دو بڑے طبقوں کا تصادم تبدیلی یا جہالت؂

(Mufti Muhammad Ibrahim Owaisi, )

اسلامی تعلیمات سے انسان انسانیت کی پروان چڑھتا ہے زمانہ جاہلیت میں وہ ساری خرابیاں موجود تھیں ۔جن کے بارے نبی ﷺ نے ہمیں آگاہ کیا۔اوراس دورکے لوگوں کو بتایا گیاتم رشتوں کے تقدس کو پامال کررہے ہو۔کہیں ماں کی عزت کو کہیں بیٹی کی عزت کوداغدار کیاجاتا تھا۔ عورت کو زمانے کی ذلیل چیز تصورکیاجاتاتھا۔باپ کے مرنے کے بعدماں کسی کوبطور تحفہ پیش کی جاتی تھی۔جب کفار جودین اسلام کے دشمن تھے۔انہیں قید کرکے نبیﷺکی بارگاہ میں لایاگیا۔نبیﷺنے ان قیدیوں کی آزادی کی شرط یہ رکھی کہ تم میں سے جودس ایمان والوں کو لکھنا پڑھنا سکھادے گا وہ آزاد ہو گا۔اور حضرت عمر رضی اﷲ تعالیٰ عنہ کی عدالت میں ایک فیصلہ آیا کہ میاں بیوی آپس میں جھگڑرہے تھے۔انکے بیٹے نے دونوں کے جھگڑے کوروکنے کے لئیے ایک ڈنڈاماں کو لگایا اورایک ڈنڈا باپ کولگایا۔اسطرح ان کی لڑائی ختم کروائی۔سیدنا عمررضی اﷲ تعالیٰ عنہ نے جب لڑکے سے پوچھا جو اونٹ چراتا تھا۔کہ تم نے اپنے ماں باپ کے ساتھ ایسا سلوک کیوں کیا تو اس نے کہاجب بھی دو اونٹ آپس میں لڑتے تھے تومیں اس طرح ان کی لڑائی ختم کرواتا تھا۔سیدنا عمررضی اﷲ تعالیٰ عنہ نے اس لڑکے والدین سے کہا کہ اس میں تمھاراقصور ہے تم نے اس کو پڑھایا لکھایا نہیں اس کی تربیت اچھی نہیں کی۔رسول اﷲ ﷺنے تعلیم پر زوردیا۔رسول اﷲ ﷺ کی تعلیمات کے مطابق جب دین کا علم پڑھا ہو توجاہلاناں خرافات نہیں ہوتیں۔آج بات ہے ا س پڑھے لکھے دو طبقوں کی ۔ایک طبقہ کالا کوٹ والا جو قانون دان طبقہ کہلاتا ہے۔ دوسراسفید کوٹ طبقہ جومریضوں کا مسیحاکہلاتا ہے۔دونوں طبقے پڑے لکھے شمار ہوتے ہیں ۔جس طرح ان دونوں طبقوں نے اپنے علم کااظہار کرتے ہوئے ۔پورے ملک میں دہشت گردی کا ماحول پیدا کیا۔ان پڑھے لکھے لوگوں کا ماحول اس لڑکے والا تھاجواونٹ چرانے والا تھا۔اونٹ چرانے والے لڑکے اور ان کالے کوٹ والے قانون شکن ،اصول شکن،جھگڑالو،عوام الناس پر بے جا ظلم وستم کرنے والے،گالی گلوچ کرنے والوں میں کوئی فرق نہیں ہے ۔اور سفید کوٹ والے جو لوگوں کے مسیحا شمار ہوتے ہیں۔وہ بھی کالے کوٹ والوں سے کم نہ رہے۔انہوں نے بھی خوب کام کیا ان کی وجہ سے لوگوں کی اموات بھی ہوئیں۔جاہلاناں زمانے کی یاد وں کو خوب لوگوں کو یاددلایاگیا۔جب ملک میں دہشت گردی کا ماحول پیدا کیاگیا تھاتولبرل طبقہ کہاں تھاجو خادم حسین رضوی کے پرامن احتجاج کودہشتگردی کا نام دیتاتھا ۔وہ بکاؤ اینکر سوائے اوریا مقبول جان کے جو خادم حسین رضوی اور مذہبی جماعت تحریک لبیک پاکستان کے خلاف تبصرے کرتے جن کی زبانیں تھکتی نہیں تھیں۔آج وہ کہاں ہیں ۔کیا انکو نظر نہیں آتا کس طرح سرعام گولیاں چلائی گئیں۔پولیس وین کو نذرآتش کیاگیا۔موٹر بائیک پرعام شہری کو تھپڑ مارے گے ۔ایک وکیل خاتون کی ویڈیو دیکھی جو ایک معززشہری کی گاڑی کے شیشے توڑ دیتی ہے اور گاڑی سے نکال کر زدوکوب کرتی ہے۔ایک وکیل ایک خاتون کوٹھوڈے مارتا ہوادیکھاگیا۔وزیراعظم کا بھانجا آرمی کے لوگوں کو سرعام ذلیل کرتا ہے پولیس وین جلاتا ہوا پایاجاتا ہے ۔قانون نافذکرنے والے مگرمچھ کی طرح گہری نیند سوئے ہوئے ہیں۔لبرلز جو دین کی مخالفت اور مدرسوں کے خلاف بھونکنے والے،تحریک لبیک پاکستان کے خلاف گندی زبان استعمال کرنیوالے کیوں خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔یہ حکومت خود اپنی ناکامی کی طرف جارہی ہے۔ملکی آثار بتاتے ہیں پہلے علماء پر ظلم وستم پھرعلماء کوقیدوبند کی صعوبتیں،پھر امریکہ کو خوش کرنے کے گستاخہ کی رہائی ۔سب کڑیاں ایک دوسری سے مل رہی ہیں ۔غریب عوام پر ظلم وستم اور مہنگائی کے پہاڑ گرائے گے ۔ ان شآء اﷲ بافضل خدا ہرظالم اپنے ظلم کے سبب اپنے انجام کو پہنچے گا۔ناکام وزیراعلیٰ کی طرف سے بس صرف نوٹس لیاگیا ہے۔پتا اب چلے گا جب وائٹ کوٹ اور بلیک کوٹ والے کتنے جیلوں میں ڈالے جاتے ہیں۔ان دونوں طبقے کے لوگوں کے سامنے حکومت بے بس ہوچکی ہے۔یہ واقع کبھی رونما نہ ہوتا اگر ان لوگوں نے رسول اﷲﷺ کے دین کی تعلیمات حاصل کی ہوتیں۔قرآن وحدیث کوپڑھاہوتا۔ڈاکٹرعلامہ محمداقبال نے انہی کے بارے کیا خوب کہا۔
وہ زمانے میں معززتھے مسلماں ہوکر
اورتم خوارہوئے تارک قرآن ہوکر

تبدیلی کانعرہ بلند کرنے والے اب عوام الناس کو الو بنانا چھوڑدیں ۔اگر یہ تبدیلی ہے توپھرجہالت کیا ہے۔وہ لبرلز آنٹیاں بھی خاموش ہیں ۔جوسوشل میڈیا پر دین کادرس دینے والوں کو دہشت گرد کہتی تھیں۔اب انہیں خواتین کی عزت بزرگوں کی عزت کا کوئی خیال نہیں ۔کس طرح انکی عزتوں کی دھجیاں بکھیری گئیں۔یہ ملک جس کو ریاست مدینہ کانام دیا جارہا ہے۔ریاست مدینہ میں حضرت عمررضی اﷲ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں اگرفرات کے کنارے کتامر جائے تومجھ سے حساب ہوگا ۔ریاست مدینہ کا دعویٰ کرنے والوں کو مرنے والے مریض تو نظر نہیں آئے ہوں گے۔جہالت سے بچناچاہتے ہو تو ان دونوں طبقوں کو دین سیکھاؤ۔
قوم مذہب سے ہے ،مذہب جونہیں تم بھی نہیں
جذب ِباہم جونہیں،محفلِ انجم بھی نہیں

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 113 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mufti Muhammad Ibrahim Owaisi

Read More Articles by Mufti Muhammad Ibrahim Owaisi: 2 Articles with 369 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: