سراج الحق کو بیرون ملک پھنسے پاکستانیوں کی فکر

(Mir Afsar Aman, Islamabad)

پاکستان کو بیرون ملک سے اربوں کا زر مبادلہ کما کر بھیجنے والے پاکستانی کررونا وائرس کی تباہ کاریوں کی وجہ سے غیر ممالک میں مشکلات کا شکار ہیں۔ دنیا بھر میں سرمایاداروں نے کہیں تنخواؤں میں کمی اور کہیں مزدورں کی چھاٹیاں کرکے بے روزگار کر دیا ہے۔ یہ مزدور مختلف ملکوں سے اپنے اپنے گھروں کو آنے کے لیے بے چین ہیں۔ دنیا بھر میں ہوائی سفر پر کررونا وائرس کی وجہ سے پابندیوں کی وجہ سے یہ بے چینی مذید بڑھ گئی ہے۔ اس مشکل کا نوٹس لیتے ہوئے جماعت اسلامی پاکستان کے امیر اور سینیٹر جناب سراج الحق نے پاکستانی مزدورں کو باعزت طریقے سے پاکستان لانے کے لیے حکومت وقت پر زور دیا ہے۔ حکومت نے کچھ طیارے چارٹر ڈکر کے انتظامات کیے ہیں، مگر اس کی رفتار سست ہے۔ ان میں تیزی لانے کی سخت ضرورت ہے۔ جن مزدورں کو لایا جارہا ہے اُن سے بھی کررونا ٹیسیٹنگ اورکراٹین کرنے کی فی کس چار ہزار روپے چارج کرنے پر ا عتراض کرتے ہوئے کہا کہ حکومت مشکل کی گھڑی میں اربوں روپے کا زر مبادلہ کما کر دینے والوں مزدروں کی جیب پر ڈاکا نہ ڈالے۔ اس پر جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق صاحب نے حکومت کو پیش کش کی ہے کہ ہر ایئر پورٹ پر الخدمت فاؤنڈیشن فری ٹسٹینگ کی ذمہ داری قبول کرنے کے لیے تیار ہے۔ اس سے قبل جب کررونا وائرس کے پاکستان میں شروع ہونے پر سراج الحق نے حکومت کو کہا تھا کہ جماعت اسلامی کی الخدمت فاؤنڈیشن پاکستان میں کے سارے ہسپتال حکومت کے سپرد کرنے کے لیے جماعت اسلامی تیار ہے۔ مگر بے سمت چلنے والی حکومت نے اس پیش کش کو مختلف بہانوں سے مناسب نہیں سمجھا۔الخدمت فاؤنڈیشن نے ملک بھر کے سرکاری اور سول ہسپتالوں میں کررونا وائرس کا مقابلہ کرنے کے لیے ضروری سامان مہیا کیا۔ جس میں ماسک ، سینی ٹاہزر اور سیفٹی کٹس شامل ہیں۔ عام لوگوں میں کثیر تعداد میں سیفٹی ماسک تقسیم کیے تھے۔ بے روزگار ہونے والے مزدورں کی بڑے پیمانے پر مالی مدد بھی کررہی ہے۔ دھیاڑی پر کام کرنے والے مزدورں کے گھروں میں روزانہ کی بنیاد پرکھانا پہنچانے کے کام میں مصروف ہیں۔ الخدمت فاؤنڈیشن کے اور دوسرے کئی ڈاکٹروں کو کررونا وائرس کے مریضوں کا علاج کرتے ہوئے کررونا وائرس میں خود مبتلا ہو کر شہید بھی ہو چکے ہیں۔ اس کی وجہ حکومت کی طرف سے ناکافی انتظامات اور ضروری حفاظتی سامان کی کمی ہے۔

جماعت اسلامی کے ڈاکٹروں کی پاکستان اور دنیا بھر میں پھیلی ہوئی تنظیم ’’پیما‘‘ اورڈاکڑوں کی دوسری تنظیموں کے درجن بھر ڈاکٹروں نے مشترکہ پریس کانفرنس اور سوال جواب کا سیشن کراچی پریس کلب میں کی۔ اس پریس کانفرنس کا مقصد عوام میں کررونا وائرس کا مقابلہ کرنے کی آگائی مہم ، سوشل میڈیا پر افواہوں کا توڑ، حکومت کی طرف سے جاری ایس او پی پر عمل درآمنداور حکومت کے ناکافی انتظامات کو عوام کے سامنے بیان کیا گیا۔ خاص کر کراچی کے ہسپتا لوں اور ڈاکڑوں ساتھ حکومت کے سلوک کا بھی احاطہ کیا گیا۔ پریس کانفرنس میں کررونا وائرس کے سامان کی سپلائی اور اعداد شمار بتانے والے ادارے پر تنقید کی۔ کہا گیا کہ یہ ادرا جو اعداد شمار عوام کے سامنے رکھ رہا ہے، وہ حقیقت پر مبنی نہیں ہوتے۔ اس ادارے کے سربراہ کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی، جہاں ملک کے کررونا مریضوں کا اڑتیس فی صد حصہ ہے دورہ کرنے کی درخواست کی گئی تو جواب دیا کہ میں تو خود کروٹین میں ہوں۔ حکومت سندھ کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا گیا، کراچی کے ہسپتالوں کو ضرور سامان مہیا نہیں کیا جا رہا۔ ڈاکڑوں کے مسائل حل کرنے میں سندھ حکومت ناکام ہو گئی ہے۔ کررونا وائرس کے متعلق روزانہ کی بنیا پر عوام کو روشناس کرانے والے حکومتی نمائندے ڈاکڑ ظفر کی کارکردگی پر بھی تنقید کی گئی۔ حکومت سے مطالبہ کیا کہ سوشل میڈیا پر عوام کا مورل ڈاؤن کرنے والی خبروں کو کنٹرول کریں۔ کہا جاتا کہ ڈاکٹر پیسوں کے لیے خود مریضوں کو مار ہے ہیں۔ کررونا وائرس کچھ نہیں دشمنوں کا پرپیگنڈا ہے وغیرہ۔ پریس کانفرنس میں بتایا گیا کہ کراچی کی ہسپتالوں میں کررونا وائرس کے علاوہ ساری بیماریوں کا علاج ڈاکٹر کر رہے ۔ ہسپتالوں میں او پی ڈیز کھلی ہیں۔ حکومت سے مطالبہ کیا گیاکہ ڈاکٹرز اور پیرا میڈیکل اسٹاف کے بھی بال بچے ہیں۔ وہ بھی اس وقت مصیبت میں مبتلا ہیں۔ان کی کہیں تنخوائیں کم کی جاتی ہیں۔ کہیں استعمال کے لیے ضروری سامان مہیا نہیں کیا جارہا۔ کررونا وائرس کے مریضوں کا علاج کرتے کرتے شہید ہونے کی صورت میں اس کے با ل بچوں کے لیے حکومت کو پیکج کا اعلان کرنا چاہیے ،جس میں انشورنس کا بھی انتظام ضروری ہے۔ عوام سے اپیل کی گئی کہ وہ حکومت اورڈاکڑوں کی طرف بتائے گئے ایس او پی کی پابندی کریں۔ کررونا وائرس کے علاج سے حفاظتی تدبیروں پر عمل کرنے سے اسی فی صد کمی واقع ہو سکتی ہے۔

صاحبو! ہم اپنے گذ شتہ کالموں میں کررونا وائرس کو اﷲ سے نافرمانی اور اﷲ کے بندوں پر ناروا مظالم کی وجہ سے اﷲ کی غضب کو دعوت دی گئی اور اﷲ نے یہ عذاب نازل کر دیا۔کیا کشمیر میں انسانوں کو کئی ماہ سے کرفیو اور لاک ڈاؤن کے عذاب سے نہیں گزارا جا رہا ۔ مظلوم کشمیری اپنے مردوں تک کوا اپنے گھروں کے صحن میں دفنانے پر مجبور کر دیے گئے۔ آ ج کی ہی خبر ہے کہ بھارت کے سفاک فوجیوں اور آر ایس ایس کے غنڈوں نے لاک ڈاؤن میں بند چودہ نہتے کشمیری نوجوانوں کو بے دردی سے شہید کردیا۔جس دن سے دہشت گرد تنظیم آر ایس ایس کا بنیادی رکن ،نریدر داس مودی بھارت کاوزیر اعظم بنا ہے، مسلمانوں کو سولی پر چھڑایا ہوا ہے۔ کبھی گائے جسے بھارت کی سپریم کورٹ کے ایک ریٹائرڈ جج نے دوسرے جانورں جیسا ایک جانور کہاہے ۔ اس کو گاؤ ماتاکہتے ہوئے انسانیت کے خلاف مہم جوئی بے انصافی ہے۔ مسلمانوں کو بھیڑ میں لاٹھیاں،مکے اور لاتیں مار مار کے شہید کر دیا جاتا ہے۔جیے شری رام اور دوسرے شرکیہ نعروں پر مجبور کر شہید کر دینا کہاں کا انصاف ہے۔ جس ملک چین میں کررونا وائرس نے جنم لیا وہاں کے مظلوم مسلمانوں کو تشدد کا نشان بنا یا گیا۔ مذہب بیزار کیمونسٹ چین کا صدر کررونا وائرس کی تباہ کاریوں سے مجبور ہر مسجد میں جا کر مسلمانوں کی دعاؤں میں شریک ہوتا ہے، کہ اﷲ کررونا وائرس سے چین کو نجات دے۔بڑے بڑے فرعون بھی بے بس ہو گئے۔ ان کے پاس اس مرض کی ویکسین تک نہیں ۔نہ وہ ابھی تک بنا سکے ہیں۔ نہ جانے یہ کررونا کا عذاب کب تک رہتا ہے۔ اس لیے حکومت کوچاہیے کہ کیس ٹو کیس دیکھ ملک کا نظام چلائے۔مرکز کچھ کہتا ہے اور صوبے کچھ کہتے ہیں۔ اگر بازار اور شاپنگ پلازے کھل سکتے ہیں تو اسکول کالج کیوں نہیں کھل سکتے ؟ ہمارے ملک کی آبادی کا ستر فی صد حصہ دھاتوں میں رہتا ہے ۔ اﷲ کا شکر ہے دھا تی آبادی کررونا وائرس کے مرض سے بچی ہوئی ہے۔ لہٰذا ایس او پی پر عمل کراتے ہوئے حکومت دھاتوں میں کاروبار کھول دینا چاہیے۔ تاکہ معیشت کا پہیا چلنا شروع ہو۔پتہ نہیں یہ کررونا وائرس کایہ مرض کب ختم ہو گا۔لہٰذا اس کے ساتھ ساتھ چلنا ہے۔اس لیے معیشت کاپہیا جاری رہنا چاہیے۔ ورنہ کررونا وائرس از خود نوٹس میں سپریم کورٹ کے ریماکس کے مطابق اگر کاروبار نہیں کھلا تو لوگ بھوک سے مر جائیں گے۔ سراج الحق کے مطالبے کہ مطابق بیرون ملک پھنسے پاکستانیوں کو جد از جلد ملک لانے کی کوششوں کو تیز تر کرناچاہیے ۔اﷲ کررونا وائرس کے عذاب سے پاکستان اور دنیا کو جلد بچائے آمین۔
 

11 Jun, 2020 Views: 168

Comments

آپ کی رائے