غریب

(Ali Raza, )
آج پھر وہ ایک سوچ میں گم تھا کہ کب ہماری زندگی میں خوشیاں آئیں گی۔ کب ہماری زندگی سے اندھیرے ختم ہوں گے۔ کب ہم لوگوں کی طرح اچھی زندگی گزاریں گے۔ کیا ہماری قسمت میں غم، درد، مصیبت، اذیت اور غربت کے علاوہ کچھ نہیں لکھا ہے۔ کب غربت و مفلسی ہمارا پیچھا چھوڑے گی۔ میں نے غربت، ناداری اور مفلسی میں آنکھ کھولی تھی اور لگتا ہے خوشیوں کا انتظار کرتے کرتے ہم اس دنیا سے چلے جائیں گے۔ اچانک ہی اس کے دل میں ایک درد سا محسوس ہوا اور اس کی آنکھیں بند ہو گئیں۔
 
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Ali Raza

Read More Articles by Ali Raza: 18 Articles with 7374 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Oct, 2016 Views: 555

Comments

آپ کی رائے