آنکھ ٹانگ ہاتھ کا دوران واک استعمال

(Sana, Lahore)

واک انسان کو صحت مند تندرست چست دبلا پتلا بنانے کے کام آتی ہے۔ مگر انسان جب عملی طور پر واک کے لئے نکلتا ہے تب سمجھتا ہے کہ اصل میں واک کرنا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا
انسان کو اگر ہم دیکھیں تو اللہ نے دو ٹانگیں ایک زبان اور دو آنکھیں دی ہیں۔ واک میں یہ سب بہت ہی اعلی انداز میں استعمال کی جاتی ہیں۔ انسان انسان پر اور جگہ پر منحصر ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کون سا عضو کتنا استعمال کرنا ہے۔
اگر تو واک کی جا رہی ہے کسی گراؤنڈ میں۔۔۔۔ یا کسی سوسائٹی پارک میں۔۔۔۔۔۔ یا پھر اپنے ہی گھر کے لان میں یا چھت پر۔۔۔۔۔۔ تو واک کے دوران اگر تو آپ ایک خاتون ہیں اور واک کے دوران اگر تو آپکا سامنا ان افراد سے ہو جو کہ اس جگہ پر ٹانگیں کم اور آنکھیں ذیادہ استعمال کرنے آتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو آپ جان لیں گے کہ یہ لوگ
@ باغ میں پائے سب سے ذیادہ وقت جائیں گے
@ لیڈیز کارنر کے آس پاس پائے جائیں گے
@ گیٹ اور پارکنگ میں خاص طور پر سہج سہج کر چلیں گے کہ آنکھیں ذیادہ سے ذیادہ استعمال کی جائیں
@ ان کو غصے میں یا جس بھی انداز میں خواہ کتنی ہی آنکھیں دکھا لی جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ ان آنکھوں کو خوشامدی اور خوش آمدیدی معنوں پہناتے ہوئے اپنی آنکھوں کا استعمال بڑھا دیں گے
@ خواتین سے ذیادہ نازوانداز سے چلیں گے تاکہ انکی حسین زلفیں خراب نہ ہو جائیں
@ موبائل ہمہ وقت ہاتھ میں رکھیں گے اور کیمرہ آن رکھیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنی طرف نہیں دوسروں کی طرف کر کے
@ اگر انکی آنکھوں کا استعمال کامیاب ہو جائے تو ذیادہ امکان یہی ہے کہ یہ پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ موبائل کو کان پر رکھیں گے
اور زبان چلتی
کیونکہ آج کل خواتین اور حضرات کا شانہ بشانہ چلنے کا دور ہے سو اسی لئے جو خواتین یا لڑکیاں بالیاں ہیں وہ بھی واک کے دوران آپکو ہاتھ آنکھ ٹانگ کا بےحد عمدگی سے استعمال کرتی نظر آئیں گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ وہ ذیادہ تر کسی کو ساتھ گھر سے لے کر آتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا انکو گھر سے کوئی لے کر آتا ہے سو وہ محتاط استعمال کرتی ہیں
@ وہ اپنے ہاتھوں کا استعمال ضرور کریں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ اشارے سے بتا سکیں وہ کس بھائی کے ساتھ ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور کس کو اس بھائی سے محتاط رہنے کی ضرورت ہے
@ اپنے ہاتھوں کا ستعمال زلف لہرانے اور لباس سنوارنے کے لئے جب ذیادہ کریں تو سمجھ لیں کہ انکے آجو باجو میں اوپر بیان کی گئی خصوصیات کا حامل شخص موجود ہے
@ انکی ٹانگ یا پاؤں انکا ساتھ بھرپور دے گی اور عام طور پر ساتھ آنے والوں سے کم رفتار میں چلے گی
@ اگر اپنی سہیلیوں کے ساتھ ہوں تو مسئلہ ہی نہیں کیونکہ سہیلیاں وہی جو کہ ایسے موقعے پر اچھی طرح کام آئیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ویسے میرا ذاتی خیال ہے اگر آپ واک کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جتنا انڈر ایسٹیمیٹ کرتے ہیں ایک وقت آتا ہے کہ یہ بھی آپکو رج کر انڈر کرا دتی ہے کیونکہ کسی پر پابندی لگ جاتی ہے اور کسی کی ٹانگیں استعمال کے قابل نہیں رہتیں
جو میرے جیسے لوگ ہوتے ہیں وہ آتے جاتے اپنے "چکروں" واک کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں صرف دیکھ کر یہی سوچتے رہتے ہیں۔ انکے اماں ابا کو بتایا جائے یا انکو بتایا جائے کہ سب کو سب دکھ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس اپنے کام سے کام رکھے ہوئے ہیں اور پھر میں بھی اپنے کام سے کام رکھتے ہوئے آجاتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واپس

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: sana

Read More Articles by sana: 231 Articles with 182934 views »
An enthusiastic writer to guide others about basic knowledge and skills for improving communication. mental leverage, techniques for living life livel.. View More
22 Mar, 2017 Views: 542

Comments

آپ کی رائے