سو لفظی کہانی

(Dr Iffat Bhatti, )
اس کے سوختہ جسم کو کپڑے سےڈھانپ دیا گیا۔اب سے ایک گھنٹہ قبل وہ جیتی جاگتی خوبصورت سی لڑکی تھی جو اپنی چوڑیاں چھنکاتی کچن میں شوہر کی فرمائش پہ بریانی بنانے داخل ہوئی۔ابھی اس نے ماچس کی تیلی جلائی ہی تھی کہ اس کے مقدر کو بھی آگ لگ گئی وہ چلا بھی نہ سکی بس آگ کے بلند شعلوں میں اس نے ساس اور نند کو مسکراتے ہوئے حیرت سے دیکھا ۔اسے بابا کے جھکے کندھے ۔ جڑے ہاتھ اور بہتے آنسو دکھائی دیے۔جو کم جہیز دینے پہ اس کی ساس کے آگے پشیمان تھے۔
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 3171 Print Article Print

Reviews & Comments

Mujhe bohat Herat hoti ha ye sub sun kr dikh kr.Mujhe samjh nhi ati k Larki Ko becha jaraha h ya us ki kimat ada ki jare ha.jehazz k name per.khuda k khof nhi raha logon k dil main.kese k ghr ki ronaq k ye Hal kiya jata ha Kia...khuda ra....behan beti ko ezat do .yahi hamre nasal barhati hain yahi ek maa.ek behan ek beti hoti hain gharon ki ronaq youn na bacheya.youn na ujariya.Allah pak reham farmae ameen or samjhne ki tofiq ata farmae ameen
By: Shohaib haneef, Karachi on Feb, 13 2018
Reply Reply
0 Like
rula diya aap ki kahani nay .... jeeti rehyai Jazak Allah Hu Khair
By: farah ejaz, Karachi on Jul, 22 2017
Reply Reply
0 Like
well well true story of our society .
By: Sahar Ali, Rawalpindi on Jul, 04 2017
Reply Reply
0 Like
Language: