معصوم خواہشات اور چائلڈ لیبر

(Faiza Umair, Lahore)
نظریں اُس ننھے مجسم کو دیر تک دیکھتی رہیں جن کی تاریک زندگی میں خواہشات دم گُھٹنے سےمر جاتی ہیں، حسرتیں آسیب کی طرح بھٹکتی ہیں اور ہر نیا چڑھتا دن روٹی کی آس لگائے ڈراتا ہے ۔۔۔۔۔۔

وہ سب معصوم سے چہرے تلاش رزق میں گُم ہیں جنہیں تتلی پکڑنا تھی، جنہیں باغوں میں ہونا تھا

اُداس چہرہ۔۔۔۔۔۔۔
بکھرے بال۔۔۔۔۔۔۔
ننگے پیر۔۔۔۔۔۔۔
معصوم سی مسکراہٹ کے ساتھ اُس نے آواز لگائی “ناریل لے لو“
نہ جانے کیوں دل کسمسا سا گیا، کم عُمری کے خواب بچگانہ شرارتیں سب ہی دُھندلا سی گئیں۔ فقط پیٹ کا دوزخ بھرنے کے لیے تعلیم، کھلونے، مٹھائیاں سب معصوم خواہشات دفنا دی گئی تھیں۔۔۔۔ وہ حسرت و یاس کی تصویر بنا ایک گیند کی طرح لُڑھکتا رہا۔۔۔۔ سبز بتی ہونے پر گاڑیاں ہوا کے گھوڑے پر سوار اُمید کے دئیے کو بجھا گئیں۔۔۔۔
وہ نم آنکھیں لیے سر جھکائے زمین کو گُھورتا رہا۔۔۔۔
بھر بتی لال ہوئی۔۔۔۔۔
پھر سے وہی معصوم خواہشات کا ٹوٹنا بکھرنا۔۔۔۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Faiza Umair

Read More Articles by Faiza Umair: 8 Articles with 7505 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
14 Oct, 2016 Views: 869

Comments

آپ کی رائے
NICE
By: Rania Ch, Lahore on Oct, 17 2016
Reply Reply
0 Like
Dear bhout khub likha hai kitni khubsurti say ine ki takleef ko bayen kiya hai good
By: Rania Ch, Lahore on Oct, 17 2016
Reply Reply
0 Like
Thanks for liking dear.... stay blessed!!!
By: Faiza Umair, Lahore on Oct, 18 2016
0 Like
bohoth khoob Faiza dear... Jaazak Allah Hu hairan Kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 15 2016
Reply Reply
1 Like
thank u dear farah... stay blessed!!!
By: Faiza Umair, Lahore on Oct, 15 2016
0 Like