ڈاکٹر نے بتایا کہ وہ کبھی ماں نہیں بن سکتی، اولاد کی کمی دور کرنے کے لیے اسٹیج اداکارہ کا ایسا قدم جس نے اسے جیل پہنچا دیا، کوئی ایسا بھی کرسکتا ہے؟

 
عورت کی فطرت میں ماں بننے کی خواہش اس کی پیدائش کے ساتھ ہی تخلیق ہوجاتی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ بغیر اولاد کے عورت خود کو ادھورا محسوس کرتی ہے اور اس کی یہی خواہش ہوتی ہے کہ کوئی تو ہو جو اس کو ماں کہہ کر پکارے اور اس کے آنچل میں چھپ جائے-
 
اس خواہش کی تکمیل کے لیے وہ بڑی سے بڑی قربانی دینے کے لیے بھی تیار ہو جاتی ہے اور جب اس کو یہ خبر ملتی ہے کہ اس کی کوکھ اس قابل نہیں ہے جس میں کوئی بچہ پل سکے یا وہ ماں بننے کی صلاحیت سے محروم ہے تو وہ اپنی اس کمی کو دوسروں کے بچوں سے پورا کرنے کے لیے بے تاب ہو جاتی ہے-
 
جس طرح ہر خواہش کو پورا کرنے کے دو راستے ہوتے ہیں ایک راستہ جائز ہوتا ہے جو مشکل ضرور ہوتا ہے مگر اس میں دل کا سکون ہوتا ہے اور دوسرا راستہ نا جائز ہوتا ہے جو فوری ضرور ہوتا ہے مگر اس کے نتائج انسان کو بند گلی تک لے جاتے ہیں-
 
ایسا ہی ایک واقعہ گزشتہ دنوں پیش آیا جب پولیس نے ملتان سے تعلق رکھنے والی معروف اسٹیج اداکارہ آئمہ خان کو ان کے شوہر اور دیور کے ساتھ حراست میں لے لیا ان لوگوں پر دہلی گیٹ ملتان سے ایک بچے کو اغوا کرنے کا الزام عائد کیا گیا ہے-
 
 
واقعہ کی تفصیلات
واقعہ کی تفصیلات کے مطابق میاں گل نامی ایک شخص نے رپورٹ درج کروائی کہ ان کا ڈھائی سالہ بیٹے نفیب اللہ فاروق ٹاؤن دہلی گیٹ ملتان سے لاپتہ ہو گیا ہے- ان کے مطابق ان کا بیٹا قریبی دکان پر سامان لینے گیا تھا جہاں سے دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے اس بچے کو اغوا کر لیا ہے جس کے بعد پولیس نے تحقیقات کا آغاز کر دیا-
 
آئمہ خان کے ملوث ہونے کے ثبوت
اس حوالے سے پولیس نے جب تحقیقات کیں تو سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے وہ اس موٹر سائيکل کے مالکان تک پہنچ گئے جو کہ آئمہ خان تک لے کر چلے گئے اور پولیس نے جب ان کے گھر پر چھاپہ مارا تو اس کے نتیجے میں نہ صرف نقیب اللہ کو بازیاب کروا لیا بلکہ ان کو ان کے شوہر اور دیور سمیت گرفتار بھی کر لیا-
 
بچے کے اغوا کی وجوہات
تفصیلات کے مطابق آئمہ خان کی شادی کو چار سال کا عرصہ گزر چکا تھا اور وہ اس دوران ہر ممکن کوشش کے باوجود ماں نہیں بن سکی تھیں- ان کو ان کے ڈاکٹرز نے بھی بتا دیا تھا کہ وہ بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت سے محروم ہیں اور ابھی ماں نہیں بن سکیں گی-
 
 
مگر اپنی ماں بننے کی اس خواہش نے ان کو بہت پریشان کر دیا تھا اس وجہ سے انہوں نے اپنے دیور کو پانچ لاکھ روپے دینے کی لالچ دی تاکہ وہ ان کو ایک بچہ لا کر دے سکے جس کو پال کر وہ اپنی ماں بننے کی خواہش کو پورا کر سکیں-
 
ان کے شوہر اور دیور نے ان کی خواہش اور پیسے کی لالچ میں مجبور ہو کر نفیب اللہ کا اغوا کیا تاکہ آئمہ خان کی ماں بننے کی خواہش کو پورا کر سکیں مگر پولیس کی فعال کارکردگی کے سبب ان کی یہ خواہش ادھوری ہی رہ گئی اور وہ تینوں جیل کی کال کوٹھری تک جا پہنچے-
 
سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا کوئی خاتون اولاد کی خواہش کو پورا کرنے کے لیے اس حد تک بھی جاسکتی ہے- یقیناً کسی ماں کی گود اجاڑ کر یہ ممکن نہیں تھا کہ اس خاتون کی جھولی خوشیوں سے بھر جاتی- لیکن سوچنے کی بات یہ بھی اب معاشرہ کس جانب جارہا ہے کہ اپنی خواہش کو پورا کرنے کے لیے ہر جائر و ناجائز راستہ اختیار کرنے سے دریغ نہیں کیا جارہا-
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
10 Jan, 2022 Views: 31823

Comments

آپ کی رائے