جہاد بڑی نعمت

(Abdullah Bin Sharif, Multan)

اس حقیقت کو سب پاکستانی تسلیم کرتے ہیں کہ کشمیر پاکستان کی شہہ رگ ہے۔مسلہ کشمیر کوئی ایسا مسئلہ نہیں کہ جس کا حل موجود نہ ہو۔اور بحیثیت مسلمان میرا یہ ایمان ہے کہ دنیا کا کوئی مسئلہ ایسا نہیں جس کا حل قران پاک میں موجود نہ ہو۔جب کفار کا ظلم حد سے بڑھ جائے تو اس کا حل قرآن میں جہاد بتایا گیا ہے۔موجودہ صورتحال یہ ہے کہ ہم لوگ جہاد کا متبادل راستہ ڈھونڈنے پر تلے ہوے ہیں۔ہم لوگ چاھتے ہیں کہ یہ مسئلہ امن سے حل ہو جائے اور قرآن پاک بتاتا ہے کہ کفار بدترین جانور ہیں۔ بد ترین جانور کبھی امن نہیں چاہیں گے۔آج نہیں تو کل کشمیر آزاد ہوگاانشاء اﷲ۔ اس آزادی کی وجہ جہاد ہی بنے گا کیوں کہ اس کے علاوہ دوسرا کوئی راستہ نہیں۔جب ایک کتا پاگل ہوجاتا ہے تو وہ ہر دوسرے شخص کو کاٹنے لگتا ہے اور اگر آپ لوگ اس کتے کو جان سے مارنا ظلم سمجھتے ہو تو آپ یقیناً بہت بڑے احمق ہیں۔کیوں کہ انسانوں کے دفاع میں اس کتے کو جان سے مارنا جائز ہے۔کچھ یہی معاملہ کشمیر کا ہے۔ کشمیر کے مسلمانوں کو بچانے کے لیے جو کافروں کو مارنا ظلم سمجھتا ہے وہ میری نظر میں احمق ہے۔ کیوں کہ ایک مظلوم مومن کو بچانے کے لیے لاکھوں ظالم کافروں کو مارنا بالکل بھی غلط نہیں اور میرا وہی نعرہ ہے جو صحابہ کرام کا تھا۔کافروں کا ایک علاج الجہاد ولجہاد اور رہ گی بات غزوہ ھند کی وہ تو احادیث سے ثابت ہے۔اسے دنیا کی کوئی طاقت ٹال نہیں سکتی۔حدیث ہے کہ " جہاد قیامت تک جاری رہے گا انشااﷲ "لیکن ہم لوگ چاہتے ہیں بغیر جہاد کے کشمیر آزاد ہوجاے۔بغیر جہاد کے ہم لوگ امن و سکون سے رہ لیں۔ اگر جہاد کے بغیر مومنو ں کی ترقی ممکن ہوتی اور بغیر جہاد کے اسلامی سلطنت کا قیام عمل میں لایا جاسکتا تو اﷲ تعالیٰ جہاد فرض ہی نہ کرتا۔قرآن میں بار بار جہاد کا ذکر نہ آتا۔ حقیقت کو سامنے رکھا جائے تو میرے نزدیک امن کا پرچم محض ایک ڈھال ہے۔حقیقت تو یہ ہے کہ ہم لوگ زندگی سے پیار کرنے لگ گے ہیں۔ہم لوگ مرنے سے ڈرتے ہیں کہیں کافروں کے ہاتھوں مارے نہ جائیں۔ہم جانی اور مالی دونوں نقصان سے ڈرتے ہیں۔جب کہ جان کا مالک اﷲ ہے اور جہاد اﷲ کے لیے ہے۔کشمیر کے حالات کسی سے بھی چھپے نہیں ہیں۔سب جانتے ہیں کشمیر میں کیا ہورہا ہے ، فلسطین میں کیا ہورہا ہے اور برما میں کیا ہورہا ہے۔آج نہیں تو کل کہیں نہ کہیں سے جہاد منظر عام پر آ کر ہی رہے گا۔جہاد ایک نعمت بھی ہے۔اس نعمت سے اگر ہم لوگ فیض یاب نہیں ہوتے تو ہم بد نصیب ہیں۔اﷲ تعالیٰ ہر کسی کو اپنی راہ میں لڑنے کا موقع نہیں دیتا۔

کیا تم کو ذرا بھی خیال ہے جب بروز محشر مظلوم مسلمان تمہارا گریبان پکڑ کر کہیں گے" یا اﷲ ہم پر ظلم ہورہا تھا اور یہ بس موت کے ڈر سے ہم پر ظلم ہونے دیتا رہا۔یا اﷲ ہماری عزتیں محفوظ نہیں تھی اور یہ اپنی جان بچانے کی خاطر کفار سے صلح کا منصوبہ بناتا رہا" تو کیا جواب دو گے۔بے شک اس پر ہماری بہت بری پکڑ ہوگی۔جہاد کرو۔قلم سے۔مال سے۔جان سے۔فرض ادا کرو۔جس طرح نماز،روزہ فرض ہے جہاد بھی فرض ہے۔فرض کا منکر کافر ہے۔جو جہاد کا منکر ہے وہ کافر ہے۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 180 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Abdullah Bin Sharif
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ