میں سلمان ہوں(١١٣)

(Hukhan, karachi)
اب بہاروں کا انتظار کیوں کریں۔۔۔۔
جب خزاں نے ڈیرے جمائے ہیں۔۔۔

سلمان ہیومن ری سورسز مینیجر کے روم کو ڈھونڈتا ہوا فیکٹری کے ایڈمن بلاک
میں پہنچ گیا،،،
فرسٹ فلور کے بلکل لاسٹ میں اک نیا کمرا بنا ہوا تھا،،،سلمان نے ناک کیا،،
یس،،،کی آواز کے ساتھ ہی،،،وہ بہت آہستہ سے ،،،بہت ہی قیمتی ہینڈل لاک
کو گھما کے مینیجر کے روم میں داخل ہوگیا،،،

لکڑی کے کام کا شاہکار کمرا،،،کاریگر اور انٹیرئیر ڈیزائنر کاکمال تھا،،،سامنے ہی
پورے فیکٹری ورکرز کی لسٹ بمعہ عہدوں کے تھی،،،
ہر سیکشن کی فون ایکسٹینشن سامنے ہی لکھی ہوئی تھی،،،
اس سے ذرا آگے لاسٹ منتھ کی ٹوٹل پروڈکشن اور سیلز کی رپورٹ تھی،،،
سلمان حیرت سے اس روم کی فارمیشن اور انفارمیشن دیکھ رہا تھا،،،

سر پلیز،،،کی آواز نے اسے اپنے خیالات اور خیالات کو اپنے سے دور کرنا پڑا،،،
آر یو نیو اپائنٹی؟؟،،،کے الفاظ نے سلمان کو ‘‘یس‘‘ تک محدود کردیا،،،
ہاؤ مچ یو آویئر آف انگلش؟؟،،،سلمان بہت دھیمے لہجے میں،،،آئی کین انڈرسٹینڈ
اینڈ کین ایکسپلین مائی سیلف،،،

بولنے والا بہت دھیمے لہجے میں بات کرتا تھا،،،اس کی لانگ چیئر کی بیک،،،
اس کا فیکس مشین کے ساتھ مصروف رہنا،،،سلمان کو الجھن میں ڈال رہا تھا،،،
اس کے سامنے صرف لانگ چیئر تھی،،،سلمان کو ایسا لگ رہا تھا جیسے وہ کسی
غیر مرئی مخلوق سے بات کررہا ہو،،،
لگتا تھا مینیجر کو تیز لائٹ پسند نہیں ہے،،،ہر لمحے اس کو یہ سوچ جکڑ رہی
تھی،،،ذہن سوالات کی لیب بناتا جارہا تھا،،،

مجھے کیوں کس لیے بلایا گیا ہے،،،بلا کر مجھے اگنور کیوں کیا جارہا ہے،،،
اگر انٹروڈکشن مقصود تھا،،،تو میری فائل میں تو سب کچھ ہی ہوگا،،،
سلمان انہیں سوچوں میں گم تھا،،،کہ آواز آئی،،،اتنی کم سیلری میں کیوں جوائن
کی؟؟،،،
سلمان نے بڑی سی ٹیبل پر موجود دنیا کی چھوٹی سی بال کو ہاتھ سے گھمایا،،
مسکرا کر بولا،،،میری دنیا بہت چھوٹی سی ہے،،،اس میں یہ بہت ہے،،،
اٹس مین یو وِل رَن اوے اف یو ہیو بیٹر اپرچونٹی،،،
سلمان نے مطمئن لہجےمیں کہا،،،آئی ڈونٹ تھینگ سو،،،ایم ناٹ لائک ڈیٹ،،،
آئی نو ہاؤ لانگ آئی کین سپریڈ مائی لیگز،،،اٹس اناف فار مائی بریڈ اینڈ بٹر،،،
دین وائے یو لیفٹ یور لاسٹ جاب؟؟،،،مینیجر سیٹ گھماکر سامنے آگیا،،،
مینیجر کو دیکھ کر سلمان کی آنکھوں کی پتلیاں اپنی وسعت سے ذیادہ پھیل
گئیں،،،،،،(جاری)
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 1124 Articles with 863111 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 Nov, 2017 Views: 887

Comments

آپ کی رائے
hmmmm kahani may lugta hay koyee twist anay wala hay like it ...... waiting for the next episode ...... jeetay reh yai or issi ter ha likhtay reh yai ... Jazak Allah Hu Khair
By: farah ejaz, Karachi on Nov, 16 2017
Reply Reply
0 Like
thx sister for your keen interest in my novel and articles
By: hukhan, karachi on Nov, 17 2017
0 Like
simple but bueatifull
By: khalid, karachi on Nov, 16 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Nov, 17 2017
0 Like