سو لفظی کہانی " ذہنی معذور "

(Fatima Noor Ul Ain, Karachi)
"ماروں گی پتھر"
"بہن پتہ نہیں کون ہے؟ عورت ذات پھر کم عمر، اللّٰہ کسی عورت کو دیوانہ نا کرے، اب کون رکھے اِسے اپنے گھر میں"
"یار چیز غضب کی ہے، ہوش میں نا ہوتے ہوئے بھی دوسروں کے ہوش اُڑا دے، پھر کیا ارادہ ہے؟"
رات کی تاریکی میں کسی اوباش کی کمینی ہنسی کے ساتھ ایک وحشت بھری چیخ گونجی
"مارووووں گی پتھر"
چند ماہ بعد………
"اللّٰہ معاف کرے"
کچرے کے ڈھیر سے ذرا پرے درد اور موت کی کشمکش سے سکڑا "بےجان" وجود اور اُس سے جُڑا نومولود، بےحس اور حقیقتاً ذہنی طور پر معذور معاشرے کے منہ پر طمانچہ تھا.
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Fatima Noor Ul Ain
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
29 Oct, 2016 Views: 1067

Comments

آپ کی رائے
words selection axhi ha mgr mozu purana ha same asi ek kahani bht phle ksi digest ma prhi thi
By: Farheen Naz Tariq, Chakwal on Nov, 04 2016
Reply Reply
0 Like