درد جدائی .....قسط 36

(Shafaq kazmi, Karachi)

ناول درد جدائی قسط 36۔ ۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔
------------------------
کوشش کرنے والوں کی کبھی ہار نہیں ہوتی ۔۔۔۔۔۔میں ہمّت نہیں ہاروں گی ۔۔۔۔۔اگر میں پاکستان آرمی میں نہیں جا سکتی تو کیا ہوا ۔۔۔۔میں ویسے بھی تو وطن کے لئے بہت کچھ کر سکتی ہوں ۔۔۔اپنے ارد گرد جو غلط ہورہا ہے اسے روک سکتی ہوں ۔۔۔۔۔ویسے بھی اپنے وطن عزیز کے لئے کچھ کرنے کے لئے مجھے کسی یونیفارم کی ضرورت نہیں ہے ۔۔۔۔ عدن خود کو تسلی دے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔
یہ وطن سے محبت بھی کتنی عجیب ہوتی ہے نہ یہ عشق یہ پاگل پن ۔۔وطن پر مر مٹنے کا جذبہ ۔بہت ہی خوبصورت احساس ہوتا ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماموں ہم لوگ پاکستان جا رہے ہیں۔مزمل نیوز سننے میں مگن تھا عدن کی بات سنتے ہی ٹی وی بند کردیا ۔۔۔۔

پر کیوں بیٹا سب ٹھیک تو ہے ۔۔۔۔مزمل ماموں نے پریشان ہوتے ہوۓ بولا ۔۔۔۔

جی ماموں بس میں ڈاکٹر بن گئی ہوں اب پاکستان جانا ہے مجھے میرے وطن جانا ہے ۔۔۔۔

پر بیٹا وہاں لوگ جینے نہیں دیں گے سب ۔۔۔۔۔۔۔

سب یہ کہیں گے نہ کے میں ایک غدار کی بیٹی ہوں ۔۔۔۔ماموں مجھے لوگوں کی پرواہ نہیں ہے لوگ میرے بارے میں کیا سوچتے ہیں ۔۔۔۔اور بابا نے جو بھی کیا ان کو ان کی غلطی کی سزا مل گئی ہے۔۔۔۔۔میرا تو کوئی قصور نہیں لوگ جو مرضی کہیں مجھے اس کی پرواہ نہیں بس مجھے میرے گھر جانا ہے مجھے میرے وطن جانا ہے پلیز ماموں۔ جان ۔۔۔۔۔عدن ضد کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔

عدن بیٹا سوچ لو۔۔۔۔۔۔ماموں پریشان ہوتے ہوۓ بولے ۔۔۔۔۔کیوں کہ یہ سب اتنا آسان نہیں تھا اور دنیا ؟ دنیا والوں کو تو بس موقع چاہیے کسی کی ذاتی زندگی پر سر محفل تبصرہ کرنے کا ۔۔۔۔۔سر محفل آپ کا مذاق اڑانے کا . لوگ بھی کتنے عجیب ہوتے ہیں نہ ۔۔۔جانتے ہیں کہ اگلا بندہ کس اذیت کس تکلیف سے گزر رہا ۔۔ان کو دلاسہ دینے کی بجائے ان کے زخموں پر نمک چھڑکنا ۔۔۔اور پھر لوگوں کے سامنے ان کی ذات پر تبصرہ کر کہ ان کا مذاق بنانا ۔۔شاید ان کی عادت ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔مزمل جانتا تھا عدن کا پاکستان جانا ٹھیک نہیں فی الحال ۔۔۔۔۔۔پر عدن ضد کر رہی تھی بہت زیادہ مزمل ماموں عدن کی ضد کے آگے ہار گئے ۔۔۔۔
عدن بیٹا ۔۔۔میرا ایک ہسپتال ہے پاکستان میں میرے والد صاحب نے بنایا تھا ۔۔۔۔ان کا شوق تھا میں ڈاکٹر بنوں پر میں نہیں بن سکا ۔۔۔۔وہاں اور بھی ڈاکٹرز ہیں جنہوں نے ہسپتال سمبھالا ہوا ۔۔۔۔تم وہاں چلی جاؤ ۔۔۔۔اپنا ہسپتال ہے ۔۔۔۔آرام سے سکون سے سمبھالو۔۔۔۔۔ٹھیک ہے نہ ۔۔۔

جی ماموں جان ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔اینڈ تھنک یو سو مچ ۔۔۔۔عدن نے ماموں جان کو پیار کرتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔

پھر بھی بیٹا ایک بار سوچ لو ۔۔۔۔۔۔

جی ماموں جان سوچ لیا ہے ۔۔۔۔۔

ارے یہ ماموں بھانجی آپس میں کیا باتیں کر رہے ہیں .....فرح مامی اور عفاف دونوں آکر بیٹھ گئیں مزمل اور عدن کے پاس ۔۔۔۔۔

کچھ نہیں مامی میں اور ماما پاکستان جا رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔عدن خوشی سے بولی ۔۔۔۔۔

کیا پاکستان جا رہے ہو پر کیوں ؟؟؟؟میں نہیں جانے دوں گی یہاں رہو ہمارے پاس ۔۔۔۔۔مامی ناراض ہوتے ہوۓ بولیں ۔ ۔ ۔

نہیں مامی جان اب ہمیں ہمارے وطن جانا ہو گا مجھے اور بھی بہت سے کام کرنے ۔۔۔۔۔۔۔عدن فرح مامی کے کندھے پر پیار سے سر رکھتے ہوۓ بولی ۔۔۔۔۔۔۔

پر وہاں اکیلے کیسے رہو گے ۔۔۔۔۔۔یہاں ٹھیک ہے نہ ۔۔۔۔۔

مامی جان وہاں زرنش اور میرب آپی بھی تو ہیں نہ وہ بھی تو حالات اور لوگوں کو اکیلے فیس کر رہی ہیں وہ کچھ نہیں بتاتیں ۔۔۔۔۔کہ ہم پریشان نہ ہوجائیں ۔۔۔۔پر مجھے لگتا ہے ہمیں اب جانا چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔
پر عدن بیٹا ۔۔۔۔۔۔

میرے خیال میں فرح بہن عدن ٹھیک کہہ رہی ہے ۔۔۔۔ میرا بھی دل اداس ہورہا ہے زرنش اور میرب بیٹی کے لئے ۔۔۔۔۔۔۔جب تک انھیں دیکھ نہیں لوں گی سینے۔ سے لگا نہیں لوں گی مجھے سکون نہیں آئے گا ۔۔۔۔۔عفاف نے موبائل سائیڈ پر رکھتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔

پلیز نہ مامی جان ۔۔۔۔میں آپ سے وعدہ کرتی ہوں میں۔ جلد ہی آپ سے ملنے آؤں گی ۔۔۔۔۔پلیز ناراض نہ ہوں پیاری مامی جان ۔۔۔۔عدن نے اتنے پیار سے کہا ۔۔۔۔۔مامی خاموش ہوگئیں ۔۔۔۔ٹھیک ہے جیسے آپ دونوں کی مرضی ۔۔۔۔۔۔
تھنک یو سو مچ ۔۔۔۔عدن نے فرح مامی کے گالوں کو چومتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن بیٹا آپ کی اور عفاف کی ٹکٹ ہوگئی ہے آج رات کی ۔۔۔۔۔

جی ماموں جان میں نے پیکنگ بھی کرلی ہے ۔۔۔۔۔۔۔عدن بہت خوش تھی کیوں کہ وہ اپنے پیارے وطن واپس آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پر عدن بیٹا میرا دل نہیں مان رہا ۔۔۔۔مزمل ماموں پریشان تھے ۔۔۔۔۔

ماموں جان کچھ نہیں ہوگا اور آپ کی عدن بہت زیادہ بہادر ہے ۔۔۔۔۔۔۔

بیٹا وعدہ کرو کوئ بھی مسئلہ ہو کوئی بھی پریشانی ہو کچھ بھی ہو تم مجھے ضرور بتاؤ گی ۔۔۔۔۔۔

ماموں جان میں آپ سے روز رابطے میں راہوں گی آپ بے فکر رہیں ۔۔۔

اللّه میری بیٹی کو شاد و آباد رکھے آمین ۔۔۔۔۔مزمل ماموں نے پیار سے عدن کے سر پر ہاتھ رکھا ۔۔۔۔۔۔

آمین ماموں جان ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ سارا سامان گاڑی میں رکھ دو ۔۔۔۔۔مزمل نے سرونٹ کو حکم دیتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

جی سر ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔سرونٹ سامان اٹھا کر گاڑی کی طرف بڑھا ۔۔۔۔

چلو عدن بیٹا ۔۔۔۔عفاف آجاؤ ۔۔۔۔دیر ہورہی ہے ۔۔۔۔۔مامی سے مل لو ۔۔۔۔۔

میں بھی آپ لوگوں کے ساتھ چلوں گی ائیرپورٹ ۔۔۔۔۔۔فرح نے پرس میں موبائل ڈالتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔

اچھا ٹھیک ہے آجاؤ سب ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔

عدن بیٹا پریشان نہیں ہونا گھبرانا نہیں ہے ۔۔۔۔ کوئی کچھ بھی کہے ان کی باتوں کو سر پر سوار نہیں کرنا . ۔۔۔۔۔۔بیٹا ایک بات یاد رکھنا۔۔۔۔کچھ پانے کے لئے کچھ کھونا پڑھتا ہے ۔۔۔۔۔۔کوئی بھی پریشانی ہو وہاں کوئی بھی مسئلہ ہو مجھے لازمی بتانا ۔۔۔۔۔ٹھیک ہے نہ ۔۔۔۔۔مزمل ماموں راستے میں بھی عدن کو سمجھا رہے تھے ۔۔۔

جی ٹھیک ہے ماموں جان ۔۔۔۔آپ بے فکر رہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔

باجی آپ نے اور عدن نے واپس جلدی آنا ہے ملنے بلکہ زرنش اور میرب کو بھی لے آئیے گا ۔۔۔۔۔۔

جی ٹھیک ہے مامی جان ۔۔۔۔آپ لوگ بھی پاکستان آئیے گا۔۔۔۔۔۔۔

ہاں ہم آئیں گے کچھ دنو تک ۔۔۔۔
اللّه میری بیٹی کو خوش رکھے آباد رکھے ۔۔۔۔۔مزمل ماموں کی آنکھوں میں آنسو آگئے تھے ۔۔۔۔۔ ۔

ماموں جان روئے تو نہیں ۔۔۔۔مجھے ہنسی آجاۓ گی ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن نے مزمل ماموں کے آنسو صاف کرتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔

تم اتنے دن رہی۔۔۔ اب جا رہی ہو تو ہمارا گھر خاموش ہو جاۓ گا ۔۔ تمہاری کمی محسوس ہوگی ۔۔۔۔۔عادت ہوگئی ہے تمہاری ۔۔۔۔۔فرح مامی نے عدن کو پیار کرتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔۔

مامی جان ماموں جان آپ لوگ آجائیے گا ۔۔۔۔۔پاکستان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقت گزرتا گیا پتہ بھی نہیں چلا ۔۔۔۔عدن کو جہاز میں بیٹھ کر سکون آگیا تھا ۔۔۔۔۔اپنے وطن واپسی ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔انسان اس دنیا میں جہاں بھی چلا جاۓ لیکن جب وہ اپنے وطن آرہا ہو ۔۔۔۔۔ایک الگ سی خوشی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔ایک الگ سا سکون ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن سوچ رہی تھی پاکستان جا کر اس کو اپنے وطن کے لئے کیسے کام کرنا ہے ۔۔۔عدن۔گہری سوچوں میں گم تھی سارا راستہ ۔۔۔۔۔۔۔پاکستان پہنچتے ہی جہاز سے اترتے ہی عدن نے سجدہ کرلیا تھا اور اپنی سر زمین کو چوم لیا تھا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلام بی بی جی ۔۔۔۔۔ڈرائیور عدن اور عفاف کو لینے آیا تھا ۔۔۔۔۔

وعلیکم السلام ۔۔۔۔کیسے ہیں بھائی آپ ۔۔۔۔۔

جی الحمد اللّه ۔۔۔۔۔اللّه پاک کا۔ احسان ہے ۔۔۔۔۔۔

بھائی پاکستان میں آکر سکون۔ آگیا ہے اپنا۔ ملک واقع ہی اپنا ہوتا ہے ۔۔۔۔عدن بہت خوش تھی ۔۔۔ سارا راستہ عدن ہر چیز غور سے دیکھ رہی تھی اتنے ٹائم۔ بعد جو آئی ۔تھی ۔۔۔۔
گھر پر سرونٹ بھی خوش تھے ۔۔۔۔عدن اور عفاف کے پاکستان آنے پر ۔۔۔۔

السلام عليكم کسی ہیں آپ۔۔۔۔ماسی میں نے۔ آپ۔ کو بہت مس کیا تھا وہاں پر۔ عدن نے۔ ماسی کو۔ گلے سے لگا لیا تھا ۔۔۔۔۔۔ماسی۔ بہت بھوک لگی ہے آپ کے ہاتھ کا مزیدار کھانا اور چائے چاہیے بس ۔۔۔۔۔

ہاں ہاں میرا بچہ میں ابھی لگاتی ہوں کھانا ۔۔۔۔۔سلام عفاف بی بی جی آپ کسی ہیں ۔۔۔۔۔

وعلیکم السلام میں۔ بھی ٹھیک ہوں۔۔۔۔فریش ہوکر آتے ہیں پھر کھانا کھاتے ہیں ہم ۔۔۔۔۔عفاف تھوڑی بہت اداس۔ تھیں۔۔۔۔۔ شاید۔ وہ عریب کو یاد کر رہی تھیں ۔۔۔۔۔
۔..................
ماسی آج تو سچ میں مزہ آگیا ہے سچ میں ۔۔۔۔۔میرا پیٹ بھر گیا ہے مگر دل نہیں برھا ابھی تک ۔۔۔۔

تو عدن بیٹا اور کھانا بناؤں ۔۔۔۔۔

نہیں ماسی ۔۔۔۔۔بہت بہت شکریہ ۔۔۔۔۔ماما آپ کیوں نہیں کھا رہیں ہیں کھانا کیا ہوا ہے آپ کو ۔۔۔۔۔۔

عدن بیٹا دل نہیں کر رہا ۔۔۔۔۔۔عفاف پلیٹ سائیڈ پر کر کے اٹھنے لگی ۔۔۔۔۔

ماما پلیز کھا لیں نہ ۔۔۔۔۔

عدن بیٹا ۔۔۔۔۔بھوک نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔تھک گئی ہوں تھوڑا ریسٹ کرنا ہے میں بعد میں کھا لوں گی کھانا ۔۔۔۔۔۔
۔۔عدن جانتی تھی ماما اداس ہیں ۔۔۔۔۔عدن بھی ٹوٹ چکی تھی ۔۔۔۔پر وہ نہیں چاہتی تھی وہ اپنی کمزوری کسی پر ظاہر کرے عدن کو ابھی وطن کے لئے بہت کچھ کرنا تھا ۔۔۔۔۔عدن تھوڑا بہت پریشان تھی لوگوں کا سامنا کیسے کرے گی ۔۔۔۔۔۔لوگوں کے روئیّے ۔ کیسے برداشت کرے گی ۔۔۔پر عدن بزدل نہیں بننا چاہتی تھی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج میرا ہسپتال میں پہلا دن ہے ۔۔ماما دعا کیجیۓ گا ۔۔۔۔۔عدن ہسپتال جانے کے لئے تیار ہوگئی تھی ۔۔۔۔۔

اللّه مدد کرے گا بیٹا پریشان نہ ہو۔۔۔۔

آمین ماما ۔۔۔۔چلیں میں چلتی ہوں ماما آپ اپنا۔ خیال رکھئے گا ۔۔۔۔عدن عفاف کو گلے لگ کر پیار کرتے ہوۓ بولی ۔۔۔۔۔۔۔

تم بھی اپنا خیال رکھنا آیت الکرسی پڑھ لینا اور سفر کی دعا بھی ۔۔۔۔۔عفاف ماں تھیں ان کا دل ڈر رہا تھا ماضی میں جو کچھ ہو چکا تھا ۔۔۔۔آج عدن اکیلے باہر جا رہی تھی دنیا والوں کا سامنا کرنے ۔۔۔جہاں ہر طرف دشمن ہی دشمن تھے ۔۔۔۔۔
(جاری ہے
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 303 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27575 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: