے بائ ۔۔۔۔۔۔غزان نے جان چھوڑاتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔۔

اوکے بائ گاڈ بلاسٹ یو ۔۔۔۔۔

اففف پاگل لڑکی ہے کوئی ۔غزان زیر لب بولا ۔۔۔۔۔۔

کون سر کیا ہوا۔۔۔۔۔؟؟ ایک آفیسر نے سوال کیا ۔۔۔۔۔

کچھ نہیں آفیسر ایک لڑکی ہے عجیب سی ۔۔۔۔ میسج کر رہی ایسے فری ہورہی جسے میری دوست ہو ۔۔۔۔

سر خیال رکھیئے گا ۔۔۔۔کوئی دشمن بھی ہوسکتا ہے ۔۔۔۔آج کل آستین کے سانپ بھی ہر طرف گھوم رہے ہیں۔۔۔
سہی کہہ رہے ہو مجھے بھی کوئی دشمن لگتی ورنہ کوئی اتنا فری نہیں ہوتا اتنی جلدی ۔۔۔۔خیر چھوڑو میں اگنور پر لگا دیتا ہوں تاکہ اس کے میسج مجھے نہ ملیں ۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے غزان کو اتنے میسج کئے اور اس نے سین بھی نہیں کئے ۔۔۔۔اور یہ آن لائن بھی ہے ۔۔۔۔یقیناً اس نے میرے میسج اگنور پر لگا دیئے ہوں گے۔۔۔۔۔چلو خیر ہے کوئی بات نہیں ۔۔۔۔۔۔میں بھی اب کوئی میسج نہیں کروں گی ۔۔۔
عدن نے غصہ میں اپنا اکاؤنٹ ہی بند کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماما آپ رو کیوں رہی ہیں۔۔۔۔۔۔عدن باہر جا رہی تھی کہ اسکی نظر عفاف پر پڑی جو صوفے پر بہت ہی اداس بیٹھی تھیں ۔۔۔۔۔۔

کچھ نہیں بیٹا ۔۔۔۔۔عفاف نے اپنے آنسو صاف کرتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

ماما بابا کو یاد کر رہی ہیں نہ آپ۔۔۔۔۔ماما بھول جائیں نہ پلیز ۔۔۔۔عدن عفاف کے پاس آکر بیٹھ گئی ۔۔۔۔

کیسے بھول جاؤں بیٹا ۔۔۔ ساری غلطی میری ہے ۔۔۔۔۔میں تمہارے ماموں کی بات مان لیتی کاش ۔۔۔۔۔تمہارے ماموں نے کہا بھی تھا کے تمہارے بابا اس کو اچھے انسان نہیں لگتے میں نے ان کی کسی بات پر بھروسہ نہیں کیا ۔۔۔۔۔تمہارے بابا نے ایک بار بھی اپنے بچوں کا نہیں سوچا ۔۔۔۔ایک بار تو سوچ لیتے ۔۔۔۔۔

ماما انھوں نے وطن کا نہیں سوچا تو بچوں کا کیسے سوچتے ۔۔۔۔وہ تو شکر ہے بابا نے جو راز بتاۓ تھے ان کی وجہ سے ہمارے وطن کو کوئی نقصان نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔نہیں تو نہ جانے کتنے گھروں کے چراغ بجھ جاتے ۔۔۔۔خیر چھوڑیں ماما میں اس شخص کے بارے میں بات نہیں کرنا چاہتی ۔۔۔۔وہ میرے بابا نہیں ہیں نہ ہی میں ان کی بیٹی ۔۔۔۔۔سو پلیز ۔۔۔۔۔

بیٹا مجھے تمہاری فکر ہے ۔۔۔۔تمہاری کسی اچھے لڑکے سے شادی کر لیتی ہوں ۔۔۔۔۔تا کہ مجھے بھی فکر نہ ہو کب تک یوں ماموں مامی کے گھر بیٹھیں گے ۔۔۔۔۔۔میں بھی بیمار رہتی ہوں تمہارا کہیں رشتہ ہوجاۓ گا تو مجھے بھی سکون آجاۓ گا ۔۔۔۔۔۔
ماما پلیز بس کردیں ۔۔۔۔۔مجھے فی الحال شادی نہیں کرنی ابھی میں اپنے وطن کے لئے کچھ کرنا چاہتی ہوں ۔۔۔۔ابھی مجھے بہت کچھ کرنا ہے ماما پلیز ۔۔۔۔۔۔

کیا کرو گی تم اکیلے ۔۔۔۔عدن ضد نہیں کرو ۔۔۔۔۔۔

ماما پلیز بس کردیں ۔۔۔۔۔مجھے نہیں کرنی شادی ۔۔۔۔۔۔۔آپ فی الحال ایسی سوچ نکال دیں ذہن سے ۔۔۔۔۔میں فلحال ڈاکٹر بن رہی ہوں مجھے ڈاکٹر بننے دیں ۔۔۔۔

پر عدن ۔۔۔۔۔عفاف نے کچھ کہنا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔

ماما پلیز ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن اٹھ کر چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔،

(کچھ سال۔ بعد )

وقت یوں ہی گزرتا گیا۔۔۔عدن۔ بہت خاموش بہت چپ چپ رہنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔پر اس کے دل میں وطن کے لئے کچھ کرنے کا جذبہ تھا ۔۔۔۔شاید یہ ایک ہی وجہ تھی جس کی وجہ سے عدن زندہ تھی ۔۔۔۔۔۔

عدن بیٹا وقت کا پتہ بھی نہیں چلا تم ڈاکٹر بھی بن گئی ہو اب تو ما شاء اللّه سے ۔۔۔۔۔۔۔

جی ۔۔۔۔ ماموں اب بس آرمی میں جانا ہے مجھے ۔۔۔۔۔عدن خوشی سے بولی ۔۔۔۔۔

عدن بیٹا ۔۔۔۔۔تم آرمی میں نہیں جا سکتی یا ایسے کسی بھی ادارے میں ۔۔۔۔۔جو شخص وطن سے غداری کرتا ہے اس کے بعد اس کی آنے والی نسلیں بھی آرمی میں نہیں جا سکتی ہیں ۔۔۔۔۔۔آئی ایم سوری بیٹا ۔۔۔۔میں نے تمہیں یہ بات پہلے اس وجہ سے نہیں بتائی کے تمہارا دل۔ ٹوٹ نہ جاۓ میں چاہتا تھا تمہارا ڈاکٹر بننے کا خواب پورا ہوجاۓ۔۔۔۔۔مزمل نے نظریں چرا لیں ۔۔۔۔۔

پر ماموں ایسا کیسے کر سکتے ہیں یہ لوگ ۔۔۔اور۔ کیوں ۔۔۔۔میں نے تو کچھ نہیں کیا ہے نہ ۔۔۔۔۔میرا کیا قصور ہے جو میں آرمی میں نہیں جا سکتی ہوں ۔۔۔۔۔عدن روتے ہوۓ بولی ۔۔۔۔۔

تمہارا قصور یہ ہے ۔۔۔۔۔کہ تم عریب کی بیٹی ہو ۔۔۔۔۔اور یہ اصول ہے اگر کوئی وطن سے غداری کرے گا ۔۔۔اس کو تو سزا ملے گی...اور اس کی آنے والی نسل میں سے بھی کوئی بھی آرمی میں نہیں جا سکتا ۔۔۔۔۔

(جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 269 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27886 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
posting late kiun ho rahi hai ??
By: Parishay, Karachi on Dec, 27 2019
Reply Reply
0 Like
Language: