کا میا ب مرد کے پیچھے عو ر ت کا کر دار قسط (١)

(naila rani, karachi)
ا یک کا میا ب مر د کے پیچھے آ پکو ا یک عو ر ت کا کردار نظر آ ئے گا کبھی بیو ی کی شکل میں کبھی ما ں کی شکل میں کبھی بہن کی شکل میں اور کبھی بیٹی کی شکل میں ا سکی چند مثا لیں ا پکے سا منے پیش کی جا تی ہیں

مثا ل نمبر (١):۔۔۔۔۔نبی صلی ا للہ علیہ و سلم ا للہ ر ب ا لعزت کے محبو ب سید ا لا و لین ہیں سید ا لا خر ین ہیں ا ما م ا لملا ئکہ ہیں ا پکو ا للہ ر ب ا لعزت نے وہ شا ن بخشی کہ “بعد ا ز خدا بزرگ تو ئی قصہ مختصر“ لیکن جب آپ پر و حی نا ز ل ہو ئی اور آپ گھبرا ئے ہو ئے گھر تشر یف لا ئے تو آپ نے ا پنی ا ہلیہ سے فر ما یا زملو نی ز ملو نی مجھے کمبل ا و ڑھا دو مجھے کمبل او ڑھا دو -چنا نچہ جبر ئیل علیہ ا لسلا م کو آ پ نے پہلی مر تبہ د یکھا تھا و حی ا تر نے کا پہلی مر تبہ تجر بہ ہو ا تھا نبی ا کر م صلی ا للہ علیہ و سلم کے د ل پر ا یک خو ف سا طا ر ی تھا ا یک ہیبت سی طا ری تھی تو آپ نے فر ما یا ۔۔۔۔کہ مجھے تو ا پنی جا ن کا خطر ہ ہے - ا یسے و قت میں آ پ کی ا ہلیہ محتر مہ نے آ پکو تسلی کی با تیں کہیں اور فر ما یا “کلا“ ہر گز نہیں “ اے محبو ب آ پ تو صلہ ر حمی کر نے وا لے ہیں “آپ کے چند ا چھے ا خلا ق گنو ا کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہ

جب آ پ کے ا ندر ا تنے ا چھے ا خلا ق مو جو د ہیں تو ا للہ ر ب ا لعزت آپ کو کبھی ضا ئع نہیں فر ما ئیں گے چنا نچہ ا نکی با تو ں کو سن کر آپ کے دل کو تسلی مل جا تی ہے چنا نچہ محبو ب کی زند گی میں آ پکو عو ر ت کا کردار بیو ی کی شکل میں نظر آ ئے گا جو آپ صلی ا للہ علیہ و سلم کو مشکل و ق ت کے ا ندر تسلیا ں د یا کر تیں تھیں بلکہ جب آ پ کا نکا ح ہوا تو ا نہو ں نے ا پنا سارا ما ل بنی علیہ ا لسلام کےقد مو ں پر ڈا ل د یا اور آپ صلی اللہ علیہ و سلم کو ان کے ا سی ما ل نے ا بتدا ء میں بہت فا ئدہ د یا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مثا ل نمبر (٢):۔۔۔۔۔۔۔۔حضر ت ا بو بکر صد یق رضی ا للہ عنہ ا للہ کے محبو ب صلی اللہ علیہ و سلم کے یا ر غا ر کہلا تے ہیں ر فیق سفر کہلا تے ہیں آ پ ان کے س فر ہجر ت کو د یکھیں تو ان کے پیچھے بھی آ پکو ا یک عو ر ت کا اور ا یک لڑ کی کا کر دا ر نظر آ ئے گا حد یث پا ک میں آ تا ہے جب نبی علیہ ا لسلا م حضر ت ا بو بکر صد یق ر ضی ا للہ عنہ کے ہا ں تشر یف لے گئے تو آپ نے فر ما “ ا بو بکر “ میں تنہا ئی چا ہتا ہو ں حضر ت ا بو بکر صد یق نے عر ض کیا اے ا للہ کے محبو ب صلی اللہ علیہ و سلم میں ہو ں میر ی بیو ی ہے اور میر ی دو بیٹیا ں ہیں اور تو کو ئی غیر نہیں ہے -نبی علیہ ا لسلا م نے ا طمینا ن کا ا ظہا ر فر ما یا ۔۔۔۔۔۔۔

چنا نچہ آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے فر ما یا کہ ہجر ت کا حکم ہو ا ہے آپ ر ضی اللہ عنہ کی بڑی بیٹی حضر ت ا سما ء ر ضی اللہ عنہا نے ا سو قت دو پٹے کو پھا ڑ کر دو ٹکڑ ے کیئے ایک کو ا پنے سر پر پر دے کے لیئے ر کھ لیا اور دو سر ے کے ا ندر ا نہو ں نے نبی علیہ ا لسلام کے سا ما ن کو با ندھ د یا اور ساما ن با ند ھ کر ا نہو ں نے نبی علیہ ا لسلا م کو ر خصت فر ما یا حضر ت ابو بکر ر ضی ا للہ عنہ نے ا پنی ا ہلیہ سے فر ما یا کہ آپ کھا نا بنا د یں اور ا پنی بیٹی ا سما ء سے کہا کہ تو چو ں کہ چھو ٹی ہے لو گ تجھ پر شک بھی نہیں کر یں گے تو یہ کھا نا ہمیں غا ر ثو ر میں پہنچا د ینا ۔۔۔۔۔۔۔ جا ر ی ہے
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 110602 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
08 Sep, 2016 Views: 854

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ