درد جدائی .....قسط 37

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی ۔۔۔۔قسط ۔37۔ ۔۔۔۔مصنفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر پوسٹ کرنا منع ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر صاحب دیکھیں ۔۔۔۔۔میرے بیٹے کا سر پھٹ گیا ہے بہت خون بہہ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔اور یہ ہوش میں بھی نہیں آرہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہمارے گھر کے ساتھ والوں کا گھر بن رہا تھا ۔۔۔۔۔میرے بچے کھیل رہے تھے ۔۔۔۔تو اینٹ گر گئی ۔۔۔۔۔۔ایک آدمی روتا ہوا بتا رہا تھا ساتھ اس کے اسکی بیوی بھی تھی ۔۔۔۔

میں چیک کرتی ہوں آپ پریشان نہ ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن بچے کو جسے ہی دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔وہ بندہ چلا اٹھا ۔۔۔۔۔۔

تم تم تو عریب کی بیٹی ہو نہ ۔۔۔۔جسے پھانسی ہوئی تھی . ۔۔۔۔۔۔جس نے وطن سے غداری کی تھی میں غدار کی بیٹی سے ہرگز علاج نہیں کرواؤں گا اپنے بیٹے کا ۔۔۔۔۔۔ارد گرد لوگ جمع ہونے لگ گئے تھے

دیکھیں سر چھوٹا سہ معصوم بچہ ہے یہ ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا پہلے بھی خون بہہ چکا ہے بہت زیادہ اس کو ہوش میں لانا ضروری ہے نہیں تو اس کی جان جا سکتی آپ مجھے دیکھنے دیں ۔۔۔۔۔۔۔عدن اس بندے کی باتیں سن کر بوکھلا گئی تھی ۔۔۔مگر وہ ہمت نہیں ہارنا چاہتی تھی ۔۔۔۔رونا نہیں چاہتی تھی ۔۔۔۔ویسے بھی رونے کا یا اپنی کمزوری ظاہر کرنے کا کوئی فائدہ نہیں ۔۔۔۔جب آس پاس کوئی آپ کو سمجھنے والا نہ ہو آپ۔ کے آنسو صاف کرنے والا نہ ہو ۔۔۔۔

یہ کیا ہو رہا ہے شور سن کر ڈاکٹر سعد آگئے تھے ۔۔۔۔۔اور انھوں نے عدن سے پوچھا ۔۔۔۔۔

وہ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔عدن اس سے پہلے کچھ بولتی وہ آدمی ڈاکٹر سعد سے مخاطب ہوا ۔۔۔۔۔۔سر میں اس غدار کی بیٹی سے اپنے بیٹے کا علاج نہیں کرواتا آپ پلیز دیکھیں ۔۔۔۔میرے بیٹے کو کیا ہوا ہے اس کو ہوش نہیں آرہا ۔۔۔۔اس کے سر پر اینٹ گری تھی ۔۔۔۔۔عدن خاموشی سے وہاں سے چلی گئی ۔۔۔اور اپنے آفس میں آکر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔عدن رونا چاہتی تھی خوب سارا ۔۔۔۔۔وہ چاہتی تھی وہ اپنا درد کسی کو سنائے اور کوئی ایسا ہو جو خاموشی سے بس اس کو سنے۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن وہ باہر جو ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔

اٹس اوکے ڈاکٹر سعد خیر ہے ۔۔۔۔عدن نے ڈاکٹر سعد کی بات کاٹ دی تھی وہ اس ٹاپک پر پھر ڈسکس نہیں کرنا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔بچے کی طبعیت کسی ہے اب ڈاکٹر سعد۔ ۔۔۔۔عدن نے بات چینج کردی تھی ۔۔۔۔

ہاں اس بچے کا بلڈ بہت بہا ہے ۔۔۔۔۔ابھی تو ایمرجنسی میں ہے ۔۔۔۔اس کو اب کوئی معجزہ ہی بچہ سکتا ۔۔۔۔۔4 گھنٹوں میں ہوش آگیا تو ٹھیک نہیں تو جان بھی جا سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اللّه رحم کرے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے میجر غازان۔ ۔۔۔۔ہر وقت کام میں ہی مصروف رہتے ہو مانا کے جاب ایسی ہے پر تم نے تو خود کو کچھ زیادہ ہی مصروف کرلیا ہے ۔یا پھر دوست کو بھول ہی گئے ہو ۔۔میجر احد ناراض ہوتے ہوۓ بولے ۔۔۔۔۔

نہیں احد ایسی بات نہیں ہے تجھے کیسے بھول سکتا ہوں ۔۔۔۔تو تو جان ہے میری ۔۔۔۔۔دکھ درد کا ساتھی ہے تو میرا ۔۔۔۔۔۔

بس بس اب مکھن لگا رہا مجھے ۔۔۔۔۔جب تو فری ہوتا تو اکیلے اکیلے گم سم رہتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔کس کے عشق میں مجنو بنا پھر رہا ۔۔۔۔۔۔میجر احد منہ بناتے ہوۓ بولے ۔۔۔۔۔۔۔۔

استغفراللّه انسان بن جاؤ احد ایسا کچھ نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔

عدن سے محبت کرتا تھا نہ تو غازان ۔۔۔۔تجھے پتہ بھی ہے اب وہ کہاں ہے کیسی ہے ۔۔۔۔۔اتنا ٹائم ہوگیا ہے ۔۔۔۔

جہاں بھی ہے خوش ہوگی ۔۔۔۔۔ویسے بھی وہ مجھے چھوڑ کر چلی گئی تھی اس کو میرے ساتھ رہنا منظور ہی نہیں تھا ۔۔۔۔۔اس کو میری ذات ناقابل برداشت تھی ۔۔۔۔۔ غازان نے فائیل اٹھا لی خود کو مصروف ظاہر کرنے کے لئے ۔۔۔۔۔۔

بس کردے یار ۔۔۔۔۔تیرا ناراض ہونا بنتا بھی نہیں ہے تو خود کو عدن کی جگہ پر رکھ کر دیکھ ۔۔۔۔۔اگر کوئی تجھے کڈنیپ کرکے رکھے گا فیملی والوں سے ملنے نہیں دے گا ۔۔۔۔تو تم کیا کرو گے اس کے ساتھ ہنسی خوشی رہو گے یا موقع ڈھونڈھ کر وہاں سے نکلنے کی کوشش کرو گے ؟
غازان خاموش ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔


دیکھ میں تجھے مجبور نہیں کروں گا پر سوچ لے ۔۔۔۔۔جسے تیری مرضی ۔۔۔۔۔۔احد نے وہاں سے اٹھ کر جاتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماسی بات سنیں ۔۔۔۔۔یہ سامنے والے گھر میں کون آیا ہے ۔۔۔۔یہ بندہ مجھے عجیب لگ رہا ہے پتہ نہیں کیوں ۔۔۔۔۔عدن جب سے آئی تھی وہ اس بندے کی حرکتیں غور کر رہی تھی۔۔۔۔

ہاں بیٹا یہ بندہ سارا دن گھر سے باہر بیٹھا رہتا ہے۔۔۔۔ماسی نے برتن دھوتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

پر کیوں ماسی۔یہ کوئی کام نہیں کرتا کیا ۔؟عدن نے حیران ہوتے ہوۓ کہا۔

بیٹا کہتا ہے میں رکشہ چلاتا ہوں۔پر سارا دن تو گلی میں بیٹھا رہتا پتہ نہیں کب چلاتا ہے رکشہ ۔۔۔۔

ماسی اس کے گھر میں کون کون ہیں ۔۔۔عدن نے پھر سے سوال کیا ۔۔۔

بیٹا ان کی بس ایک ہی بیٹی ہے۔۔

ہمم ٹھیک ہے ماسی ۔۔۔برتن دھونے کے بعد چائے بنا دینا میں تھکی ہوئی ہوں بہت اور سر میں بھی درد ہو رہا ہے ۔۔

جی بیٹا ٹھیک ہے میں ابھی چائے بنا دیتی ہوں ۔۔۔

شکریہ ماسی۔۔ عدن کمرے میں آکر مسلسل اس بندے کے بارے میں سوچ رہی تھی ۔۔۔۔وہ بندہ۔ اور اس کی حرکتیں اور ماسی کی باتیں عدن۔ کو الجھا رہی تھیں مسلسل۔۔۔
عدن کے گھر میں اور گھر کے باہر سی سی ٹی وی کیمرہ لگا ہوا تھا ۔۔عدن سی سی ٹی وی کیمرے کی مدد سے گھر کے دوسری جانب سامنے والے گھر کا باہر کا منظر آرام سے دیکھ سکتی تھی اور نظر بھی رکھ سکتی تھی ۔۔عدن نے اس بندے کی ہر حرکت پر نظر۔ رکھنا شروع کردی ۔۔وہ بندہ مسلسل باہر بیٹھ کر ہر ایک کو آتا ہوا اور جاتا ہوا دیکھ رہا تھا ۔جب کسی گھر کا دروازہ کھولتا تو اس بندے کی نظریں ادھر جم جاتیں ۔۔جیسے وہ کسی کی مخبری کر رہا ہو ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن کے بابا آرمی میں بہت اچھے عہدہ پر فائز تھے۔ جس کی وجہ سے عدن آرمی کے بہت سے لوگوں کو جانتی تھی ۔۔۔آئی ایس آئی چیف سے بات کرنا عدن کے لئے مشکل نہیں تھا ۔۔۔تھوڑی محنت کے بعد عدن آئی ایس آئی چیف سے رابطہ کرنے میں کامیاب ہوگئی تھی۔۔۔
السلام عليكم سر میں عدن بات کر رہی ہوں بریگیڈیئر عریب کی بیٹی ۔۔۔سر مجھے آپ کو بہت اہم بات بتانی ہے

وعلیکم السلام جی بیٹا بولیں۔۔

سر ہمارے گھر کے سامنے ایک بندہ ہے مجھے شک ہے وہ غیر قانونی کاموں میں ملوث ہے۔۔ سر میں جانتی ہوں میرے بابا نے جو کیا وہ غلط تھا اور ان کو ان کے کئے کی سزا مل چکی ہے ۔۔سر وہ میرے بابا نہیں ہیں ہمارا۔ رشتہ تب ہی ختم۔ ہوگیا تھا جب انھوں۔ نے وطن۔ سے غداری کی تھی ۔سر پلیز میرا یقین کیجیۓ یہ بندہ بھی مجھے ٹھیک نہیں لگ رہا ہے۔

میں تمہاری بات پر کیسے یقین کروں عدن ؟

سر میرے لئے میرے وطن سے بڑھ کر کچھ نہیں ہے کوئی میرے وطن۔ کی طرف میلی نگاہ سے دیکھے گا تو میں اس کو راکھ کر دوں گی۔ آپ کو میرا یقین نہیں کرنا۔ نہ کیجیۓ پر وطن کے غداروں کو میں نہیں چھوڑوں گی چن چن کر ماروں گی۔۔۔۔آپ کو لگتا ہے میں ایک غدار کی بیٹی ہوں تبھی آپ میری بات پر یقین نہیں کر رہے ہیں۔ میں کسی کی بیٹی نہیں ہوں میں ایک پاکستانی ہوں محب وطن ہوں جس کو اپنے وطن سے بے پناہ عشق ہے۔ اور کوئی بھی وطن سے غداری کرے گا اس کے ساتھ میرا رشتہ ختم ہوجاۓگا۔ میں ان گمنام ہیروز کی بہن ہوں جو وطن عزیز کی خاطر اپنی جان دے دیتے ہیں اپنا سر قلم کروا دیتے ہیں پر ایک بھی راز نہیں بتاتے۔سر مجھے لگا تھا آپ میری بات پر یقین کریں گے۔ اور وطن کے غداروں کے لئے یہ سر زمین تنگ کر دیں گے۔ مگر آپ نے۔ مجھے پاکستانی نہیں ایک غدار کی بیٹی سمجھا۔۔
عدن کے ذہن میں۔ ہسپتال والا سین گھوم رہا تھا ۔۔سر خاموشی سے عدن کو سن رہے تھے۔ عدن تھک کر خاموش ہوگئی۔

شاباش بیٹی تمہارا جذبہ دیکھ کر میں متاثر ہوا ہوں۔ویسے تو جو وطن سے غداری کرتے ان کی آنے والی نسلیں بھی آرمی میں نہیں جا سکتی ہیں۔ لیکن تمہارا جذبہ کمال کا ہے۔بلکل وطن سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں ہے بیٹا۔ وطن ہے تو ہم ہیں۔ہمارا وطن ہی ہمارا سب کچھ ہے۔ اور ہم اپنے وطن سے غداروں کو ختم کرکے رہیں گے ان شاء اللّه۔۔۔۔ عدن بیٹا تمہارا ٹاسک ہے۔ تم اس بندے کے خلاف ثبوت جمع کرو ۔ اور ثابت کرو وہ سچ میں غدار ہے یا نہیں یہ تمہارا مشن ہے اگر تم کامیاب ہوگئی۔ تو تم آئی ایس آئی کے لئے کام کر سکتی ہو۔
ویسے کیا کرتی ہو عدن بیٹا ۔

سر میں ڈاکٹر ہوں۔۔۔

ماشاءاللّه۔۔ چلو اگر تم کامیاب ہوئی تو تمہاری جاب سی ایم ایچ میں۔ کروا دوں گا ٹھیک ہے ۔۔۔۔

تھنک یو سو مچ سر۔۔۔۔

اللّه تمہیں شاد و آباد رکھے آمین
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عدن خوش ہو گئی تھی ۔۔۔بہت زیادہ۔ عدن کے لئے یہ مشن بہت اہم تھا۔
عدن نے دن رات ایک کر دیا تھا اس بندے کے خلاف ثبوت جمع کرنے میں۔۔۔۔عدن نے اس بندے سے دوستی کر لی تھی جس کا نام محمّد ادیان تھا اور اس کا اعتماد جیتنے میں کامیاب ہوگئی تھی۔۔۔

عدن تمہارے بابا نے تو وطن کے دشمنو کو اہم راز بتا دیئے تھے۔۔ادیان نے مسکراتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔وہ عدن کو چیک کرنا چاہ رہا تھا۔

جی بلکل کیوں کہ ان کو اس کام کے پیسے ملے تھے ۔۔۔ جہاں پیسہ مل رہا ہوتا ہے وہاں انسان کام تو کرتا ہے نہ ۔۔۔۔۔عدن جانتی تھی وہ عدن کو چیک کر رہا ہے اس لئے عدن نے حیران یا پریشان ہونے یا خود کو غصہ دلانے والا ریکشن نہیں کیا تھا ۔۔۔۔بہت نارملی جواب دیا تھا ۔۔جب بھی کسی انسان کو چیک کیا جاتا ہے تو اچانک سوال کردیا جاتا ہے اگلے بندے کا ریکشن بتا دیتا ہے وہ سچ بول رہا یا جھوٹ۔ اگر انسان جھوٹ بول رہا ہوتا ہے تو وہ بوکھلا جاتا یا اس کے چہرے پر پریشانی طاری ہو جاتی ہے ۔۔عدن یہ سب جانتی تھی اس لئے نہ وہ بوکھلائی تھی نہ پریشان ہوئی تھی

ادیان کو عدن پر بھروسہ ہوگیا تھا کہ عدن پیسوں کے لئے کچھ بھی کر سکتی ہے۔۔۔۔ ادیان کو عدن کام۔ کی لگی تھی

(جاری ہے )💖
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 194 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 81 Articles with 31255 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: