حاضری

(Nighat Yasmeen, Karachi)
 میرے اور اس کے درمیاں
زندگی کے ان گنت رشتے ، ہر رشتہ کا سرا اس تک پہنچاتا
مگرآپس کا تعلق کتنا سرسری محض زبانی
پھر کتنی مدت بیت گئی باقی تھوڑی مہلت رہ گئی
تو میری بے رخی بکو یکسر نظر انداز کرکے اس نے اپنے گھر بلالیا
کیسے بہانے حیلے تراشے کتنے فسانے بنائے مگر میری ایک نہ چلی سب کچھ ہوتا چلا گیا
اس کے در کی حاضری کا لمحہ آ ن پہنچا
گھر کے جمال و جلال نے نگاہوں کو خیرہ کردیا
باب فہد کی سیڑھیوں پر دل آنسووں میں بہہ گیا لبیک اللھم لبیک
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 797 Print Article Print
About the Author: Nighat Yasmeen

Read More Articles by Nighat Yasmeen: 8 Articles with 3470 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

اللہ سب کو اپنا مہمان بنائے اورحاضری کو قبول کرے آمین
By: فرحت طاہر, karachi on Nov, 01 2016
Reply Reply
0 Like
Lovely
By: Nusrat yousuf, khi on Oct, 30 2016
Reply Reply
0 Like
Language: