صبر اور دعا (آخری قسط)

(Zeena, Lahore)
“اے ایمان والوں صبر اور نماز کے ذریعے مدد چاہو، اللہ صبر والوں کا ساتھ دیتا ہے ،،،،،،یہ تو قرآن میں اللہ نے فرمایا ہے ،،،،صبر کرو بیٹا ،،،تم اسکے ساتھ گزارے اچھے دن کیوں بھول گیی ہو ،،،،اماں نے اسے پیار سے سمجھایا جیسے کوئی چھوٹی بچی کو گڑیا کھو جانے پر سمجھاتا ہے۔ امی وہ دن یاد ہے تو ہی اسکے ساتھ ہوں ابھی تک ،،،،،پر اب وہ پہلے جیسا نہیں رہا،،،،اسنے ایک اور کلا کیا،،دیکھو بیٹا جب ہم خود غلطی کرتے ہے ،،،،تو کیا ہم خود سے پیار کرنا چھوڑ دیتے ہیں بیٹا نہیں نا؟،،،،،،اسنے ماں کی بات پر سر اٹھا کر انہیں دیکھا وہ ٹھیک کہ رہی تھی اسنے ایسا سوچا نہیں تھا ۔وہ بس نیگٹیو سوچتی رہی تھی ۔
اماں کچھ دیر بعد وہاں سے اٹھ کر چلی گئیی ،،،،تھوڑی دیر بعد اماں اسکے لئے دودھ کا گلاس لے کر نمودار ہوئی ،،،،،اسکے لاکھ منا کرنے پر اماں نے اسکو پانی پلا کر ہی دم لیا ۔ تھوڑی دیر تک وہ روتے روتے سو گئی،،،کیوں کے دودھ میں نیند آور دوا ملا دی تھی اماں نے،،،،نہیں تو وہ ساری رات روتی رہتی ،،،،اسے سلا کر خود اماں اسکے لئے دعا کے لئے رب کے حضور حاضری دینے چلی گئی۔،،،

اگلے دن وہ بخار میں پھنک رہی تھی اسنے اماں سے کہا وہ کچھ دن آپ کے پاس رہنا چاہتی ہے ،،،،،اماں نے کہا اپنے میاں سے اجازت لے لو اسنے اماں کے کہنے پر اسے فون کیا ،،،،،،“ اسلام علیکم “ اسنے دوسری بیل پر فون اٹھایا تو وہ جلدی سے بولی ۔ “واعلیکم اسلام “ دوسری طرف سے جواب آیا،،،،،میں کچھ دن امی کی طرف رک جاؤ ؟،،،،،،“ رک جاو میں نے کب منا کیا ،،،اللہ حافظ۔ یہ کہہ کر اسنے فون بند کر دیا ،وہ کتنی دیر فون کو ہاتھ میں لئے بیٹھی رہی ،،،،،

ایسے ہی بہت سارے دن گزر گئے وہ ٹھیک ہو گئی تھی ۔اور ہر روز اسکا انتظار کرتی ،،،،کبھی گھنٹوں بیٹھی گیٹ کو دیکھتی رہتی یا ٹیلیفون کے پاس بیٹھی رہتی ،،،،نا وہ خود آیا نہ ہی اسکا فون ،،،،ایسے ہی ایک دن وہ فون کے پاس بیٹھی تھی،جب فون کی بیل ہوئی اسنے لپک کر فون کان کو لگایا۔ “میں تمہیں لینے آرہا ھوں تیار رہنا“ ،،،،اتنا کہہ کر اسنے فون بند کر دیا اور وہ بھاگ کر اماں کو بتانے گیئ اماں نے بدلے میں اسے ڈھیروں دعاییئں دی اور اللہ کا شکر ادا کیا،،،،

وہ برے نک سک سے تیار ہوئی تھی اسنے ہر ہار سنگھار اسکی پسند کا کیا تھا ۔وہ آیا تو اماں نے ڈھیر ساری دعاؤں کے سایے میں اسکو رخصت کیا ۔ “میری پریشانی ختم ہو گیئ ہے سائیرہ،،،اور میں تم سے ہر بات کی معافی مانگتا ہوں جس نے تمہیں ہرٹ کیا ۔ اسکا صبر اور دعا نے آج اسکو یہ دن دیکھایا وہ بہت خوش تھی کیوں کے اسے صبر کا اجر مل گیا تھا۔۔۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zeena

Read More Articles by Zeena: 92 Articles with 138603 views »
I Am ZeeNa
https://zeenastories456.blogspot.com
.. View More
16 Jan, 2017 Views: 745

Comments

آپ کی رائے
صبر کرلیا جائے اور دعا کرلی جائے تو سب کچھ آسان ہو جاتا ہے۔
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Mar, 10 2017
Reply Reply
0 Like
thnx :) bhai
By: Zeena, Lahore on Mar, 10 2017
0 Like
Ok thankx zaror aie ga sistar
By: Pasha pasha, lahore on Jan, 24 2017
Reply Reply
0 Like
God sistr.ap kdr gahib hain koi episode nai mila apka bht din ho gy,
By: Pasha pasha, lahore on Jan, 23 2017
Reply Reply
0 Like
pasha bhai bus kuch masrofiat ki bina per likh nahi pa rahi in shaa ALLAH jald hi dobara ao ge ....shukriya
By: Zeena, Lahore on Jan, 24 2017
1 Like
niceeeeeeeeeeee zeena
By: umama khan, kohat on Jan, 18 2017
Reply Reply
0 Like
thnx :)
By: Zeena, Lahore on Jan, 18 2017
0 Like
g bikul thank you sis
By: Zeena, Lahore on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like
very nice,,,
By: Mini, mandi bhauddin on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like
thnx
By: Zeena, Lahore on Jan, 17 2017
0 Like
Nice Ending
By: Abdul Kabeer, Okara on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like
thnx
By: Zeena, Lahore on Jan, 17 2017
0 Like
wioo sis well done boht ki acha likhha hy apny
Sabr sy insan or duaa sy insan sab kuch hasel kr lyta hy
Kabhi kabhi humri duayien hi hy jo hum wo dyti hy jis humyn shidad sy khwahish hoiti hy or sabr insan ko na uneedi or mayoisi sy bachata hy very nice article
By: Abrish anmol, Sargodha on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like
thank you sis
By: Zeena, Lahore on Jan, 17 2017
0 Like