پیارے بچو! مکی ماؤس آج بھی بولتا ہے!!

(Rehman Mehmood Khan, )

پیارے بچو!ہم جانتے ہیں کہ کارٹون آپ کتنے شوق سے دیکھتے ہیں اور جب آپ کا پسندیدہ کارٹون ٹی وی پر آن ائیر ہوتا ہے تو آپ کی دلچسپی کا عالم اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ آپ کی امی آپ کو سکول کا کام کرنے کی ترغیب دی رہی ہوتیں لیکن آپ تو بس۔۔کارٹون میں اتنے محو ہوتے ہیں کہ کچھ بولنا ،سننا بھول سے جاتے ہیں۔یقینا! جناب آپ سوچ رہے ہوں گے کہ اتنا سب ہمیں کیسے معلوم؟؟ہاں تو بھئی ۔۔بات یہ ہے کہ جب ہم آپ کی طرح چھوٹے تھے تو شرارتیں کرنا ،اٹھکیلیاں کرنا اور بہن بھائیوں کو چھیڑتے تھے لیکن جونہی ہمارے پسندیدہ کارٹون لگتے تو بس ہم بھی آپ کی طرح دم بخود ٹی وی کے سامنے بیٹھ جاتے ،لیکن یہ بات بتاتا چلوں کہ ہمارے بچپن میں کارٹون چینل نہیں ہوتا تھا بلکہ روزانہ 15-20منٹ کے لیے کارٹون نشر ہوتا جسے ہم بڑے ذوق وشوق سے دیکھتے ۔۔اور اس دوران اکثر ہماری امی جان کو گمان ہوتا کہ بچوں کی آوازیں کیوں خاموش ہوگئیں ،تو وہ تلاش کرتی جب ٹی وی لاؤنج میں آتیں تو انھیں معلوم ہوتا کہ کارٹون کی وجہ بچے چپ بیٹھے ہیں۔۔

دوستو!یقیناً آپ سوچ رہے ہوں گے کہ ہم کون سے کارٹون دیکھتے تھے؟تو اس کا جواب یہ ہے کہ جیسا مَیں نے پہلے بتایا کہ ہمارے بچپن میں زیادہ کارٹونز نہیں ہوتے تھے جیسے آج کل ڈوریمون،سپائیڈرمین،بین10،پاورپف گرلز،مسٹر بین(کارٹون)،بیٹ مین،اوگی،پوکے مون،سکوبی ڈوبی ڈو اور جانی براوووغیرہ 24گھنٹے نشر ہوتے ہیں لیکن ہمارے بچپن میں مکی ماؤس،ٹام اینڈ جیری ،تھنڈر کیٹس،ننجا ٹرٹلزاور پنک پینتھر کارٹون ہوتے تھے جو روزانہ 15-20منٹ نشر کیے جاتے تھے۔ان سب کارٹونز میں جو مقبولیت مکی ماؤس کو حاصل ہوئی،وہ کسی اور کارٹون کو نہیں ملی۔کیونکہ آج بھی بچے بڑوں کو جب کبھی موقع ملے تو ’’مکی ماؤس ‘‘ضرور دیکھتے ہیں اور محظوظ ہوتے ہیں۔

پیارے بچو! 23مئی1929ء کو بچوں میں مقبول کارٹون مکی ماؤس کا پہلا بولتا ہوا کارٹون’’دی کارنیول‘‘ ریلیز کیا گیا۔اسی مناسبت سے آج ہم نے آپ کے اپنے صفحے پر مکی ماؤس کے حوالے سے دلچسپ باتیں بیان کرنے کا سوچا ۔آپ کو بتاتے چلیں کہ مکی ماؤس کو وجود میں آئے ہوئے تقریباً88سال ہوچکے ہیں۔مکی ماؤس سے پہلے بھی کئی کارٹون بنائے جارہے تھے لیکن مکی ماؤس نے ریکارڈ توڑ مقبولیت حاصل کی۔والٹ ڈزنی نے 1928ء میں مکی ماؤس کا اسکیچ تیار کیا۔

تیز آواز، جسم پر سرخ نیکر اور گول مٹول ہاتھوں پر سفید دستانے پہنے یہ والٹ ڈزنی کا یہ کردار ایک صدی سے 4 نسلوں کو ہنسا ہنسا کراپنا گرویدہ بناتا رہا ہے۔والٹ ڈزنی نے اپنی عملی جدوجہد کے آغاز میں یہ کردار تخلیق کیا تھا۔88 سال میں مکی ماؤس ڈزنی برانڈ کی پہچان بن چکا ہے۔مکی ماؤس کو اب تک 150سے زائد فلموں میں پیش کیا جاسکتا ہے۔1928ء میں کارٹون کی ابتدائی شکل بنانے کے بعدڈزنی کمپنی کے مالک والٹ ڈزنی نے مکی ماؤس کے لیے اپنی آواز استعمال کی۔اگرچہ مکی کی تیز چبھتی ہوئی آواز آج بھی وہی ہے، لیکن اس کے کردار میں اس وقت سے آج تک نمایاں تبدیلیاں رونما ہوئی ہیں جب پہلی بار والٹ ڈزنی نے بڑے کانوں اور چھوٹی سی نیکر میں ملبوس گول مٹول مکی کی تصاویر بنائی تھیں۔ اب مکی ماؤس کی جسامت تھوڑی گولائی کی طرف مائل ہے اور اب اس نے سفید دستانے اور سرخ جانگیہ زیبِ تن کیا ہوتا ہے۔مکی ماؤس کے کان اس وقت دنیا میں کسی بھی کمپنی کی طرف سے سب سے زیادہ شناخت کیے جانے والے نشانوں میں سے ایک ہے۔ یہ کان دیکھ کر آپ فوراً سمجھ جاتے ہیں کہ ڈزنی سٹوڈیوز کی بات ہو رہی ہے۔امریکہ میں قائم ڈزنی کمپنی نے کئی ملکوں میں تھیم پارک بھی بنا رکھے ہیں اور دنیا کے 100 سے زائد ملکوں میں ان کے ٹیلی ویڑن چینل کام کر رہے ہیں۔ ان کی وجہ سے مکی ماؤس اور اس کی ساتھی منی ماؤس دنیا بھر جانے پہچانے کردار بن گئے ہیں۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Rehman Mehmood Khan

Read More Articles by Rehman Mehmood Khan: 6 Articles with 4716 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
22 May, 2017 Views: 789

Comments

آپ کی رائے