ملتان: برصغیر کا قدیم ترین شہر

(Prof Asghar Karim Khan, Karachi)
اس کے نام کی نسبت سے یہ روایت موجود ہے کہ ایک قوم جس کا نام مالی تھا یہاں آکر آباد ہوئی۔ سنسکرت میں آباد ہونے کو ـ ’استھان‘ کہتے ہیں۔ یوں اس علاقے کا نام ’ مالی استھان‘ پڑ گیا۔ جو وقت کے ساتھ ساتھ بدل کر ’مالیتان‘ اور پھر ’ ملتان‘ بن گیا۔ یہاں کی اکثریت سرائیکی زبان بولنے والوں کی ہے۔

ملتان ، دریائے چناب کے کنارے ، پاکستان کے تقریباً وسط میں واقع، آبادی کے لحاظ سے پاکستان کا پانچواں بڑا شہر ہے۔ کراچی سے اس کا فاصلہ 966 کلومیٹر ہے۔ یہ ٹرین، روڈ اور ہوائی جہاز کے ذریعے پورے ملک سے منسلک ہے۔ ملتان کا شمار دنیا کی قدیم ترین شہروں میں ہوتا ہے، جو مسلسل آباد چلا آرہا ہے۔
 


بہت سے شہر آباد ہوئے مگر گردش ایّام کا شکار ہوکر صفحہ ہستی سے مٹ گئے۔مگر شہر ملتان کل بھی آباد تھا اور آج بھی آباد ہے۔ 6000 سال پہلے تجارتی قافلے ایران سے ملتان آیا کرتے تھے۔

اس کے نام کی نسبت سے یہ روایت موجود ہے کہ ایک قوم جس کا نام مالی تھا یہاں آکر آباد ہوئی۔ سنسکرت میں آباد ہونے کو ـ ’استھان‘ کہتے ہیں۔ یوں اس علاقے کا نام ’ مالی استھان‘ پڑ گیا۔ جو وقت کے ساتھ ساتھ بدل کر ’مالیتان‘ اور پھر ’ ملتان‘ بن گیا۔ یہاں کی اکثریت سرائیکی زبان بولنے والوں کی ہے۔

ملتان کے بارے میں ایک فارسی شعر ہے :
چہار چیز است تحفہ ملتان
گرد و گرما گد ا و گورستان
 


گرد کا مطلب یہ ہے کہ یہاں گرد کا طوفان بہت آتے ہیں، گرما کا مطلب ہے کہ یہاں گرمی بہت پڑتی ہے، گدا کا مطلب ہے کہ یہاں اﷲ والے لوگ بہت رہتے ہیں اور گورستان کا مطلب ہے یہاں قبرستان اور مزارات بہت ہیں۔

ملتان کو اولیاء کا شہر بھی کہتے ہیں، کیونکہ یہاں بڑی تعداد میں اولیاء کرام مختلف ادوار میں تشریف لائے اور ان میں سے کئی کے مزارات بھی یہیں ہیں۔ان بزرگوں کی محنت سے ہزاروں لوگوں نے فیض پایا اور بڑی تعداد میں غیر مسلم دائرہ اسلام میں داخل ہوئے۔ مشہور صوفی بزرگ حضرت بابا فرید گنج شکر بھی یہیں پیدا ہوئے۔
 


جن بزرگ ہستیوں کے مزارات یہاں موجود ہیں، ان میں ، شیخ بہا ء الدین ذکریا ملتانی (1170-1267)، شاہ رکن عالم (1251-1335) ، شاہ شمش تبریز ,(1165-1276)حافظ محمد جمال ملتانی (1747-1811)، شاہ یوسف گردیزی) (1088اور سیّد عطا اﷲ شاہ بخاری ، قابل ذکر ہیں۔

ملتان اپنی تاریخی مساجد کی وجہ سے بھی شہرت رکھتا ہے۔ کچھ مساجد کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ 1000 سال پرانی ہیں۔ ملتان کی پہلی مسجد محّمد بن قاسم نے تعمیر کروائی تھی۔ اس مسجد کے باقیات 1954 تک موجود تھے۔ ملتان کی جامعہ مسجد عید گاہ 1735عیسوی میں مغل گورنر نے تعمیر کروائی تھی۔ اس کے علاوہ قدیم مساجد میں ، مسجد ساوی، علی محمّد خان مسجد اور پھول ہتاں والی مسجد قابل ذکر ہیں۔
 


ملتان میں ایک میوزیم بھی واقع ہے جو قدیم گھنٹہ گھر کو تبدیل کر کے بنایا گیا ہے۔ یہاں ویلی بھولپور کے زیر استعمال قدیم سکّے، میڈل ڈاک ٹکٹ کے علاوہ لکڑی اور پتھّر پر کی گئی کشیدہ کاری اونٹ کی کھال سے بنائے گئے دلکش لیمپ وغیرہ قابل دید ہیں۔

قلعہ ملتان ایک اندازے کے مطابق 1000 قبل مسیح میں تعمیر ہوا۔ جسے برطانوی افواج نے تباہ کردیا تھا۔ اس کے 4 دروازے تھے جس میں سے صرف ایک ـ ’قاسم گیٹ ‘ ہی سلامت بچا ہے۔اس زمانے میں دریا راوی قلعے کے ساتھ بہتا تھا۔ اور اسے بندرگاہ کی حیثیت حاصل تھی۔ کشتیوں کے ذریعے ایران ،عراق، دلّی اور دکّن تک تجارت ہوتی تھی۔اس طرح ملتان کو ایک بڑے تجارتی، علمی اور مذہبی مرکز کی حیثیت حاصل تھی۔
 


ملتان کا سوہن حلو ہ پاکستان ہی نہیں بلکہ دنیا بھر میں مشہور ہے، بیرون ملک سے جب کوئی ملتان آتا ہے تو لوگ خاص طور پر فرمائش کر کے سوہن حلوہ منگواتے ہیں۔اس کے علاوہ ملتان کے کھسّے بھی عوام الناّس میں بہت مقبول ہیں۔

ملتان کی خاص فصلوں میں گندم، کپاس اور گنّا شامل ہیں۔ جبکہ پھلوں میں انار، موسمی، کینوں اور خصوصاً آم کی دنیا بھر میں مانگ ہے۔

ملتان کا موسم شدّت لئے ہوئے ہے۔ گرمیوں میں سخت گرم اور سردیوں میں کافی سردی پڑتی ہے۔ ملتان میں ریکارڈ کیا جانے والا گرم ترین دن 54 ڈگری سنٹی گریڈ اور سرد ترین -1 ڈگری سنٹی گریڈ ہے۔ یہاں مٹّی کے طوفان آنا معمول ہے۔

یقیناً ملتان کو ہماری تاریخ، معیشت، سیاست اور ثقافت میں مرکزی حیثیت حاصل ہے۔

Reviews & Comments

Bohat hi dilchasp r informative article ha
By: Faisal, Karachi on Jan, 24 2016
Reply Reply
1 Like
بہت بہترین اور دلچسب article ہے. Thank u for writing such well written and informative article.Such a prehistoric place but history is not commonly known even to the residents. Well DOne!
By: Abdullah Iman, Multan on Nov, 17 2015
Reply Reply
1 Like
سابقہ تحاریر کی طرح ایک اور خوبصورت و معلوماتی تحریر پر مبارک باد اللہ کرے زور قلم اور زیادہ ۔۔۔۔۔ آمین
By: پروفیسر سید حسن عسکری, karachi on Nov, 16 2015
Reply Reply
1 Like
Really v interesting and informative for the people of multan who live here but don't have enough information about Multan
By: Shaheen Karim, multan on Nov, 16 2015
Reply Reply
1 Like
BOAHT HI ACHHA ARTICLE LIKHA HAI MUKAMAL RESEARCH KE BAD CHASKA AA GIA KIA BAAT HAI MULTAN SOHNE SHEHAR KI................MAIN TE SOHN HAVA KHA SA.YUM YUM YUM.
By: azeem, lahore on Nov, 16 2015
Reply Reply
2 Like
Good narration and presentation and informative. Well-done.
By: Sana Ullah, Karachi on Nov, 16 2015
Reply Reply
1 Like
شکرہہ ہماری ویب
By: Rana Usman, Gujranwala on Nov, 15 2015
Reply Reply
1 Like
Language:    
Multan, in the Punjab province of Pakistan, is one of the oldest cities in South Asia, the exact age has yet to be determined. Its modern name comes from its old Sanskrit name Mūlasthān. It has seen a lot of warfare because of its location on a major invasion route between South Asia and Central Asia. It is famous for its Sufi shrines.