تجھے خبر ہونے تک

(گل صحرائی, Karachi)

چلے گئے تیرے دنیا سے
اب راہ نہ تکنا کہ کفن اوڑھ کر سو گئے
نہیں ھے حق سوائے ماں باپ کہ رولے کوئی اور جنازے پہ میرے
زندگی میں محبت نہ دے سکے تو اب یہ آنسوں بھی رکھ لے کام پھر تجھے کبھی آئینگے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جہاں بھیڑیے ہو وہاں خون کی ندیاں ہوتی ہیں
جہاں احساس نہ ہو وہاں درد بھی فراموش ہوتی ہیں
جہاں سورج کی کرن نہ ہو وہاں اندھیری رات ہی ہوتی ہیں
جہاں زمین پہ ظلم ہو وہاں آسمان میں پرندے بھی اڑنا بھول جاتی ہیں
جہاں غیرت ہو وہاں خوشیاں نہیں ماتم منائی جاتی ہیں جہاں زندگی بس نام کی ہو وہاں ہر روز موت کی سوگ منائی جاتی ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیری حسرتوں کے لیے خود کو قربان کروں
نہیں رکھتی میں یہ لفظ اپنی کتابوں میں
میں حق رکھتی ہوں تو بات بھی اسی کی کرتی ہوں
میں اگر بری ٹھہر جاوں زمانے کی نظر میں تو بری ہی سہی
تو اپنی دستور نہیں بدلتی کسی کے لیے تو یہ توقع کسی اور سے کیوں رکھتے ہوں

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: گل صحرائی

Read More Articles by گل صحرائی: 10 Articles with 3259 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
27 Jul, 2020 Views: 291

Comments

آپ کی رائے