بیٹیوں کا قبرستان

(Hafsa Saqi, Islamabad)

سال کے آغاز سے ہی دُنیا مختلف ماحولیاتی مسائل کا شکار ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ قدرتی آفات بھی جانی اور مالی نقصان کا باعث بن رہی ہیں۔31 دسمبر2019ء کو چین میں ایک ایسی بیماری کا مریض سامنے آیا جس نے 2020ء میں تمام دُنیا کو خوف میں مبتلا کردیا۔اس میں کوئی دورائے نہیں ، کہ انسان کو فطرت سے بغاوت نے تباہی کے دہانے لا کھڑا کیا۔

اب تک چین سمیت 24 ممالک میں 14ہزار سے زائد کیسز کی تصدیق ہو چکی ہے۔اگر احتیاطی تدابیر ، اور بروقت اقدامات نہ کیے گئے تو ،تو یہ خطرناک مرض 6 ماہ میں 3 کروڑ افراد کو موت کے نیند سلا سکتا ہے۔ عالمی سطح پر یہ خیال ظاہر کیا جارہا ہے کہ چین سے شروع ہونے والا اور دُنیا میں تیزی سے پھیلتا یہ وہی وائرس ہے جس کا تذکرہ بل گیٹس نے 2018 ء میں ہی کردیا تھا۔ تاہم مائیکروسافٹ کے بانی نے مذکورہ مرض یا وائرس کا نام نہیں بتایا تھا۔

کرونا وائرس 1960ء میں پہلی بار متعارف ہوا۔ اب تک 13 اقسام دریافت ہوچکی ہیں جن میں سے 7 اقسام ایسی ہیں جو جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہوسکتی ہیں۔ کرونا وائرس دودھ دینے والے جانوروں اور پرندوں سے انسانوں میں منتقل ہوتا ہے۔یہ انفلوائزا کی ایک قسم ہے جو ناک کے ذریعے پھیپھڑوں میں منتقل ہوتا ہے جس سے وائرس سے متاثر ہونے والے فرد کو سانس لینے میں تکلیف اور دشواری ہوتی ہے۔ کرونا کی علامات 2 سے 14دنوں کے درمیان سامنے آنے لگتی ہیں جن میں نزلہ، زکام، کھانسی، سر اور تیز بخار اس سینمونیہ اور پھیپھڑوں میں سوجن پیدا ہوتی ہے اور سانس لینا مشکل ہوجاتا ہے۔
چین میں اب تک 14628، ہانگ کانگ میں 14، مکاو میں 8،جاپان میں 20، تھائی لینڈ میں 19، سنگاپور میں 18، جنوبی کوریا میں 15، آسٹریلیا میں 12، تائیوان میں 10، ملائیشیا میں 8، امریکا میں 8، جرمنی میں 8، فرانس میں 6، ویت نام میں 6، متحدہ عرب امارات میں 5، کینیڈا میں 4، اٹلی میں 2، برطانیہ میں 2، بھارت میں 2، فلپائن میں 2، کمبوڈیا میں ایک، اسپین میں ایک، فن لینڈ میں ایک، سوئیڈن میں ایک، نیپال میں ایک اور سری لنکا میں کیس کی تصدیق ہوئی ہے۔

یہ بیماری انسان کے نظامِ تنفس پر حملہ کرتی ہے اور کچھ ہی دنوں میں انسان موت کے منہ میں چلا جاتا ہے۔کرونا وائرس چین کے شہر ووہان میں پھیلا اور دیکھتے ہی دیکھتے پوری دُنیاپر خطرات کے بادل منڈلانے لگے۔

کرونا وائرس کے لیے کوئی ویکسین اور علاج دستیاب نہیں ہے۔ ماہرین صحت کے مطابق اس سے بچنے کے لیے حفاظتی تدابیر اختیار کریں ، جن میں ہاتھ دھونا، گندے ہاتھ منہ، ناک اور کان پر نہ لگانا، منہ پر ماسک پہنا نا، اور ان لوگوں سے فاصلہ رکھنا، جو اس مرض میں مبتلا ہوں۔ اس بیماری کا پھیلاؤکھانسی، ہوا، چھینکوں، مریض کو ہاتھ لگانے یا جن اشیا پر یہ وائرس موجود ہو، سے ہوتا ہے۔ اگر طبیعت خراب ہو تو زیادہ لوگوں سے میل جول نہ کریں، اپنے منہ اور ناک کو ڈھانپ لیں۔ اگر کرونا وائرس کے علاج پر بات کریں تو اس کا اب تک کوئی علاج نہیں ہے۔ اگر کوئی کرونا وائرس میں مبتلا ہوجائے تو اس کی علامات پانچ سے چھ دن میں ظاہر ہو جاتی ہیں۔

ماہرین طب کے مطابق چین کے شہر ووہان میں اس کے پھیلاؤ کا سبب چمگادڑ کا سوپ، جنگلی جانوروں کے کچے گوشت کا استعمال اور سی فوڈ ہے۔ جانوروں سے یہ وائرس انسانوں میں منتقل ہوا۔ اس کے بعد اس کا پھیلاؤ انسانوں سے انسانوں میں ہوا۔

سات جنوری کو چینی حکام نے تصدیق کی ؛کہ کرونا وائرس ایک نیا وائرس ہے اور اس کا نام این سی او وی رکھا گیا۔یکم جنوری 2020ء کو ووہان میں سی فوڈ مارکیٹ کو بند کردیا گیا۔11 جنوری کو چین میں کرونا وائرس کی وجہ سے پہلی موت ہوئی۔اس سے اب تک چین میں کئی افراد لقمہ اجل بن چکے، اور متاثرہ افراد کی تعداد 426سے زائد ہے۔ ہسپتال بھرے پڑے ہیں اور لوگ خوف میں مبتلا ہیں۔ چین کی حکومت نے شہر کو سیل کر دیا ہے اور یہاں پر بس، ٹرین اور ہوائی سروس بند کردی گئی ہے، شہریوں کو شہر سے باہر جانے کی اجازت نہیں ہے۔ چین کا صوبہ ہوبائی اس سے سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے جبکہ چین کے دیگر حصے اس وبا سے ابھی محفوظ ہیں، لیکن خطرے کے پیش نظر تمام بڑے سیاحتی مقامات کو بند کردیا گیا ہے اور عوام کو غیر ضروری سفر سے روکا جا رہا ہے۔ ووہان میں اس وقت متعدد بھارتی اور پاکستانی طالب علم موجود ہیں اور وہ بھی خطرے کی زد میں ہیں۔ ووہان کی آبادی گیارہ اعشاریہ آٹھ ملین سے زائد ہے۔ چینی حکام نے پورے ملک میں جنگلی جانوروں کی سیل پر پابندی لگا دی ہے۔ اس کے ساتھ قمری سال کے آغاز کی تقریبات کو بھی ملتوی کر دیا ہے۔تاہم کرونا وائرس دُنیا میں تیزی سے پھیل رہا ہے اور امریکا، تھائی لینڈ، ویتنام، آسٹریلیا، جنوبی کوریا، تائیوان، فرانس، نیپال، ملائیشیا اور جاپان میں اس کے کیس سامنے آ چکے ہیں۔

چین میں جنگلی جانور اور ہر طرح کے سی فوڈ کو کھایا جاتا ہے۔ کچھ طبی ماہرین کے مطابق یہ سانپ، چمگادڑ کے فضلے و گوشت سے پھیلا۔ چین کے صد رشی پنگ کے مطابق کرونا وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے اور چین کو اس وقت بدترین صورتحال کا سامنا ہے۔

اس وقت چین میں عام تعطیل ہے اور ہنگامی طور پر عوام کے لیے طبی اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ ووہان میں ایک ہزار بستر پر مشتمل ہسپتال ہنگامی بنیادوں پر تیار کیا گیا ہے۔ مشتبہ مریضوں کی وجہ سے پہلے سے قائم ہسپتال مکمل طور پر بھر گئے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت نے اس حوالے سے کہتا ہے یہ سانس کے نظام پر حملہ کرنے والا وائرس ہے، لوگ کھانسی، بخار، نزلہ اور فلو میں مبتلا ہوتے ہیں بعد میں یہ نمونیا اور پھیپھڑوں کی سوجن کا باعث بنتا ہے اور مریض کا سانس رک جاتا ہے۔ ڈبلیو ایچ او کے مطابق 25 فیصد مریضوں کی بیماری شدید ہے۔پاکستانی دفتر خارجہ کے مطابق وزرات خارجہ بیجنگ میں پاکستانی سفارت خانے اور چین کے حکام کے ساتھ رابطے میں ہے۔ 4پاکستانی طلبہ میں کروانا وائرس کی تصدیق ، وہ وطن واپسی کے لیے بے چین ہیں ، لیکن اگر اسلامی نقطہ نظر سے بھی دیکھا جائے تو وباء کے پھیلنے کی صورت میں سفر نہیں کرنا چاہیے ، کیونکہ اس سے دوسرے شہروں ممالک کے صحت مند افراد بھی متاثر ہوسکتے ہیں ۔ پاکستان کے کچھ طبی ماہرین کے مطابق اس وائرس کے ٹیسٹ کی سہولت پاکستان میں موجود نہیں، نمونے ہانگ کانگ بھیجے جائیں گے۔ جب کہ پمز کے ترجمان کے مطابق اس کے ٹیسٹ کی سہولت پاکستان میں موجود ہے۔ ملتان کے نشتر ہسپتال میں اس وقت ایک چینی باشندہ فلو، کھانسی اور بخار کے باعث داخل ہے۔ اس وقت دُنیا بھر میں متعدد کرونا وائرس کے کیسز سامنے آئے ہیں۔ اس کے لیے حکومت پاکستان کی طرف سے ہوائی اڈوں پر اسکریننگ کاؤنٹر قائم کیے جائیں اور جن مسافروں کو بخار، کھانسی اور فلو ہو اور انہوں نے چین کا سفر کیا ہو تو ان کی جانچ ضروری ہے۔ خاص طور پر جو چینی باشندے پاکستان میں کام کرتے ہیں اور نئے سال کے باعث وہ چین گئے تھے، ان کی چھٹیاں بڑھا دی جائیں۔ جو واپس آ رہے ہیں ان کا طبی معائنہ کیا جائے۔

پاکستان ترقی پذیر ملک ہے، یہاں کی آبادی بھی زیادہ ہے اور صحت کی سہولیات بھی کم ہیں، اگر یہ وائرس یہاں پھیل گیا تو بہت تباہ کاریاں ہوں گی، اس لیے احتیاط بہتر ہے۔ پاک چین بارڈر پر بھی اسکریننگ کاؤنٹر قائم کئے جائیں تاکہ بذریعہ روڈ آنے والوں کی بھی طبی جانچ پڑتال ممکن ہو سکے ۔اس کے ساتھ ساتھ طبی عملہ بھی اپنی حفاظت یقینی بنائے۔ چین سے آنے والے سامان اور ڈاک کو بھی حفاظتی اقدامات کے بعد کھولا جائے۔سب لوگ اپنے ہاتھ بار بار دھویں، منہ دھویں، چھینکتے وقت منہ پر ہاتھ رکھیں، رومال یا ٹشو استعمال کریں۔ اگر یہ موجود نہ ہو تو کہنی کی طرف چھینک دیں ہاتھ نہ استعمال کریں۔ گوشت، انڈے پکا کر کھائیں کچا گوشت نہ کھائیں۔ جنگلی جانوروں سے دور رہیں خاص طور پر چمگادڑ کو ہاتھ نہ لگائیں۔

فارمز کے جانوروں سے بھی فاصلہ رکھیں۔ اگر کوئی کھانس رہا ہو، بیمار ہو، شبہ ہو کہ اس کو کرونا وائرس ہے، اس سے فاصلہ رکھیں۔ پبلک مقامات پر منہ پر ماسک پہنیں، ہاتھوں پر دستانے چڑھا لیں۔ اگر صابن نہ ہو تو ہینڈ سٹیلائزر استعمال کریں۔ غیرضروری سفر سے پرہیز کریں۔ گندے ہاتھ ناک اور آنکھوں کو نہ لگائیں۔کروانا وائر س ہو یا ڈینگی کوئی بھی وبائی مرض احتیاط کی متقاضی ہوتی ہے ۔ ہمیں احتیاط سے کئی امراض سے نجات پا سکتے ہیں۔یہ معاشرے کی ہر فرد کی ذمہ داری ہے ۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 328 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hafsa Saqi

Read More Articles by Hafsa Saqi: 11 Articles with 2876 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ