جھنڈا اور ڈنڈا (سو لفظوں کی کہانی)

(Hasnain Raza Saair, Karachi)
١٣ اگست کو ہوا ایک واقعہ مزاح کہ طرز میں
تنخواہ تو اب تک ملی نہیں تھی مگر جذبہِ حب الوطنی بیدار تھا کہ بائیک پہ اس سال جھنڈا لگایا جائے۔ بیگم سے بہرحال درخواست کی کہ دو سو روپے ادھار دئے جائیں، منظوری ہوئی اور ہم مارکیٹ سے 200 روپے کا لوہے کے ڈنڈے والا جھنڈا لے آئے۔ مکینک سے کہا بھائی ٹایٹ کردیجو، جب وہ لہراتا تو دل چہچہاتا، 13 اگست کی رات کو لگا چھوڑا صبح جانا جو تھا۔ اب جب صبح اٹھے تو دیکھا نہ "جھنڈا تھا نا ڈنڈا"
چلو اس بات کی تو خبر ہوئی کہ" ہم سے زیادہ بھی کوئی حب الوطن موجود ہے"-
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hasnain Raza Saair
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
26 Oct, 2016 Views: 430

Comments

آپ کی رائے
chalien koi nahi bahi
agli baar plastic ka laga lena
By: Qasim, Mandi bahaoodin on Nov, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Matlab hudd hi hogai
By: Uzma, Multan on Nov, 04 2016
Reply Reply
0 Like
Kya baat hai bhai aisi bhi kya hubb ul watni
By: عرفان, Hango on Nov, 04 2016
Reply Reply
0 Like
کیا بات ہے کیا کہنے :)
By: Usman, Islamabad on Oct, 29 2016
Reply Reply
0 Like
Nice :)
By: mehwish, Lahore on Oct, 29 2016
Reply Reply
0 Like
hahahaah aala
By: Noor, Karachi on Oct, 27 2016
Reply Reply
1 Like