تنزل پذیر معاشرے کی قندیل

(Shahzad Hussain Bhatti, Attock)
ہم بطور معاشرہ تنزلی کی جانب گامزن ہیں۔ یہ میں نہیں کہہ رہا ہماری عادات و اطوار اس کی نشاندہی کر رہی ہیں۔ معاشرے کی تشکیل ہمیشہ اجتماعی رویوں سے ہوتی ہے اور پچھلے کچھ دنوں میں وقوع پذیر ہونے والے واقعات سے ہمارے مجموعی رویوں کی جھلک یہ دکھانے میں بالکل کوتاہی نہیں برت رہی کہ ہم تنزلی کی کس سطح کو چُھورہے ہیں۔ اور یہ تنزلی ہماری ترقی میں کس طرح روڑے اٹکائے ہوئے ہے ۔

ہم لکیر کے فقیر بننے کو نہ صرف ترجیح دیتے ہیں بلکہ فخریہ اس کا اظہار بھی کرتے ہیں۔ کچھ دن قبل جب امجد فرید صابری کو ہمیشہ کی طرح نامعلوم حملہ آوروں نے نشانہ بنایا تو یہ خبر جنگل میں آگ کی طرح پھیلنا شروع ہو گئی اور بہت جلد یہ ایک عالمی سانحے کا روپ دھار گئی ۔ نجی ٹی وی پر پڑھا گیا ان کا نعتیہ کلام پوری دنیا میں دیکھے اور سنے جانے والے ویڈیو خاکوں میں سب سے اُوپر گردش کرنے لگا پوری دنیا کا منظر نامہ امجد صابری کے بہیمانہ طور پر نشانہ بنائے جانے کو لعن طعن کر رہا تھا ۔ پوری دنیا میں جن جن لوگوں نے امجد صابری کے ساتھ کام کیا تھا وہ ان کی تعریفوں میں رطب اللسان تھے۔ مغربی و ہندوستانی میڈیا ان کے فن کو بڑھا چڑھا کر پیش کر رہے تھے۔ لیکن ہم اپنی ڈیڈھ اینٹ کی مسجد بنائے اس بحث میں الجھے ہوئے تھے کہ انہیں ہلاک کہا جائے یا شہید۔ ہم یہ فیصلہ نہیں کر پا رہے تھے کہ امجد صابری کی ہلاکت میں شہادت کا پہلو نمایا ں ہے یا قتل ہونے کا۔ جب پوری دنیا ان کو خراج عقیدت پیش کر رہی تھی تو ہم ان کے لیے جنت یا دوزخ میں جانے کے حوالے سے اپنی ناقص عقل کے ساتھ بحث و مباحثے میں مصروف تھے۔ ہماری اس بحث سے بالاتر ہو کر دنیا نے دیکھا کہ امجد صابری کا جنازہ پاکستان کی تاریخ کے بڑے جنازوں میں سے ایک تھا۔ راقم بھی ایک عام قاری کی طرح ہی اس بحث سے بالاتر ہو کر کہ وہ جنتی تھا یا دوزخی بس یہ دیکھ رہا تھا کہ لوگ اس کی لاش کو اپنی اپنی ایمبولینس میں ڈالنے کے لیے لڑ رہے تھے۔ کیوں کہ دنیا نے دیکھنا تھا کہ کس ادارے کی ایمبولینس میں اس کا جسد خاکی رکھا گیا ہے۔ اس کے جنازے میں علماء، فنکار، کھلاڑی، سیاستدان سب ہی سیلفیاں لے لے کر دنیا کو یہ باور کروا رہے تھے کہ ہاں ہم نے امجد کا جنازہ پڑھا ہے۔ اور اتنے دن گزر جانے کے باوجود بھی امجد صابری ایک مقبول عنوانات میں ایک اپنی مقبولیت برقرار رکھے ہوئے ہے۔

کچھ ایسا ہی دوبارہ اس وقت دیکھنے میں آیا جب ایدھی صاحب داعیء ملک عدم ہوئے۔ پوری دنیا نے ان کو خراج عقیدت پیش کیا۔ ان کی خدمات کو سراہا جانے لگا۔ ان کے ہاتھوں کے لگائے گئے پودے کا ساتھ دینے کا عہد کیا جانے لگا۔ عالمی میڈیا میں ایدھی صاحب کی وفات کی خبر کو مرکزی سرخی میں جگہ دی گئی۔ کہیں کسی عالمی اخبار نے انہیں رحمت کا فرشتہ لکھا تو کسی نے ان کو پاکستانی فادر ٹریسا کا خطاب دیا۔ غرض یہ کہ ہر کوئی ان کی خدمات اور ان کی زندگی کو مشعل راہ بنا کر پیش کر رہا تھا۔ اور ہم پاکستانی۔۔۔۔ ان کے ہاتھوں کو باندھنے اور کھولنے پہ نوحہ گری کر رہے تھے۔ ہم خدمت کے اس عظیم مینار کو کسی نہ کسی مخصوص فرقے سے وابستگی ثابت کرنے پہ تلے ہوئے تھے۔ ہم ان کی وفات کے بعد بھی ان کو اپنے فائدے کے لیے استعمال کرنا چاہ رہے تھے۔ کوئی ان کو کسی ایک لقب سے پکارنے پہ انہیں بعد از مرگ بھی تنقید کا نشانہ بنا رہا تھا تو کوئی انہیں حرامی بچوں کی نگہداشت پہ طعنوں سے نواز رہا تھا۔ سمجھ نہیں آتی جب حرامی بچے ہماری حرامکاریوں سے جنم لیتے ہیں تب معاشرہ نہیں چیختا لیکن جب کوئی ایدھی جیسا ان کو تحفظ دے کر معاشرے کا کار آمد شہری بنا دیتا ہے تو تب اسے تنقید کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔ ہم اس بحث میں الجھ گئے کہ ایدھی ملحد ہے یا جنتی ۔ ہم نے یہ سوچنا گوارا نہیں کیا کہ وہ بس ایدھی تھا۔ وہ اپنے حصے کا کام کر گیا۔ چاہے اچھا کیا یا برا۔۔۔ ہم نے کیا کیا؟

چھ ماہ پہلے تک کون جانتا تھا کہ فوزیہ عظیم عرف قندیل بلوچ کون ہے ۔سوشل میڈیا پراپنی بولڈ وڈیوزسے شہرت حاصل کرنے اور ملکی و غیرملکی میڈیا کی خبروں کی زینت بننے والی ماڈل کے قتل کے بعد بھی مختلف آراء کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ کوئی اُسے پاکستانی مردوں اور مولویوں کے لیے خطرہ تھی ،قرار دے رہا ہے اور کوئی اُسے غیرت کے نام پر قتل قرار دے رہا ہے۔ بعض لوگ اُس کے قتل کومولویوں اور مفتیوں کے گلے میں ڈال رہے ہیں۔ چینلز کی ریٹنگ کے لیے میڈیا کو آئے روز چٹخارے دار خبروں کی ضرورت تھی اور قندیل کو شہرت کی۔ شاید یہی وجہ تھی کہ دونوں کی دکانداری چل رہی تھی۔اس ساری بحث میں جانے سے پہلے یہ سوچنا ضروری ہے کہ اُسے فوزی سے قندیل بنانے والا کون تھا؟ کیا یہی تنزل پذیر معاشرہ اس کا ذمہ دار نہیں جسکی بھینٹ وہ چڑھ گئی؟ کم عمری میں پڑھنے کی شوقین لڑکی کو زبردستی شادی کے بندھن اور اسکے بعد جاہل شوہر اور دیوروں کی مار پیٹ اور ماں باپ کی بے رُخی سے مایوس ہوکر دارالامان سے بس ہوسٹس، جنوبی افریقہ، دبئی اور نہ جانے کہاں کہاں کی خاک اس کے نصیب میں تھی او ر پیٹ کے ایندھن کے لیے اسے نہ جانے کتنے پاپڑ بیلنے پڑے ہونگے۔ سوال یہ ہے کہ تب کہاں تھی ان غیرت مندوں کی غیرت جب وہ اُسکی حرام کی کمائی استعمال میں لانے کے لیے بے قرارہتے تھے۔ افسوس !اس ملک میں ایک اور آواز تنگ نظری اوغیرت کے نام کی بھینٹ چڑھ گئی لیکن بے حس معاشرہ ہمدردی کے چند لفظ کہنے کوبھی تیار نہیں۔ اس کا کردار چاہے جیسا بھی تھا آخروہ انسان بھی تو تھی۔بے شک مردوں کے نہیں جنگلی جانوروں کے اس معاشرے نے اسے تماشا بنایا، حدیہ کہ پورا رمضان بھی یہ تماشا چلتا رہا ، پھر انہیں میں سے ایک نے اس تماشے کا ریموٹ کنٹرول آف کر دیا۔میڈیا کو افسوس تو ہوگا کہ نفسیاتی مریضوں کی تفریح طبع کی ایک بنی بنائی اور گھڑی گھڑائی خبر کم پڑ گئی۔ اب کوئی نئی قندیل، وینا، میترا یا ایان علی تلاش کرو تاکہ چینلز کی رینٹنگ بڑھائی جا سکے۔

ہم بطور قوم احسان فراموش ہیں۔ امجد صابری نے جب آقا ﷺ کی ثنا خوانی پوری دنیا میں کی تو اس نے ہرگز یہ نہیں کہا کہ وہ کوئی آسمان سے ٹپکا ہوا ہے کہ جس نے نعت خوانی و نعت گوئی شروع کر دی ۔ بلکہ اس کے نام کے ساتھ پاکستانی کا لاحقہ جڑا رہا۔ اور جب وہ آنکھیں موندھ گیا تو ہمیں اس فکر نے گھیر لیا کہ اسے شہید کہیں یا ہلاک۔ ایدھی پوری زندگی پوری دنیا میں پاکستان کی پہچان بنا رہا ۔ جہاں جاتا یہ وہ ایدھی ہے جو پاکستانی ہے۔ جہاں پوری دنیا میں سب سے بڑے نجی ایمبولینس کے نظام کی بات آتی پاکستان کا ذکر آتا ساتھ ایدھی کا نام آتا ۔ تو ایدھی نے کس کا نام روشن کیا ۔ صرف پاکستان کا۔ اور آج اس پاکستان نے اس کو کیا صلہ دیا؟ جس پاکستان کی گلیوں میں وہ لاوارث لاشیں اٹھاتا رہا۔ اسی پاکستان کے باسی اس کے جنازے کے لیے ایک نیشنل سٹیڈیم تک نہیں بھر پائے۔ جس معاشرے کے گناہ وہ گلیوں اور کوڑے کے ڈھیر سے اٹھا کر انہیں معاشرے میں اپنے نام سے روشناس کرواتا رہا۔ اس پاکستان کے لوگوں نے ہی اس کے لیے جنت و دوزخ کے فیصلے سنانا شروع کر دیئے۔ یہی کچھ اب ہم قندیل کی تربت بنائے جانے کے بعد کرینگے-

کسی بھی معاشرے کی تنزلی کی یہ علامات ہوتی ہیں کہ وہ اپنے قومی تشخص کو بھولنا شروع کر دیتے ہیں۔ اور یہی ہم پاکستان کر رہے ہیں۔ کسی معاشرے کی تنزلی کی علامات میں سے ہی ہوتا ہے کہ وہ اپنے قومی اہمیت کے لوگوں کو لعن طعن کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ اور ہم مجموعی طور پر ایسا ہی کر رہے ہیں۔ تنزلی کی علامت یہی ہوتی ہے کہ لوگوں کی زندگی میں ان کی شان میں قلابے ملاتے ہیں اور بعد از مرگ ان کی برائیاں گنوانا شروع کر دیتے ہیں۔ اور ہم یہی کر رہے ہیں۔

معاشرے ہمیشہ اس وقت ترقی کرتے ہیں جب وہ اپنے اجتماعی رویوں میں تبدیلی لاتے ہیں اور برداشت پیدا کرتے ہیں۔ ورنہ وہ تاریخ کے گمنام گوشوں میں گم ہو جاتے ہیں۔ ہمارے اجتماعی رویے بھی اس وقت ہم کو تنزلی کی جانب کھینچ رہے ہیں۔ اگر ہم نے ان میں تبدیلی لانا گوارا نہیں کی تو وہ وقت دور نہیں ہو گا جب تاریخ ہمارے نام سے بھی واقف نہیں ہوگی۔معاشرے تاریخ میں تب ہی نام و جگہ پاتے ہیں جب وہ مثبت تبدیلیوں کو اپنی شناخت بناتے ہیں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shahzad Hussain Bhatti

Read More Articles by Shahzad Hussain Bhatti: 176 Articles with 81785 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
18 Jul, 2016 Views: 874

Comments

آپ کی رائے
پورن ویب سائٹس کی سرچ میں اول نمبر ملک کے کچھ بزعم خود پارسا و پاک داماں خامہ فرسا ابھی تک ایک مقتول بچی کے اندر پڑے ہوئے کیڑوں کو ایسے چن رہے ہیں جیسے جب تک قندیل سوشل میڈیا پر نہیں آئی تھی پورے ملک میں شرم و حیا کی نہریں بہہ رہی تھیں ۔ یہ ملک جس کی آبادی انیس کروڑ ہے اور فیس بک پہ اسکے رجسٹرڈ یوزرز کی تعداد تیئیس کروڑ ہے ۔ سب کے سب دودھ کے دُھلے فیس بک پر بیٹھے نفلیں تو پڑھ رہے ہوتے ہیں ۔ ایک قندیل ان سب سقراطوں بقراطوں پر بھاری ۔ سب کا ایمان اخلاق خراب کر کے رکھ دیا ۔ اس کی ایسی ویسی جیسی تیسی وڈیوز اور پکس پر ساڑھے چالیس کروڑ ویوز لگے ۔ حتیٰ کہ اس کی موت کے بعد اس کے فالوورز کی تعداد میں ڈھائی لاکھ کا اضافہ ہؤا ۔ ان کی بدقسمتی کہ انتظامیہ نے اس کا پیج بند کر دیا ۔ اب سب سیدھے ہو جائیں گے جلیبی کی طرح ۔ قندیل کمبخت ماری نے بےچارے سیدھے سادھے بھولے بھالے پاکستانیوں کی مت مار دی تھی ۔ سارا قصور اس کا تھا اسی لئے اتنی دردناک سزا کی مستحق بھی وہی ٹھہری ۔
ہمارے معاشرے میں ایسی لڑکیوں کی کمی نہیں ہے جو اپنی عزت کی حفاظت کرنا جانتی ہیں ۔ اپنے حالات یا وقت کی ضرورت کے تحت گھر سے باہر نکل کر کام کرتی ہیں پوری ثابت قدمی اور بلند ہمتی سے اپنے گھرانے کی کفالت میں کردار ادا کرتی ہیں ۔ اور اپنے والدین و خاندان کی ناموس پر آنچ نہیں آنے دیتیں ۔ مگر کچھ بچیاں تربیت کی کمی کچھ اپنی ناسمجھی دینی تعلیمات سے دوری کے سبب غلط راستوں اور ہاتھوں میں پڑجاتی ہیں ۔ اور کچھ والدین جان بوجھ کر چشم پوشی کرتے ہیں ۔ وہ جاننے کی کوشش تک نہیں کرتے کہ آخر بچی کی کیا مصروفیات ہیں وہ مناسب تعلیم تک نہ ہونے کے باوجود یہ اندھا دھند رقمیں کس عہدے پر فائز ہو کر لا رہی ہے ۔ انہیں صرف اپنی ضروریات کی تکمیل سے سروکار رہ جاتا ہے ۔ ساتھ ہی یہ بھی چاہتے ہیں کہ بات بنی رہے ۔ کبھی نہ کُھلےگذارا چلتا رہے ۔ اپنی ذمہ داریاں پوری نہ کرنے کے باوجود ان کے مردوں کی غیرت و عزت کا تصور عورت ہی کی ذات سے وابستہ ہوتا ہے ۔ مگر اس مظلوم بچی کے باپ بھائیوں کی غیرت اس وقت کہاں تھی جب یہ سب مل کر اس کی کمائی کھا رہے تھے؟ پہلے زبر دستی اس کی شادی کی جب وہ اپنے جاہل چمار شوہر سے مار کھاتی تھی تب انہیں غیرت نہیں آتی تھی ۔ اسے طلاق دے کر اور اس کا بچہ چھین کر اسے دھکے دے کر گھر سے نکال دیا گیا تو ان غیرت والوں سے اسکی دو وقت کی روٹی کی ذمہ داری نہ اٹھائی گئی ۔ وہ اپنا پیٹ خود پالنے نکل کھڑی ہوئی ۔ وہ بس کنڈکٹر بن گئی تب یہ باپ بھائی ڈوب کر نہیں مرے ۔ وہ دوبئی ،ساؤتھ افریقہ میں دھکے کھا رہی تھی اور اسکے آدھا درجن غیرتمند مسٹنڈے بھائی اس کی کمائی پر عیش کر رہے تھے ۔ اسے نہ معاشی سرپرستی حاصل تھی اور نہ ہی دینی سطح پر رہنمائی ۔ وہ ایان علی یا وینا ملک اور نرگس کے جیسا نصیب لے کر دنیا میں نہیں آئی تھی ۔ کوئی مولانا طارق جمیل اسے اس دلدل سے نکالنے کو نہیں آیا ۔ وہ بھٹکتی پھری اندھی گلیوں کی مسافر بن گئی مگر اپنے کنگلے بہن بھائیوں کی زندگیوں میں مالی آسودگیوں اور خوشحالیوں کی روشنی بھرتی رہی ۔ کسی کو کوئی اعتراض نہیں تھا ۔ پھر اچانک ہی ایک بھائی کو غیرت کا دورہ پڑا ۔ اب یقیناً پورے پاک نگر میں دوبارہ سے پارسائی و پاکدامنی کا دور دورہ ہو گا ۔ (رعنا تبسم پاشا،نارتھ امریکا) ۔
By: Rana Tabassum Pasha(Daur), Wylie on Jul, 24 2016
Reply Reply
0 Like
This is great Article, ham ko apni ijtimahi soch ko badalna ho ga, warna isi tarah dunya k samne zaleel hote rahain ge.
By: Parvez Ahmed, Haripur on Jul, 20 2016
Reply Reply
0 Like