درس قرآن 49

(Dr Zahoor Ahmed Danish, Karachi)

سورۃ نجم 49
سورئہ نجم مکہ مکرمہ میں نازل ہوئی ہے۔( خازن، تفسیر سورۃ النجم، ۴/۱۹۰)۔اس سورت میں 3رکوع، 62آیتیں ،360 کلمے، اور1405حروف ہیں ۔( خازن، تفسیر سورۃ النجم، ۴/۱۹۰)
وجہ تسمیہ:
عربی میں ستارے کو نَجم کہتے ہیں نیزیہ ایک مخصوص ستارے کا نام بھی ہے اور اللہ تعالیٰ نے اس سورت کی پہلی آیت میں ’’نَجْم‘‘ کی قسم ارشاد فرمائی اسی مناسبت سے ا س کانام ’’سورۂ نجم‘‘ رکھا گیا۔
(1)…حضرت عبداللہ بن مسعود رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں کہ سجدہ والی سورتوں میں سب سے پہلے ’’سورۂ نجم‘‘ نازل ہوئی ،اس کی تلاوت کر کے رسولُ اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے سجدہ کیا اور جتنے لوگ بھی آپ کے پیچھے تھے (مسلمان یا کافر) ان میں سے ایک کے علاوہ سب نے سجدہ کیا، میں نے اس (سجدہ نہ کرنے والے) کو دیکھا کہ ا س نے اپنے ہاتھ میں مٹی لے کر اس پر سجدہ کر لیا اور اس (دن) کے بعد میں نے اسے دیکھا کہ وہ کفر کی حالت میں قتل ہوا پڑا تھا اور وہ امیہ بن خلف تھا۔( بخاری، کتاب التفسیر، سورۃ النجم، باب فاسجدوا للّٰہ واعبدوا، ۳/۳۳۸، الحدیث: ۴۸۶۳)
(2)…علامہ محمود آلوسی رَحْمَۃُاللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ علامہ احمد بن موسیٰ المعروف ابن مَردَوَیہ رَحْمَۃُاللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ کے حوالے سے نقل کرتے ہیں ۔ حضرت عبداللہ بن مسعود رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ نے فرمایا’’سورۂ نجم،یہ وہ پہلی سورت ہے جس کا رسولِ یم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے اعلان فرمایا اور حرم شریف میں مشرکین کے سامنے پڑھی۔( روح المعانی، سورۃ والنجم، ۱۴/۶۳)
سورۂ نَجم کے مضامین:
اس سورت کا مرکزی مضمون یہ ہے کہ اس میں اللہ تعالیٰ کی وحدانیَّت ،نبی اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی عظمت اور قیامت کے دن مخلوق کو دوبارہ زندہ کئے جانے کے بارے میں بیان کیاگیا ہے ،نیز اس سورت میں یہ مضامین بیان کئے گئے ہیں ۔
(1)…اس سورت کی ابتداء میں اللہ تعالیٰ نے قَسم ارشاد فرما کر اپنے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی عظمت و شان بیان فرمائی ۔
(2)…واقعہ ٔمعراج کا کچھ حصہ بیان کیا گیااور معراج کو جھٹلانے والے مشرکین کا رد فرمایا گیا۔
(3)… ان بتوں کا ذکر کیا گیا جن کی مشرکین پوجا کرتے تھے اور ان کے معبود ہونے کواور ان کی شفاعت سے متعلق کفار کے نظریّے کا رد کیا گیا، نیز جوکفار فرشتوں کے نام عورتوں جیسے رکھتے تھے ان کا رد اور کفار کے علم کی حد بیان فرمائی گئی۔
(4)…کبیرہ گناہوں سے بچنے والوں کی جزاء بیان کی گئی اور ریا کاری کی مذمت فرمائی گئی۔
(5)… اسلام قبول کر کے ا س سے مُنْحَرِف ہونے والے ایک کافر کی مذمت فرمائی گئی اوراس کے بعد اللہ تعالیٰ نے وہ مضمون بیان فرمایا جو حضرت موسیٰ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی کتاب اور حضرت ابراہیم عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے صحیفوں میں ذکر فرمایا گیا تھا کہ کوئی دوسرے کے گناہ پر پکڑا نہیں جائے گا اور آدمی اپنی ہی نیکیوں سے فائدہ پاتا ہے۔
(6)…قیامت کے دن اعمال دیکھے جانے اور ان کے مطابق جزاملنے کا ذکر کیا گیا اور یہ بیان فرمایا گیا کہ اللہ تعالیٰ ہی زندگی اورموت دیتا ہے اور وہی مرنے کے بعد لوگوں کو زندہ کرے گا۔
(7)…اس سورت کے آخر میں قومِ عاد، قومِ ثمود ،حضرت نوح عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی قوم اور حضرت لوط عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی قوم پر آنے والے عذابات کا ذکر کیا گیا تاکہ ان کا انجام سن کر کفارِ مکہ عبرت حاصل کریں اور نبی اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو جھٹلانے سے باز آ جائیں ۔
یارب !ہمیں کلام مجید کے فہم سے بہر مند فرما۔ہمیں اخلاص کی دولت عطافرما۔آمین

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 139 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: DR ZAHOOR AHMED DANISH

Read More Articles by DR ZAHOOR AHMED DANISH: 313 Articles with 263654 views »
i am scholar.serve the humainbeing... View More

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ