کا میا ب مرد کے پیچھے عو ر ت کا کر دار قسط (٥)

(naila rani, karachi)
مثال نمبر (٦):۔۔۔۔۔۔۔۔ا ما م غزا لی ر حمتہ اللہ علیہ کو اللہ تعا لی نے د ین کی ا تنی بڑی شخصیت بنا یا ا نکی ز ند گی کو آپ د یکھیئے ان کے پیچھے انکی ما ں کا کردار نظر آ ئے گا محمد غزا لی اور ا حمد غزا لی دو بھا ئی تھے یہ ا پنے لڑ کپن کے ز ما نے میں یتیم ہو گئے تھے ان دو نو ں کی تر بیت ا نکی وا لدہ نے کی انکے با رے میں ایک عجیب با ت لکھی ہے کہ ما ں ا نکی ا تنی ا چھی تر بیت کر نے وا لی تھیں کہ وہ انکو نیکی پر لا ئیں حتی کہ وہ عا لم بن گئے - مگر دو نو ں بھا ئیو ں کی تر بییتو ں میں فر ق تھا ا ما م غزا لی ا پنے و قت کے بڑے وا عظ اور خطیب تھے اور مسجد میں نماز پڑھا تے تھے انکے بھا ئی عا لم بھی تھے اور نیک بھی تھے مگر وہ مسجد میں نماز پڑ ھنے کی بجا ئے ا پنی الگ نما ز پڑ ھ لیا کر تے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو۔۔۔۔۔۔۔

ا یک مر تبہ ا ما م غزا لی ر حمتہ اللہ علیہ نے ا پنی وا لدہ سے کہا ا می لو گ مجھ پر ا عترا ض کر تے ہیں کہ تو ا تنا بڑا خطیب ہے اور وا عظ بھی ہے اور مسجد کا امام ہے ،مگر تیرا بھا ئی تیرے پیچھے نما ز نہیں پڑھتا ا می آ پ بھا ئی سے کہیئے کہ وہ میر ے پیچھے نما ز پڑ ھا کرے -ما ں نے بلا کر نصیحت کی چنا نچہ ا گلی نما ز کا وقت آ یا امام غزا لی ر حمتہ اللہ علیہ نما ز پڑھا نے لگے اور انکے بھا ئی نے پیچھے نیت با ند ھ لی -لیکن عجیب با ت ہے کہ جب ایک ر کعت پڑھنے کے بعد دو سری ر کعت شرو ع ہو ئی تو انکے بھا ئی نے نما ز تو ڑ دی -اور جما عت سے با ہر نکل آئے -اب جب امام غزا لی ر حمتہ اللہ علیہ نے نماز مکمک کی ،ا نکو بڑی سبکی محسوس ہو ئی وہ بہت ز یا دہ پر یشان ہو ئے ۔۔۔۔۔۔۔لہذا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مغموم دل کےسا تھ گھر وا پس لو ٹے ما ں نے پو چھا ! بیٹا بڑ ے پر یشا ن نظر آ تے ہو -کہنے لگے ا می بھا ئی نہ جا تا تو ز یا دہ بہتر ہو تا -یہ گیا اور ایک ر کعت پڑ ھنے کے بعد دو سر ی ر کعت میں وا پس آ گیا اور ا سنے آ کر ا لگ نماز پڑھی تو ما ں نے اسکو بلا یا اور کہا ،بیٹا تم نے ا یسا کیو ں کیا ؟چھو ٹا بھا ئی کہنے لگا امی!میں ان کے پیچھے نما ز پڑ ھنے لگا پہلی ر کعت تو ا نھو ں نے ٹھیک پڑ ھا ئی مگر دو سری ر کعت میں اللہ کیطر ف د ھیا ن کیبجا ئے انکا د ھیا ن کسی اور جگہ تھا اس لیئے میں نے انکے پیچھے نما ز چھو ڑ دی اور آ کر الگ پڑ ھ لی - ما ں نے پو چھا ا مام غزا لی سے کہ کیا با ت ہے ؟ کہنے لگے کہ ا می ! با لکل ٹھیک با ت ہے -۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نما ز سے پہلے فقہ کی ایک کتا ب پڑ ھ ر ہا تھا اور نفا س کے کچھ مسا ئل تھے جن پر غورو خو ض کر ر ہا تھا - جب نما ز شرو ع ہو ئی پہلی ر کعت میر ی تو جہ ا لی اللہ میں گزر ی لیکن دو سر ی ر کعت میں و ہی نفا س کے مسا ئل میر ے ذ ہن میں آ نے لگے - ان میں تھو ڑ ی د یر کے لیئے ذ ہن ملتفت ہو گیا -اس لیئے مجھ سے یہ غلطی ہو ئی - تو ما ں نے اس و قت ا یک ٹھنڈی سا نس لی اور کہا کہ ا فسوس تم دو نو ں میں سے کو ئی بھی میر ے کا م کا نہ بنا اس جواب کو جب سنا تو دو نو ں بھا ئی پر یشا ن ہو ئے اما م غزا لی ر حمتہ اللہ علیہ نے تو معا فی ما نگ لی ،ا می ! مجھ سے غلطی ہو ئی مجھے ا یسا نہیں کر نا چا ہیئے تھا ،مگر دو سرا بھا ئی پو چھنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ا می مجھے تو کشف ہوا تھا اس کشف کی و جہ سے میں نے نما ز تو ڑی تو میں آپ کے کا م کا کیو ں نہ بنا ؟تو ما ں نے جو ا ب د یا کہ “تم میں سے ایک تو نفاس کے مسا ئل کھڑا سو چ ر ہا تھا اور دو سرا پیچھے کھڑا اس کے دل کو د یکھ ر ہا تھا تم دو نو ں میں سے اللہ کیطر ف تو ایک بھی متو جہ نہ تھا لہذا تم دو نو ں میر ے کا م کے نہ بنے -سو چنے کی با ت ہے کہ جب ما ں ا یسی ہو تصو ف کے ا تنے با ر یک مسا ئل بچو ں کو بتا نے وا لی ہو تو پھر بچے بڑ ے ہو کر امام غزا لی کیو ں نہ بنیں گے ۔۔۔؟ تو ایک اور کا میا ب مرد کے پیچھے آ پکو عورت کا کردار بحیثیت ما ں کے نظر آ ئے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جا ر ی ہے
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 108803 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
21 Sep, 2016 Views: 1094

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ