مسجد قرطبہ مسلمانوں کے عہد رفتہ کی یاد

(Altaf satti, Bristol United kingdom)

سپین میں مسلمانوں کی تاریخ سات سو گیارہ سے شروع ہوئی اور چودہ سو بانوے تک رہی اسی دوران مسلمان حکمرانوں نے کئ تاریخی عمارات کو تعمیر کیا جو ان کے فن تعمیر کا ایک منہ بولتا ثبوت تھا مسلمانوں نے اپنے دور حکمرانی میں جو عمارات اور پل تعمیر کیے وہ ان کی عہد کی یاد کو تازہ کرتے ہیں ان میں بہت ساری عمارات میں دو قابل ذکر ہیں جن میں ایک غرناطہ میں الحمرا ہال اور دوسری اندلس میں مسجد قرطبہ بھی شامل ہے مسلمانوں کا دور حکمرانی تقریبا آٹھ سو سال پر محیط رہا اور اس میں سب سے بڑی اہم بات مسلمانوں کا عیسائیوں اور یہودیوں کے ساتھ اکٹھے رہنا تھا عیسائی اور یہودی مسلمانوں کے طرز حکمرانی سے قدر خوش تھے کیونکہ ان کو پہلےحکمرانوں سے بہتر آزادی تھی مگر جوں جوں وقت گزرتا گیا مسلمانوں حکمرانوں میں تبدیلی آنا شروع ہو گئی ہے مسلمانوں حکمران جابر بن گئے ان کے اندر انصاف ختم ہوگیا اور اس طرح معاشرے کے اندر ایک بغاوت کی فضا پیدا ہونے لگی
دوسری طرف مختلف علاقوں میں مسلمان قبیلوں کے اندر بھی اختلافات کھل کر سامنے آنے لگے اور ان کی دشمنی عیاں ہونے لگی شمالی اسپین کے عیسائ ان چیزوں کا بہتر طریقے سے فائدہ اٹھانے لگے اور آہستہ آہستہ وہ مسلمانوں کو شکست دینے لگے
مسلمانوں کی شکست کی بڑی وجہ یہ بنی کہ وہاں کے لوکل عیسائی اور یہودی مسلمانوں سے تنگ آنا شروع ہو گئے اس کی وجہ معاشرے میں انصاف کا ناپید ہونا اور ظلم اور جبر
کا پروان چڑھنا تھا اس طرح یہی عیسائی اور یہودی مسلمان حکمرانوں کے باغیوں سے مل گئے اور آہستہ آہستہ شمالی سپین کے عیسائ قبیلوں کے ساتھ مل کر مسلمانوں پر حملہ آور ہونے لگے اور اس طرح کرتے کرتے مسلمان اپنے علاقوں کو کھونا شروع ہوگئےاور یوں پندرہویں صدی کے اختتام تک اسپین پر مکمل عیسائیوں کا کنٹرول ہو چکا تھا
مسلمانوں کے زوال کی اہم وجوہات میں ایک وجہ یہ بھی تھی کہ مسلمان نانصافی کرنا شروع ہوگئے تھے اور اس کے ساتھ غیر مسلموں کے ساتھ تشدد اور غلامی کی اس روش کو قائم کیے ھوئے تھے جس کی وجہ سے عیسائی اور یہودی مسلمانوں سے متنفر ہو چکے تھے اور ساتھ ھی مسلمانوں کے اندر بھی اختلافات کی جڑیں بہت مضبوط ہوچکی تھیں جس کی وجہ سے مسلمان آپس میں دست و گریبان ہوگئے
مسلمانوں کے زوال کی جو وجہ ہندوستان میں بھی سامنے آئ وہ بھی یہی تھی کہ جب بھی مسلمانوں نے دین اسلام سے منہ موڑا انہوں نے شکست ہی کھائی اور ایسی شکست کھائی کہ ان کی حالت غلاموں جیسی ہوگی اور وہی حکمران غلامی کی زندگی بسر کرنے پر مجبور ہوگئے مسجد قرطبہ بہت ہی بڑی اور خوبصورت عمارت ہے اور اس عمارت کو اب عیساہیوں نے کلیسا میں تبدیل کر دیا ہے اور یہاں پر مسلمانوں کا نام و نشان نہیں مسلمانوں کو اس مسجد میں اب تو نماز تک پڑھنے کی بھی اجازت نہیں دی گئی ہے مسجد قرطبہ دیکھنے میں تو ایک عمارت ہے مگر یہ مسلمانوں کی ناکامی اور ان کی اسلام سے روگردانی کا ایک بہت بڑا جیتا جاگتا ثبوت بھی ہے
اللہ نے اپنی پاک کتاب قرآن پاک میں بھی مسلمانوں کو واضح کیا ہے کہ جب تم اللہ کی رسی کو مضبوطی سے تھامے رکھو گے تو تم دنیا کی ایک مضبوط قوم بنے رہو گے آج مسجد قرطبہ میں عیسائی عبادت کرتے ہیں مگر یہ عمارت جب تک دنیا میں قائم رہے گی یہ مسلمانوں کے منہ پر ایک طمانچہ کی صورت میں موجود رھے گی
ہم اللہ سے ہر وقت گلہ شکوہ کرتے رہتے ہیں کہ یا اللہ ہم دنیا میں اتنے کمزور اور ناتواں کیوں ہیں مگر کیا ہم نے اپنی ناکامیوں اور اپنی کمزوریوں پر نظر ڈالی ھے
اگر آج بھی ہم نے دین اسلام کی راستے پر چل کے اللہ کی رسی کو مضبوطی سے نہ تھاما تو یہ کوئی شک نہیں کہ ہمارا حال بھی اسپین کے مسلمانوں کی طرح ہی ہوگا
اکیسویں صدی میں بھی ہم بری حالٹ میں کھڑے ھیں اور ریزہ ریزہ ہیں اور اگر ہمارا یہی حال رہا تو ہم اسی طرح آگے بھی ریزہ ریزہ ہی رہیں گے اور غیرمسلموں کے رحم و کرم پر زندہ رھیں گے
مسجد قرطبہ کی عمارت جب تک قائم رہے گی یہ مسلمانوں کی ناکامی کا ایک منہ بولتا ثبوت رہے گی اور مسلمانوں کو چاہیے کہ اس عمارت سے سبق سیکھے بہترین حکمرانی کا راز معاشرے کے اندر انصاف کی فوری فراہمی اور حکمرانوں کی رحمدلی کا رویہ ہے جب حکمران ایسے رہے انہوں نے دنیا پر حکمرانی کی اور جب حکمران نانصاف اور بے رحم ہو گئے تو ان کا شیرازہ بکھر گیا اور انکو شکست فاش ہوئی
بطور مسلمان اگر ہم نے اپنے ضمیر کو جھنجھوڑنا ہے تو ہمیں مسجد قرطبہ کو ہمیشہ یاد رکھنا ہوگا اور اگر ہم اس کو وزٹ کر سکیں اور اس کو جا کر دیکھیں تو ہمیں مسلمانوں کے عہد رفتہ کی یاد بھی تازہ ہوگی اور ان کے تمام فن تعمیر کی شاہکار کو دیکھنا بھی ہو گا کہ کتنے عظیم لوگ تھے جنہوں نے یہ مسجد تعمیر کی اور اپنی محنت لگن اور ایمان کی طاقت سے اس مسجد کو تعمیر کیا جو کہ امت مسلماہ کی فن شاھکاری ان کی اہلیت ذہانت اور محنت کا ایک منہ بولتا ثبوت ھے

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Altaf satti

Read More Articles by Altaf satti: 3 Articles with 1102 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Jul, 2020 Views: 291

Comments

آپ کی رائے