مشکل راستے قسط نمبر 54

(farah ejaz, Karachi)

فاطمہ اپنی ماں کی گود میں سر رکھے نا جانے کب ان سے بات کرتے کرتے سوچکی تھیں ۔۔۔۔۔ مگر حوریہ کی آنکھوں سے نیند غائب تھی ۔۔۔۔ اپنی بیٹی کی کالی چمکدار زلفوں میں انگلیاں پھیرتے ہوئے وہ ماضی کی کتاب کو اُلٹ پلٹ رہی تھیں ۔۔۔۔۔ وہ ماضی جس نے ان کے خوبصورت احساسات کو کچل ڈالا تھا ۔۔۔۔۔ محبت سے بھرے دل کو ایک ایسی اذیت سے روشناس کرایا تھا ۔۔۔۔۔ جو وقت کے ساتھ ناسور بن چکی تھی ۔۔۔۔۔ جسے چاہا جائے ۔۔۔۔۔ جس کی خوشی ہی آپ کے لئے سب کچھ ہو اور وہ شخص وہ ہستی آپ کو دھتکار دے ۔۔۔۔ آپ کی وفا پر شک کرے ۔۔۔۔ زندہ درگور کردے سارے رشتے ناطے چھین لے ۔۔۔۔ تہی دست کردے تو آپ کے پاس باقی بچتا ہی کیا ہے ۔۔۔۔ اشک بہا کر اب کرنا کیا ۔۔۔۔ مجھے تیرے انتظار میں اور جینا کیا ۔۔۔۔ تو بھول گیا جو مجھے میرے جیتے جی ۔۔۔۔ پھر اس زندہ لاش کو اُٹھائے اُٹھائے پھرنا کیا ۔۔۔۔۔۔ بے تہاشہ محبت کی تھی اُس شخص سے اُنہوں نے ۔۔۔۔ تہجد کی نمازوں میں مانگا تھا اسے ۔۔۔ جس کی خاطر وہ پوری دنیا سے لڑجاتیں ۔۔۔۔۔ مگر افسوس اسی شخص نے انہیں وفا کا اہل نہ سمجھا ۔۔۔۔ اٰیک پل نہ لگایا انہیں اپنی زندگی سے نکال باہر کرنے میں ۔۔۔۔ کیا محبت اسی کو کہتے ہیں ۔۔۔۔ اگر کبھی جمال شاہ ان کے سامنے آجائیں ۔۔۔۔۔ تو کیا وہ انہیں معاف کر دینگی ۔۔۔۔۔

یہ خیال آتے ہی دل نے اُن کے شدت سے انکار کیا تھا ۔۔۔۔۔

نہیں ۔۔۔۔ جمال میں تمہیں کبھی معاف نہیں کرونگی ۔۔۔۔ کبھی نہیں ۔۔۔۔

میرے جنوں کی کوئی حد نہیں
اس رات کی کوئی سحر نہیں

کچھ لوگ تنہا ہی بھلے لگتے ہیں
انہیں کسی ساتھ کی ضرورت نہیں

اپنے ہی انجام کا انتظار ہے اب
مجھے اس اب کوئی خوشگمانی نہیں

زیست نے اپنی دھوکے میں رکھا ہے بہت
مگر اس طرح جینا اب مجھے گوارہ نہیں

شبِ غم ڈھل ہی جائے گی
رات کے بات صبح بھی آئے گی

سمیٹ کر ساری یادیں جب
تمہارے شہر سے چلے جاؤنگی

پیچھے اپنے کچھ چھوڑنا نہیں
تمہارے دل میں اب ہمیں رہنا نہیں

×××××××××××××××××××

میں چپ چاپ بڑی سی کھڑکی کے پاس رات کی سیاہی میں جگمگاتے جگنوؤں کی مانند ستاروں پر نظریں جمائے کھڑی تھی ۔۔۔۔اچانک یادوں کے دریچے سے کسی یاد نے انگڑائی لی تھی ۔۔۔۔۔

یہ تم ہر وقت آدھی رات کو کھڑکی سے باہر کیوں جھاکنے لگ جاتی ہو ڈئیر کہیں کسی بھوت پریت سے ہلو ہائے تو نہیں ہو گئی تمہاری ۔

میں نے چونک کر ادھر اُدھر دیکھا تھا ۔۔۔۔۔ آس پاس کوئی نہیں تھا ۔۔۔۔

سنئیہ !!

اس کا خیال آتے ہی آنکھیں جل تھل ہونے لگیں ۔۔۔۔۔۔

او میری ماں رات میں تارے ڈھونڈنا بند کردو۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی چندا چاچا کے ساتھ سو رہے ہونگے۔۔۔۔تمہارے اس طرح تانکہ جھانکی سے کسی کو بھی محلے میں غلط فہمی ہوسکتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کی باتیں یاد آرہی تھیں ۔۔۔۔ اشک آنکھوں سے رواں پر ہونٹوں پر بے ساختہ مسکراہٹ آگئی تھی ۔۔۔۔۔

تم جہاں کہو میں شادی کے لئے تیار ہوں عائیشہ ۔۔۔۔۔۔۔ تم موت کو بھی گلے لگانے کو کہوگی تو میں لگانے کو تیار ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر یہ مت بھولنا کبھی کہ میں تمہیں بے تہاشہ چاہتی ہوں اور ہمیشہ چاہتی رہونگی ۔۔۔ اماں بی کو میں کھو چکی ہوں لیکن تمہیں کسی حال میں کھونا نہیں چاہتی ۔۔۔۔۔۔۔

اچانک پھر سے دل سے اس کی ندا آئی تھی ۔۔۔۔ گھبرا کر میں نے آنکھیں بند کر لی تھیں ۔۔۔۔ بند آنکھوں میں اس کا معصوم چہرا اپنی آنکھوں میں آنسو لئے شکواہ کرتا محسوس ہورہا تھا ۔۔۔۔ میں گھبرا کر کھڑکی کے پاس سے ہٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔ اور بیڈ پر آکر بیٹھ گئی ۔۔۔۔

اسی وقت دروازے پر دستک ہوئی تھی ۔۔۔۔۔

اندر آجائیں پلیز ۔۔۔۔۔

وہی خاتون جنہیں وہ انسپکٹر چندہ پھو پھو کہہ کر ان سے بات کر رہا تھا اندر داخل ہوئی تھیں ۔۔۔۔

اسلام علیکم ۔۔۔۔ کیسی طبیعت ہے اب تمہاری ۔۔۔۔۔

جی وعلیکم اسلام ۔۔۔ اب بالکل ٹھیک ہوں ۔۔۔الحمدُاللہ

وہ نرم لہجے میں مجھ سے بولی تھیں ۔۔۔۔ تو میں نے بھی مسکرا کر ان سے کہا تھا ۔۔۔۔۔

گُڈ ۔۔۔۔ مگر ارے تم نے خود سے ہی ڈرپ نکال دی ۔۔۔۔ بیٹا باہر نرس بیٹھی ہے ۔۔۔۔۔ وہ نکال دیتی ۔۔۔۔

انہوں نے چونک کر میرے ہاتھ کی طرف دیکھا تھا ۔۔۔۔ اور آگے بڑھ کر میرا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لے کر سرنج کا نشان دیکھنے لگیں ۔۔۔۔۔ جہاں میرے بے دردی سے اسے کھینچنے پر نیلاہٹ اور سوجن آگئی تھی ۔۔۔۔

جی ۔۔۔۔

میں فقط اتنا ہی ان سے کہہ پائی تھی ۔۔۔۔۔ سانولی رنگت ۔۔۔۔ چھوٹا سا قد ۔۔۔۔ اور گول مٹول جسم ۔۔۔۔۔ مگر چہرا پرکشش ۔۔۔۔ اور نورانی ۔۔۔۔۔ ان کے انگ انگ سے محبت اور خلوص جھلک رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔

اچھا چلو تم لیٹ جاؤ ۔۔۔۔ میں نرس کو بھیجتی ہوں ۔۔۔۔۔

آپ کا بہت شکریہ مگر اب میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔

اچھا تو چلو نیچے ۔۔۔۔ خالہ بی سے تمہیں ملاتی ہوں ۔۔۔۔

انہوں نے بےتکلف انداز میں میرا ہاتھ تھاما تھا ۔۔۔۔۔ اور پھر ان کی ہمراہی میں میں کمرے سے باہر نکل آئی ۔۔۔۔ باہر چھوٹا سا ہال یا یوں سمجھ لیں لونگ روم تھا ۔۔۔۔ جس میں رسٹ کلر کی کارپٹ بچھی ہوئی تھی اور فون کلر کے سوفے رکھے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔ اور فون ہی رنگ کے پردے جن پر کتھئی رنگ کی کڑھائی ہوئی وی تھی ۔۔۔ اس ہال نما لونگ روم کی واحد بڑی سی کھڑکی کو ڈھانپے اس ہال کی شان بڑھارہے تھے ۔۔۔۔ ایک طرف ٹیک کی لکڑی سے بنا کارنر ٹیبل (کنسول) اور اس پر رکھے خوبصورت اینٹیک ڈیکوریشنز ۔۔۔۔۔۔

وہ محبت سے میرا ہاتھ تھامے سیڑھیاں اترنے لگیں ۔۔۔۔۔ سیڑھیوں کے اختتام پر ایک وسیع ہال تھا ۔۔۔۔۔۔ وہ مجھے ساتھ لئے ہال سے گزرتی ہوئی ایک بڑے سے کمرے کے دروازے پر آکر رک گئی تھیں ۔۔۔۔۔ پھر بہت ہلکی سی دستک دی تھی انہوں نے ۔۔۔۔۔۔

اندر آجاؤ ۔۔۔۔ دروازہ کھلا ہے راحت جاں ۔۔۔۔۔

اس آواز پر ۔۔۔وہ سر ہلاتے ہوئے اندر داخل ہوئی تھیں ۔۔۔۔۔ سامنے ہی گرے کپڑوں میں ملبوس ایک خاتون کالی کشمیری شال اوڑھے ایک موٹی سی کتاب کی ورق گردانی کرتے ہوئے کرسی پر بیٹھی تھیں ۔۔۔۔ میں ان کا چہرا نہیں دیکھ پائی تھی ۔۔۔۔۔

خالہ بی ۔۔۔۔۔۔۔ یہ نائلہ ہے ۔۔۔۔ نائلہ آفندی ۔۔۔۔۔

راحت جہاں عرف چندہ پھو پھو نے اندر داخل ہوتے ہی ان سے میرا تعارف کرایا تھا ۔۔۔۔۔ تو ان خاتون جن کے بالوں کی سفیدی سے ان کی عمر کا اندازہ ہورہا تھا نے سر اُٹھا کر میری طرف دیکھا تھا ۔۔۔۔

اسلامُ علیکم ۔۔۔۔۔

وعلیکم اسلام ۔۔۔ کیسی طبیعت ہے اب آپ کی ۔۔۔۔۔

جی ۔۔۔۔ الحمدُاللہ ۔۔۔۔۔۔

آؤ ۔۔۔ بیٹھو میرے پاس ۔۔۔۔۔

محبت کی چاشنی سے پُر لہجے میں مجھے اپنے پاس بلایا تھا ۔۔۔۔۔۔ میں قدرے جھجھکتے ہوئے ان کے قریب رکھی ایک کرسی پر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔

راحت جہاں نے تمہارے بارے میں مجھے بتا یا ہے کہ تمہارا اس دنیا میں کوئی نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جی ۔۔۔۔۔۔۔۔

ہممممم ۔۔۔۔ اچھا مگر اب تو ہے ۔۔۔۔۔

جی میں سمجھی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔

میں انہیں سوالیہ انداز میں دیکھنے لگی ۔۔۔۔

اب ہم آپ کی خالہ بی اور یہ آپ کی چندہ پھو پھو ہیں آج سے ۔۔۔۔۔

میں حیرت سے ان ضعیف خاتون کو دیکھنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔

×××××××××××

باقی آئندہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: farah ejaz

Read More Articles by farah ejaz: 146 Articles with 148788 views »
My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More
30 Oct, 2017 Views: 742

Comments

آپ کی رائے
ap behtreen likhte hai parh kar haqeqat ka gumaan hota hai v nice epi ,,,, :)
By: Zeena, Lahore on Nov, 02 2017
Reply Reply
0 Like
thank you and Jazak Allah Hu Khair Zeena
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 02 2017
0 Like
mujhe kbhi kici qisam ka jhol nazar nhi aya apk novel mn,,,,outstanding
By: Mini, mandi bhauddin on Nov, 02 2017
Reply Reply
0 Like
shukriya mini ...Jazak Allah Hu Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 02 2017
0 Like
shukriya tareef ka Zeena ........ Allah aap ki tamam jaiz khahishon ko poora karay ...... ameen
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 02 2017
0 Like
سوری نائلہ اسفند کی جگہ نائلہ آفندی کردیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ لکھتے وقت ذہن سے نام ہی نکل گیا ۔۔۔۔ حالانکہ ہم ہمیشہ آخری دو قسطیں پڑھے بغیر نئی قسط کبھی نہیں لکھتے پھر بھی غلطی ہوگئی جس کے لئے معذذرت خواہ ہیں آپ سب سے ۔۔۔۔۔ جذاک اللہ خیر
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 30 2017
Reply Reply
0 Like
مشکل راستے کے تمام کرداروں کا حقیقی دنیا سے کوئی تعلق نہیں ۔۔۔۔ ہم نے اپنے تخیل کو لفظی پیراہن سے سجا کر آپ کے سامنے پیش کیا ہے ۔۔۔امید ہے کہانی آپ سب کو پسند آئے گی ۔۔۔اور اگر کہانی میں کوئی جھول دیکھیں تو ضرور آگاہ کریں ۔۔ شکریہ
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 30 2017
Reply Reply
0 Like