دیسی لبرل اور سیکولرز ۔۔۔۔

(Usman Ahsan, Gujranwala)

ہمارے ہاں ہر شے میں ملاوٹ عام سی بات ہے ، دو نمبر اشیاء کے ساتھ ساتھ دو نمبر لبرلز سیکولرز اور دانشور بھی باکثرت ملیں گے ، جنھیں عام فہم زبان میں دیسی لبرل اور دیسی سیکولر کہتا ہوں ۔ دیسی مرغی انڈوں پر بیٹھی ہو آپ اسکے انڈوں کے ساتھ بطخ کے انڈے بھی اگر رکھ دیں تو جب اکیس دنوں بعد مرغی کے بچے انڈوں سے نکلیں گے تو ساتھ بطخ کے انڈوں سے بچے بھی نکل آئیں گے مرغی حیرآن پریشان ہو گی کہ انکی شکل وصورت عادات ومشاغل میرے بچوں سے جدا ہیں یہ بھاگ کر جوہڑ میں گھس جاتے ہیں۔ ایسی ہی کچھ حالت دیسی لبرلز کی ہےشومئی قسمت سے یہ پیدا تو مسلمان گھرانوں میں ہوجاتے ہیں مگر ساری عمر انکے والدین حیران و پریشان ہی رہتے ہیں کہ یہ ہم نے کن بھینسے کو جنم دے دیا ہے یہ اسلام کی پاکیزگی کو چھوڑکر اپنے باطن کی غلاظت کے جوہڑ میں غوطہ زن رہتے ہیں ۔ یہ طے شدہ بات ہے کہ میرے آقا کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو وہی بھونکے گا جو حرامی ہوگا ۔ حرامی تین اقسام کے ہوتے ہیں ایک نطفی حرامی دوم لقمی حرامی اور تین وقتی حرامی ، اب اگر تین اقسام کی تشریح کروں تو کئی صفحات درکار ہیں بات جو عرض کرنا چاہتا ہوں وہ یہ کہ بھنسا موچی اور روشنی کا تعلق حرامی کی تین اقسام میں سے کسی ایک قسم کے ساتھ ضرور ہے ۔ میرے یہ جملے پڑھ کر اگر کسی کے اندر تہذیب کا کیڑا پھدکے تو وہ کیڑے مار اسپرے کا استعمال کرے کیونکہ جو میرے آقا کریم کے بارے میں نازیبا الفاظ بولے یا لکھے گا میں اسکی سات نسلوں کا ڈی این اے کروں گا ۔

میں علم مناظرہ کا اک ادنی طالب علم ہوں زندگی کا اک حصہ بحث مباحثوں میں گذرا ہے بڑے بڑے لبرلز اور سیکولرز حضرات سےبھی بحث مباحثہ رہا ہے دلائل و براہین کی روشنی میں گفت وشنید ہوتی ہے میں انکا نکتہ نظر سنتا ہوں وہ میرے تلخ جملوں کوبرداشت کرتے ہیں یہ بات میں اصلی مغربی و یورپی لبرلز اور سیکولرز کی کر رہا ہوں ۔ کیونکہ لبرل ازم اور سیکولر ازم کابنیادی محور ہی دوسرے کے نکتہ نظر کو سننا اور برداشت کرنا ہے ۔ لیکن دیسی لبرلز تو دوسرے کا مؤقف ہی سننے کو تیار نہیں ہوتے ۔ ہمارے ہاں عجب رواج ہے کہ اگر دانشور کہلوانا ہو تو فوج پر بھونکو اور لبرل ثابت کرنا ہو تو مذہب اور مسلمانوں پر بھونکو ۔ میری نادان قوم سمجھ ہی نہیں رہی ان چوروں اور ڈاکوؤں کو ۔ غور کرو یہ دیسی لبرل اور سیکولر سب سے زیادہ کس کے خلاف ہیں ایک فوج دوسرا مولوی کے خلاف ۔ ایک ہماری جغرافیائی سرحدوں کے محافظ اور دوسرے ہماری نظریات و مذہب کے چوکیدار ۔ اب دل پر ہاتھ رکھ کے بتاؤ چوکیداروں کے خلاف کون ہوتا ہے سوائے اسکے جو چور ہو یا چوروں سے ملا ہوا ہو ۔ پاکستانیو سمجھو یہ پاکستان پرنقب لگانے والی راء سے ملے ہوے ہیں پاکستان اور اسلام کے دشمن ہیں انکا ہدف پاکستانی فوج اوراسلام ہے ۔ میری انگلیاں گھس گئیں لکھ لکھ کرکہ پاکستانی فوج کو کمزور کرنے کے منصوبے پر کام بڑی تیزی سے ہورہا ہے اور بعض میڈیا ہاؤسز ، اینکرز اور موم بتی بردار آنٹیاں مہرے کے طور پر استعمال ہو رہے ہیں ۔

خدا کی قسم اہل مذہب میں پھر بھی برداشت ہے مگر دیسی لبرلز تو کاٹنے کو دوڑتے ہیں - عقل و شعور سے عاری اس مخلوق کا دامن ہمیشہ دلائل سے خالی رہا ہے ۔ دور حاضر میں دیسی سیکولرز کا باپ طارق فتح ہے اسکو اگر سن لیں تو آپکو اندازہ ہوگاکہ وہ حیوان ناطق ہے ۔ جانور اور اس میں صرف یہ فرق ہے کہ جانور بول نہیں سکتے یہ بول لیتا ہے۔ اس حیوان ناطق کا بھی مکمل ڈی این اے کسی دن پیش کروں گا ۔
آقا مٹ گئے مٹتے ہیں مٹ جائیں گے دشمن تیرے
نہ مٹا ہے نہ مٹے گا کبھی چرچا تیرا ۔۔۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Usman Ahsan

Read More Articles by Usman Ahsan: 139 Articles with 102707 views »
System analyst, writer. .. View More
21 Jan, 2017 Views: 734

Comments

آپ کی رائے