ناک

(Imran Raza, Gujranwala)
بچوں کی شادی کرنے کے بعد ماسٹر دین محمد کی بیوی وفات پا گئی تھی۔
ماسٹر کا ہر بیٹا اور بہو اس کی ذمہ داری دوسرے پر ڈال دیتے۔
بچے رات دیر سے سوتے اور دیر سے اٹھتے ، اسے صبح ناشتے کے لیے دیر تک انتظار کرنا پڑتا۔
ایک رات سب سو گئے اورکسی نے اس کو کھانا نہ دیا۔
ماسٹر نے ہر کسی کا دروازہ کھٹکھٹایا مگر کسی نے دروازہ نہ کھولا
ماسٹر دین محمد بھوک سے مر گیا۔
اور اگلے دن ماسٹر کے بڑے بیٹے نے برادری میں ناک اور ساکھ کی خاطر
دس دیگیں گوشت کی پکائیں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Imran Raza
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
01 Nov, 2016 Views: 5435

Comments

آپ کی رائے
ALLAH HO AKBAR.haqiqt likhe ha ap ni bilqul ... maa bap ki kadar zinda rehtay karain marne k bad ap kia kartay hain is se maa bap ko koi faida nhi hoga krna ha kuch to maa bap ki zindagi main karain marne k bad dikhaway k koi faida nhi ha...dunia ko dikhane k lia lakhon kharch kr letay hain log lakin afsos maa bap k lia ek waqt ki roti muyasir nhi.....ALLAH PAK REHAM FARMAE AMEEN
By: shohaib haneef , karachi on Feb, 13 2018
Reply Reply
0 Like
touchy topic .... mubarak ho jeetney k liye
By: sana, Lahore on Nov, 23 2016
Reply Reply
0 Like
Naak .... hamaray moashray ki alamnak Haqiqat
By: Iftikhar Rasool Bajwa , Lahore on Nov, 12 2016
Reply Reply
0 Like
Bhtt behtareen <3 nd congrats a lot :)
By: Iqra zia, karachi on Nov, 10 2016
Reply Reply
0 Like
یہ بھی ہمارے معاشرے کا ایک بگاڑ ہے
شکریہ جناب اس طرف توجہ دلانے کیلئے
By: علی مقصود, Gujranwala on Nov, 10 2016
Reply Reply
2 Like
Bitter Truth of our society !
By: salman, Gujranwala on Nov, 09 2016
Reply Reply
0 Like
میری جانب سے آپ کو بہت بہت مبارک ہو۔
By: H/Dr Ch Tanweer Sarwar, Lahore on Nov, 09 2016
Reply Reply
0 Like
ایسا ہی کچھ واقعہ کئی سال پہلے ہمارے علاقے میں ہوا تھا اور اس کا مرکزی کردار آج بھی زندہ ہے .میں وہ واقعہ سو لفظوں میں بیان کروں گا ان شاءاللہ
By: Muhammad Ameer Umar Farooq, Muzaffar garh on Nov, 01 2016
Reply Reply
0 Like
بہت عمدہ. افسوس تو یہ ہے کہ پاکستان میں یہ کام ننانوے فیصد ہو رہا ہے
By: Muhammad Ameer Umar Farooq, Muzaffar garh on Nov, 01 2016
Reply Reply
0 Like