کالی ( دوسری اور آخری قسط )

(Zeena, Lahore)

“ اماں کیا مجھے حق تھا ، کہ میں خود کو جیسا چاہتی بنا لیتی “ اماں اسکے پاؤں میں دوا لگا دینے کے بعد اب اسکے سر کو اپنی گود میں رکھ کر اسکے بالوں میں اپنی انگلیاں پھیر رہی تھی۔ “نیں بیٹا ! یہ اختیار اللہ نے اپنے پاس رکھا ہے “ اماں اسکے اس سوال پر تڑپ ہی اٹھی تھی، “تو پھر مجھے قصور وار کیوں سمجھتے سب کیا میں نے اللہ سے کہا تھا،وہ مجھے کالا پیدا کرتا ، دادی مجھ سے نفرت کرتی ہیں، سب کزن میرا مذاق بناتی ہے، ابھی بجو کی شادی پر جب سب کزن تصویریں بنانے لگی تب سب مجھے آوازیں دینے لگی، کہنے لگی کالی آؤ یہاں ہمارے ساتھ تصویر بنواوں تمہارے ہونے سے ہمیں نظر نہیں لگے گی۔ وہ روتے ہوئے بمشکل اپنی بات پوری کر سکی ،اور ہچکیوں سے رونے لگی ،اماں کا دل دھل گیا وہ جانتی تھی اسکی بیٹی کس اذیت سے گذر رہی ہے ۔ اماں نے اسے سینے سے لیا۔

“زرمینہ تمہارے لیے بجو کی شادی پر ایک رشتہ آیا ہے بیٹا!“ کالی نے سر اٹھا کر حیران نظروں سے ماں کی طرف دیکھا ، اسے ماں کی بات پر یقین ہی نہیں آیا، جب سے اسے احساس ہوا کے کوئی اسے پسند نہیں کرتا سب اسکے رنگ کا مزاق اڑاتے ہیں،تب سے اسنے دوسری لڑکیوں کی طرح شادی کے خواب نہیں دیکھے ،اب اماں کی بات سن کر حیران نا ہوتی تو اور کیا کرتی اسے یقین نہیں آرہا تھا کے کوئی اسے بھی پسند کر سکتا ہے ۔ اماں نے سر ہلا کر اسے اپنے ساتھ لگا لیا۔

آج صبح بہت نکھری تھی۔کالی فجر کی نماز پڑھ کر باہر آئی تو دادی تخت پر بیٹھی تیز تیز تسبیح گھما رہی تھی،چڑیوں کی چہچھاہٹ اسے بہت بھلی لگتی تھی،آج ویسے بھی وہ بہت خوش تھی، آج اسے دیکھنے لڑکے والے آرہے تھے، آج اسے دادی کا چیکھنا بھی برا نہیں لگ رہا تھا ،آج شام تک اسے خوش خوش رہنا تھا۔

“زرمینہ بیٹا! جلدی سے تیار ہو کے آجاؤ وہ لوگ آ گئے ہیں“ کالی نے ہلکے رنگ کا فروک پہنا جس میں وہ دمک رہی تھی ،اور اماں کی آواز سن کر وہ جوتا پاؤں میں ارسا کر وہ مہمانوں کے سامنے جا کر بیٹھ گئی لڑکے نے ایک نظر دیکھا بس،دوسری نظر اس کے سراپے پر ڈالنا گناہ سمجھا ،کالی سے نظرے اٹھانا محال تھا ،اس نے ایک نظر بھی نہیں دیکھا لڑکا کیسا تھا،پر ہمت کر کے آنکھوں کو اٹھا کر دیکھ ہی لیا، لڑکا بھدے نقوش کا تھا ،موٹا سا بس رنگ اسکا سفید تھا، کالی کا بس رنگ ہی کالا تھا۔نقوش اسکے بہت اچھے تھے،اگر اسکا رنگ سفید ہوتا تو کسی اپسرا سے کم نا تھی۔لڑکے نے اپنی ماں کے کان میں کچھ کہا جسے سن کر ماں کا مسکراتا چہرا سنجیدہ ہوگیا۔

“میں نے تو کہا تھا تمہں کہ اس کی شادی کا خیال دل سے نکال دو جب وہ موٹا اسے نا بول گیا تو اور کون اسکا ہاتھ تھامے گا“ اماں نے کچھ نہیں کہا بس اپنی بیٹی کی قسمت پر آنسو بہاتی رہی ، دادی کا کام ہی زہر اگلنا تھا وہ اگلتی رہی۔

“میرے اللہ یہ لوگ تیری بنائی ھوئی مخلوق کو برا کہتے ہے ،اے میرے رب تو مجھے ستر ماؤں سے زیادہ پیار کرتا ہے ،مجھے اس رسوائی سے بچا لے میرے اللہ میری برداشت ختم ہو گئی اب تو اپنے بندے پر برداشت سے زیادہ بوجھ نہں ڈالتا میں جانتی ہوں میں تجھے کتنی عزیز ھوں کیوں کے تو میرا رنگ نیں میرا دل دیکھتا ھے میرا دل تو شفاف ھے میں نے تجھ سے کبھی لوگوں کا گلا نیں کیا،اے میرے اللہ آج میں سب کو تیری رضا کے لئے معاف کرتی ہوں مجھے کسی سے کوئی گلا شکوا نہیں ،مجھے سکون عطا کر دے میرے اللہ ۔ وہ آج چپ چاپ کمرے میں جا کر اللہ سے سکون کی دعا کرنے لگ کیئ کیوں کے اسنے دادی کی بات سن لی تھی اور اللہ نے اسے ہمشہ کے لئے سکوں عطا کر دیا اللہ نے اسے اپنے پاس بلا لیا وہ رات کی سوئی صبح نا اٹھ سکی۔اور ہمیشہ کا سکون پا گئی۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zeena

Read More Articles by Zeena: 92 Articles with 138373 views »
I Am ZeeNa
https://zeenastories456.blogspot.com
.. View More
02 Jan, 2017 Views: 987

Comments

آپ کی رائے
Nice one :)
By: ali raza, rawalpindi on Feb, 09 2017
Reply Reply
0 Like
thnx
By: Zeena, Lahore on Feb, 10 2017
0 Like
dear Zeena and Umaima mera mqsad yahan criticizm nahi tha .... MashaAllah say Zeena nay kahani achi likhi no doubt .... may nay to sirf rai zahir ki thi ka kali ko marna nahi cha yai tha bulkay us kay saath kuch acha hi hona cha yai tha ... agar kahani pasand na ati to khamooshi say koyee comment kiyai baghair parh ker chalay jati kiyun kay mujhay tanqeed kerna pasand nahi ...... haan agar kissi ki islah hosukti hay to wo or baath hay magar Masha Allah zeena ki likhayee may pukhtagi mahsoos hoti hay jo ainda unkay kafi kaam ay gi or mazeed behtar kahaniyan parhnay ko milaingi ......khair likhari ziyada behtar janta hay kay kahani ka anjaam kiya hona cha yai ... khud mera novel jub apnay anjaam ko pohnchay ga tub shaid bohoth so ko us ka end pasand na aay ...... khair baath kehnay ka maqsad yahi hay kay jub qaree koyee kahani parhta hay to us ka iqtetaam bhi waisa hi chata hay jaisa wo apnay zahan may bana laita hay ...... Jazak Allah HU Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Jan, 07 2017
Reply Reply
0 Like
کہانی کا پیغام بہت اچھا ہے۔اصلاح کرنے والے کی یا کسی بھی رائے دینے والوں کی بات کا برا نہیں منانا چاہیے کہ یہی ہمیں بہتری کی طرف لے جاتے ہیں اور یہ لکھاری کے لئے ضروری ہوتا ہے کہ وہ اپنے نقطہ نظر کی وضاحت کرے مگر تبصرہ نگار کی رائے پر مزید بحت کرنا اچھے لکھاری کے لئے مناسب عمل نہیں ہے اس لئے اس جانب بھی توجہ مرکوز رکھنی چاہیے کہ اگر بات اصلاح یا بہتری کی طرف لے جا رہی ہے تو سوچا جا سکتا ہے یا اچھی رائے دی ہے کہا جاسکتا ہے۔فرح اعجاز صاحبہ کی بات اپنی جگہ ٹھیک ہے مگر آپ بھی اپنی جگہ درست ہوگی مگر سرعام بحث مناسب عمل نہیں ہے اس پر خیال کیا جائے۔
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Mar, 10 2017
0 Like
dear sis muje is story ka ye wala end pasand aya ta is liye kaha sorry agar ap ko bura laga ho tu
By: umama khan, kohat on Jan, 08 2017
0 Like
Dear sis farah ager ap tanqeed bhi karti tab bhi mujhe bura nahi lagta main yaha new hn
abhi likhna start kia hai ahista hi nikhar aye ga apka bohat shikria apne apni raye se nawaza :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 08 2017
0 Like
topic boht nice tha lekin mojhe feel howa jese ap ne boht juldi end ker deya.kuch tashnagi si reh gai.wese boht nice likha..ALLAH pak ap ko boht bohjht taraqi de ore ap ke qalam me boht taqat de .ameen suma ameen
By: Nawaf Ahmed Khan, K.S.A on Jan, 07 2017
Reply Reply
0 Like
nawaf bhai thnx :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 07 2017
0 Like
Hmmm
By: Raza Malik, Lahore on Jan, 05 2017
Reply Reply
0 Like
thnx for hmmm :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 06 2017
0 Like
Assalam O Alaikum Zeena kahani ka toppic to acha chuna hay aap nay magar end may bechari kali ko hi maar diya aap nay ..... jo reality may amooman nahi hota hum nay bohoth say kum rangath or gehri rangath ki hamil larkiyon ko khush wa khurram zindagi guzartay daikha hay..... baher haal Allah aap ki tehreeron may mazeed nikhar ata karay ameen ... Jazak Allah HU Khairan kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Jan, 05 2017
Reply Reply
0 Like
farah sis har kisy ka end happy nhe hota zeena ni jo end keya hai ye teek hai
By: umama khan, kohat on Jan, 07 2017
0 Like
mera maqsad sirf kala rang nahi tha ap puri tehreer ghoor se parhe apko es aik topic main 3 topic mile gain :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 06 2017
0 Like
ji apne bilkul thek kaha per her kesi ke life aik jese nahi hoti thnx for comment :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 06 2017
0 Like
صورت اور سیرت پہ بہت اچھا آرٹیکل لکھا آپ نے۔معاشرے کی حقیقت کو بیان کیا ہے کیونکہ لوگ سیرت نہیں صورت کو فوقیت دیتے ہیں۔
By: Abdul Kabeer, Okara on Jan, 05 2017
Reply Reply
0 Like
g ha aj kal ye rujhan bohat zada hai es liye ye topic choose kia pasand karne ka shukriya :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 05 2017
0 Like
bhot khob and very sad story ......
Wel done
By: Abrish anmol, Sargodha on Jan, 05 2017
Reply Reply
0 Like
thank you abrish sis :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 05 2017
0 Like
کوئی نہ کوئی اس کے لیے نکل آتا تو ذیادہ اچھا لگتااور امید پر تو دنیا قائم ہے چلیں ،اللہ جنت نصیب کرئے کالی کو کہ روح کالی نہیں تھی اس کی،بہت خوب لکھا ہے آپ نے۔
By: kanwalnaveed, Karachi on Jan, 04 2017
Reply Reply
0 Like
thank you kanwal jo usy sab se zada chta tha usk pass chali gai warna dunia tou marte dam tak bate karti ,,,,thank you so much :)
By: Zeena , Lahore on Jan, 04 2017
0 Like
Another fabulous article, u are improving day by day glad to see that :) keep up the good work :)
By: Sidra , Karachi on Jan, 04 2017
Reply Reply
0 Like
thank you so much sidraaaaaaaaaa :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 05 2017
0 Like
esa boys karte hai hehehe :) thank you mini :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 04 2017
Reply Reply
0 Like
Ohhh very sad . bht acha topic ta welldone sis
By: Umama, Kohat on Jan, 03 2017
Reply Reply
0 Like
thank you umama khan :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 04 2017
0 Like
kali tu wrestler tha,,,,,,,,good sis
By: HuKhaN, Karachi on Jan, 03 2017
Reply Reply
0 Like
hehehe nai ye wrestler nai masoom thi tha nai,,,,,thank you hukhan bhai :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 04 2017
0 Like
oh very sad,,,bhot se log aisa karty hein,,khud ko dekhty nhi dosroo mein nuks nikalty hein,,,niceee
By: Mini, mandi bhauddin on Jan, 03 2017
Reply Reply
0 Like
thnx :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 04 2017
0 Like