صراط المستقیم قسط نمبر ٢

(Farah Ejaz, Karachi)

شیلا ۔۔۔۔۔ارے دروازہ کیوں بن کیا ہے تم نے ۔۔۔۔ ارے کچھ بتاتی کیوں نہیں ۔۔۔۔ کیا ہوا ہے تجھے ۔۔۔۔۔ ایسے کیوں چلی آئی وہاں سے ۔۔۔۔ کھولنا دروازہ ۔۔۔۔ میرا دل ڈوبا جا رہا ہے ری ۔۔۔۔

شبنم دروازے پر مار مار کر تھک گئی تھی ۔۔۔۔ مگر کمرے کے اندر خاموشی تھی ۔۔۔۔۔ آخر تھک کر وہ دروازے سے ٹیک لگا کر بیٹھ گئی تھی ۔۔۔۔ اس کی چھوٹی چھوٹی آنکھوں سے آنسو ں چھلک پڑے تھے ۔۔۔۔ شبنم عرف جمیل کے لئے شیلا ہی جینے کا آخری سہارا تھا ۔۔۔۔۔ شیلا کی مسکراہٹ اس کی خوشی اس کے لئے سب سے زیادہ اہم تھی ۔۔۔۔ مگر جس طرح وہ گھر میں داخل ہوئی تھی ۔۔۔۔ وہ اس کی حالت دیکھ کر پریشان ہوگیا تھا ۔۔۔۔ پھر بعد میں گرو جی نے بھی شیلا کا محفل سے بغیر کسی عزر کے چلے آنے کا شکواہ کیا تھا ۔۔۔۔۔ مگر وہ دروازہ کھولنا تو دور اس سے کچھ بول بھی نہیں رہی تھی ۔۔۔۔۔ تین چار گھنٹے یونہی گزر گئے تھے ۔۔۔۔۔۔ صحن میں صبح کی پہلی کرن نے اپنے ہلکے پھلکے جلوے دکھانا شروع کردیا تھا ۔۔۔۔۔۔ شبنم دروازے سے ٹیک لگائے روتے روتے سو چکی تھی ۔۔۔۔ اچانک دروازے کی کنڈی کھلنے کی آواز پر وہ چونکی تھی ۔۔۔۔ اور اٹھ کر کھلتے دروازے کو دیکھا تھا ۔۔۔۔۔ شیلا عرف شہباز نے باہر قدم رکھا تھا ۔۔۔ اور پھر اسے دیکھ کر مسکرایا تھا ۔۔۔۔

تم ابھی تک جاگ رہے ہو ابا ۔۔۔

نہیں آنکھ لگ گئی تھی دروازے پر تمہارا انتظار کرتے کرتے ۔۔۔۔

ارے تو کیا دروازے کے سامنے ہی سوگئے تھے۔۔۔۔

دیکھ شیلا اگر تم نے آئندہ ایسا کیا نا تو اچھا نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔ قسم سے مرجاؤنگی میں ۔۔۔

شیلا نے اس کی طرف بہت پیار سے دیکھا تھا اور پھر ٹوٹے لہجے میں بولی تھی ۔۔۔۔

آئندہ ایسا نہیں ہوگا ابا ۔۔۔۔۔ ایسی نوبت ہی اب کبھی نہیں آئیگی ۔۔۔۔

پھر کھوکلی سی ہنسی ہنستا ہوا اس سے لپٹ گیا تھا ۔۔۔۔۔ شبنم کو اس کا یہ انداز کٍھل رہا تھا مگر بولی کچھ نہیں ۔۔۔

×××××××××××

پروفیسر ابرار جب کلاس میں داخل ہوئے تو متلاشی نظروں سے کمرے میں موجود تمام اسٹوڈنٹس پر نظر ڈالی تھی سب موجود تھے سوائے اس کے ۔۔۔۔ سمسٹر قریب تھے ۔۔۔۔ پہلے کبھی ایسا نہیں ہوا تھا ۔۔۔۔۔ مگر وہ اس کے نہ آنے کی وجہ بھی سمجھ رہے تھے ۔۔۔۔۔ چھٹی کے بعد اپنے گھر جانے کے لئے جب اپنی گاڑی میں بیٹھے تو گاڑی اسٹارٹ کرنے کی بجائے وہ کچھ دیر اسٹیرنگ پر دایاں ہاتھ رکھے کچھ سوچتے رہے ۔۔۔۔ پھر اپنا سیل فون نکال کر ابراہیم کا نمبر ڈائل کرنے لگے ۔۔۔۔۔۔

دوسری بیل کے بعد ہی ابراہیم کی آواز ابھری تھی ۔۔۔۔

سلام بادشاہو ۔۔۔۔ کی حال ہے تواڈا ۔۔۔۔۔

وعلیکم اسلام ۔۔۔ بالکل فٹ فاٹ جی ۔۔۔۔ اچھا ابراہیم تم سے ایک کام تھا ۔۔۔۔۔

ہاں جی دسو ۔۔۔۔

مجھے ان خواجہ سراؤں کا پتا چاہئے جو تمہارے گھر آئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہیںںںںںںں ۔۔۔۔۔ اوجی کیوں بھائی تم ان چکروں میں کب سے پڑ گئے ۔۔۔۔۔

توبہ کرو ۔۔۔۔ مجھے کچھ کام ہے بھائی ۔۔۔۔ اب تم پتا دے رہے ہو یا نہیں ۔۔۔۔۔

وہ تھوڑا سا جھنجھلائے وے لہجے میں بولے تھے ۔۔۔۔۔

اچھا تو تجھے میں ٹیکسڈ کردیتا ہوں ۔۔۔۔۔

اچھا ابھی کرو ۔۔۔۔۔۔۔

××××××××××××

شیلا تمہیں یونیورسٹی نہیں جانا کیا ۔۔۔۔۔ پندرا دن ہوگئے ہیں ۔۔۔۔ تم فقط ٹال مٹول ہی کر رہی ہو ۔۔۔۔

نہیں ابا ۔۔۔۔

وہ جو صحن میں بچھی چھوٹی سی دری پر آلتی پالتی مارے بیٹھا کبوتروں کو باجرہ کھاتے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔ بڑے سکون سے بولا تھا ۔۔۔۔۔ اس کی بات پر شبنم حقے میں چلم بھرتے بھرتے چونک اٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔

آئے ہائے ۔۔۔ کیا پاگل ہوگئی ہے تو ۔۔۔۔۔

ہاں پاگل ہوگیا ہوں میں ۔۔۔۔۔ نہیں پڑھنا مجھے اب اور ۔۔۔۔ پڑھ لکھ کر بھی تو یہی کرنا ہے نا ابا ۔۔۔۔

وہ غصے سے وہیں سے بیٹھے بیٹھے بولی تھی ۔۔۔۔۔

کیوں تم یہ کام کروگی ۔۔۔۔۔ دیکھنا تیری بہت اچھی گزرے گی ۔۔۔۔ میں تجھے اپنی طرح بننے نہیں دونگی ۔۔۔۔۔

ہنہ ! تمہارے چاہنے یا نہ چاہنے سے کچھ نہیں ہوگا ابا ۔۔۔۔ میں ایک کھسرا ہوں اور ایک کھسرے ہی کی طرح جیونگا اور یونہی مرجاؤنگا ۔۔۔۔۔

اللہ نہ کرے ۔۔۔۔۔ اچھا بول شیلا ۔۔۔۔۔

ابا تمہاری سمجھ میں نہیں آتا کیا ۔۔۔۔۔ نہیں جانا مجھے اور اگر تم نے زیادہ تکرار کی نا تو گھر ہی چھوڑ دونگی میں ۔۔۔

وہ غصے سے اُٹھ کھڑا ہوا تھا ۔۔۔۔۔ اور سامنے پڑی چوکی کو ٹھوکر ماری تھی ۔۔۔۔۔ شبنم اسے حیرت اور دکھ سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسی وقت دروازے پر دستک ہوئی تھی ۔۔۔۔۔

اے شیلا دروازہ کھول ۔۔۔۔۔

ریما نامی ہجڑے کی آواز پر شبنم نے دروازے کی طرف دیکھا تھا ۔۔۔۔ شیلا اس وقت تک کمرے کے اندر جاچکی تھی ۔۔۔۔۔ وہ لنگڑاتے ہوئے اُٹھی تھی ۔۔۔۔۔

ریما تو بھی آندھی طوفان کی طرح نازل ہوتی ہے ۔۔۔۔۔ صبر کر کھول رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔

دوپٹے سے آنسو پونچھتے ہوئے دروازہ کھولا تھا ۔۔۔۔۔ ریما پوری بتیسی کی نمائش کرتی ہوئی شرمائی شرمائی سی کھڑی تھی مگر شبنم اس کے ساتھ کھڑے اس خوبرو مرد کو دیکھ کر چونکی تھی ۔۔۔۔۔

آئے ہائے یہ تو کسے لئے پھر رہی ہے ۔۔۔۔۔۔

یہ شیلا سے ملنا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔ شبنم اب اندر آنے کا راستہ تو دو نا ۔۔۔۔

نہیں ۔۔۔۔ صاحب آپ یہاں سے چلے جاؤ ۔۔۔۔ میں کسی مرد کو گھر میں آنے کی اجازت نہیں دیتی ۔۔۔۔۔ شکل سے تو شریف لگتے ہو ۔۔۔۔۔

آپ جیسا سمجھ رہی میرا مطلب رہے ہیں ویسا نہیں ہے ۔۔۔۔۔ مجھے دراصل شہباز سے ملنا ہے ۔۔۔۔

لیکن آپ کون ۔۔۔۔۔

وہ حیرت سے بولی تھی ۔۔

ابرا ۔۔۔۔ پروفیسر ابرار ۔۔۔۔۔

وہ مسکراتے ہوئے بولے تھے ۔۔۔۔۔

×××××××××××××××

باقی آئندہ ۔۔۔۔۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: farah ejaz

Read More Articles by farah ejaz: 146 Articles with 151457 views »
My name is Farah Ejaz. I love to read and write novels and articles. Basically, I am from Karachi, but I live in the United States. .. View More
15 Nov, 2017 Views: 764

Comments

آپ کی رائے
nice one like it ............ waiting for the next episode
By: ghazala, karachi on Nov, 20 2017
Reply Reply
0 Like
thank you .... bohoth juld ... Jazak Allah Hu Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 21 2017
0 Like
Nice .Waiting for the next episode :-)
By: Naila Hussain, Karachi on Nov, 15 2017
Reply Reply
1 Like
shukriya ...... and Jazak Allah Hu Khair
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 16 2017
2 Like