اجڑے خواب

(Nadia khan, rawalpindi)
رات آدھی سے زیادہ بیت چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جنگل پر ہو کا عالم طاری تھا ۔۔۔۔۔ ماحول پرسکون تھا ۔۔۔۔۔۔۔ لیکن اس کی دل میں ایک عجیب سا طوفان تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جسے وہ روکنے کی کوشش کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔ سگریٹ کے جلتے شعلے نے جب اس کی انگلی کو چھوا تو اس نے سسکاری سی بھری ۔۔۔۔۔۔۔ اور سیٹ پر سیدھا ہو کر بیٹھ گیا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟ ماہ رخ ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ زیر لب بڑبڑایا ۔۔۔۔۔۔ ؟؟ آجاو ۔۔۔ آج تو ۔۔ آجاو ۔۔۔۔ اندھیرے میں خاموش کھڑا جنگل یقیناً ایک پراسرار منظر پیش کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ؟؟؟؟؟ مگر وہ سیٹ کی پشت سے سر ٹکائے ایک ٹک اندھیرے کی اس چادر کو تک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماہ رخ مجھے خبر ہے ۔۔۔۔۔ تم بھی نہیں رہ سکتی میرے بغیر ۔۔۔۔۔۔ پھر کیوں چھوڑ کر چلی گئی ہو ۔۔۔۔ میں کب سے تمہیں ڈھونڈ رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔خدارا ایک مرتبہ آجاو ۔۔۔۔۔ صرف ایک مرتبہ ۔۔۔ صرف ایک مرتبہ اس عذاب کو دیکھ جاو جو میں جھیل رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جانے کب سے جھیل رہا ہوں اور کب تک جھیلوں گا ۔۔۔۔۔۔۔ ایک دفعہ مجھ سے پوچھو ۔۔۔۔ کہ میں کب سے جاگ رہا ہوں ۔۔۔۔۔ اور میں کتنا اجڑچکا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ ایک مرتبہ آجاو ۔۔۔ ایک مرتبہ آجاو ۔۔۔ ماہ رخ ۔۔۔۔۔آنکھیں بند کیے ۔۔ وہ ایک ہی جملے کی گردان کیے جارہا تھا ۔۔۔۔۔ صاب ۔۔۔ کسی نے اس کو پکارا ۔۔۔۔ تو وہ بری طرح سے چونکا ۔۔۔۔ کون ۔۔؟ صاب میں ہوں سکندر ۔۔۔۔؟ آپ کا ملازم ۔۔۔ آو سکندر میں تمہارا ہی انتظار کررہا تھا ۔۔۔۔ کیا ہوا سکندر تم گئے تھے نہ ماہ رخ کی گھر ۔۔۔۔ ہاں صاب میں گیا تھا ۔۔۔۔ لیکن ۔۔۔۔۔ لیکن کیا ساحل بےصبری سے پوچھنے لگا ۔۔۔۔جلدی بتاؤ سکندر ۔۔۔ اب اور انتظار کرسکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔ صاب وہ ماہ رخ بی بی کی بھائی بتا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باجی کی شادی ہوچکی ہے ساتھ والے گاوٙ ں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا ۔۔۔۔۔ سکندر تم یہ کیا کہہ رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ تم پاگل تو نہیں ہو ۔۔۔۔ ماہ رخ ایسا نہیں کرسکتی تمہیں کسی نے جھوٹ بولا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہیں صاب میں سچ کہہ رہا ہوں میں خود گیا تھا اس کی گھر ۔۔۔۔۔۔۔ ساحل کی آنکھوں کے سامنے اندھیرے سا چھا گیا ۔۔۔۔ اور وہ وہاں زمین پر بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہیں یہ نہیں ہوسکتا ۔۔۔۔۔ ماہ رخ تم میرے ہو تم کسی اور کے نہیں ہوسکتی ۔۔۔۔۔ ساحل کو ایسا لگا جیسے ساری دنیا ویران ہوگئے اور سارے رنگ ختم ہوچکے ہیں سب کچھ بےرنگ سا لگنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس لمحے نے یہ سب کچھ چرا لیا ۔۔۔۔ اس نے بس اتنا ہی کہا ۔۔ ماہ رخ یہ تم نے کیا ۔۔کیا
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Nadia khan

Read More Articles by Nadia khan: 9 Articles with 19400 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 Jan, 2017 Views: 1285

Comments

آپ کی رائے
gooooooood
By: umama khan, kohat on Jan, 18 2017
Reply Reply
1 Like
nice
By: Zeena, Lahore on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like
nice sis
By: Abrish anmol, Sargodha on Jan, 17 2017
Reply Reply
0 Like