ممتا - حصہ اول

(Iffat Bhatti, )
وہ اپنے ایک سال کے ننھے بچے کو سینے سے لگائے کانٹوں میں الجھتی گرتی سنبھلتی بھاگ رہی تھی اپنے گاؤں سے بہت دور جنگل میں بھٹک گئی تھی ۔جان سب کو پیاری ہوتی ہے اور اس کے ساتھ تو جان سے پیاری چیز اس کا بیٹا تھا ۔پھر کیسے نہ تگ ودو کرتی۔ایک جگہ اس کا پاؤں رپٹا اور وہ نشیب میں لڑھکتی چلی گئی جہاں وہ گری وہاں گھاس کی فراوانی تھی۔اس نے بچے کو سنبھلا کہنیوں سے بہتا خون صاف کیا بچے کا منھ آنچل سے صاف کیا سامنے ایک کھوہ سی تھی وہ اندر چلی گئی۔کھوہ کافی کشادہ تھی ۔ایک کونے میں ٹیک لگا کر بیٹھ کے اس نے روتے ہوئے بچے کو گود میں لٹایا بچہ مادر شیر سے پیٹ کی آگ بجھانے لگا اور پرسکون ہو گیا۔ اس کے شوہر اور سسر کو زمین کے معمولی تنازع پہ بے دردی سے قتل کر دیا گیا وہ زمیندار کی ہوس سے بچنے اور اپنی اور اپنے بچے کی جان بچانے کے لیے بھاگی اور اب یہاں تھی تلاش کرنے والے جانے کہاں نکل گئے ۔وہ سوچوں میں گم آنسو بہا رہی تھی زور دار طوفانی ہواؤں اور بارش کی آواز نے اسے چونکا دیا۔بجلی کی چمک نے پل بھر کے لیے اجالا کیا ۔طوفان بہت زوردار تھا گویا وہ بھی بے گناہ انسانیت کے قتل پہ نوح کناں ہو۔ہوائیں خوب اکھاڑ پچھاڑ کر رہی تھیں یکدم ایک بھاری پتھر گڑگڑاہٹ کے ساتھ کھوہ کے دہانے پہ آگرااور راستہ مسدود ہو گیا۔اب کیا ہوگا وہ دھک سے رہ گئی۔قید کے خوف سے اٹھی اور پتھر کو دھکیلنے کی ناکام کوشش میں ہانپ گئی۔مگر لا حاصل۔رات بیتی۔اس کے پیٹ میں گرہیں پڑنے لگیں۔اب کیا ہو گا بچہ بھی بھوک سے بے تاب اس کے سینے پہ منہ مار رہا تھا ۔شام تک اس کی ہمت جواب دے گئی وہ پھر اٹھی مگر لڑکھڑا گئی خود کو گھسیٹتے ہوئے پتھر تک پہنچی مدد مدد پکارتی رہی مگر اس کی آواز دم توڑتی جا رہی تھی۔دو دن سے ایک کھیل بھی اس کے حلق سے نہ اتری تھی ایک کونے میں گڑھے میں بارش کا پانی کھڑا تھا نصف تو زمین میں جذب ہوگیا تھا۔اس نے چلو بھرا اور گارا نما پانی منھ سے لگا لیا سوکھے حلق کو تراوت ملی اور وہ پھر مدد مدد پکاری مگر کوئی ہوتا تو سنتا۔وہ وہیں ڈھے گئی اسے اپنے سر پہ موت منڈلاتی دکھائی دے رہی تھی۔
 
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
01 Nov, 2016 Views: 445

Comments

آپ کی رائے