تین سو سے زائد ہاتھیوں کی ہلاکت کیوں ہوئی؟

بوٹسوانا میں محکمہ تحفظ جنگلی حیات نے انکشاف کیا ہے کہ تین سو سے زائد ہاتھیوں کی ایک ساتھ ہلاکت کی وجہ  سبز اور نیلے رنگ کا ایک سیانوبیکٹیریا بنا ہے۔ یہ بیکڑیا زہریلے پانی میں پیدا ہوتا ہے۔ حکام نے اس خیال کو بھی مسترد کر دیا ہے کہ ان ہاتھیوں کو ان کے دانت حاصل کرنے کے لیے ہلاک کیا گیا تھا۔ ساتھ ہی اس خدشے کو بھی مسترد کر دیا گیا ہے کہ انہیں اینتھراکس زہر دی گئی تھی تاکہ اس ملک کی سیاحت کی صنعت کو متاثر کیا جا سکے۔

سائینوبیکٹیریا نے ہاتھیوں کو ہلاک کیسے کیا؟

سیانوبیکٹیریا خوردبینی حیاتیات ہیں، جو پانی میں عام پائے جاتے ہیں۔ بعض اوقات یہ مٹی میں بھی پائے جاتے ہیں اور کچھ سیانوبیکٹیریا نیوروٹاکسین تیار کرنے کا باعث بنتے ہیں۔ نیوروٹاکسین اعصاب پر اثر انداز ہونے والا زہریلا مادہ ہے اور یہ سانپ کے زہر میں بھی ملتا ہے۔

وائلڈ لائف اینڈ نیشنل پارکس کے افسر مادی روئبن کا صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ یہ بیکٹیریا پانی کی ترسیل والے پائپوں میں پیدا ہو چکا تھا۔ تالابوں میں پانی بہت کم تھا اور اس وجہ سے سیانوبیکٹیریا بہت زیادہ بڑھ چکا تھا۔ تاہم ان کا کہنا تھا، ''ابھی بھی بہت سے سوالات جواب طلب ہیں۔ کہ یہ ہی علاقہ کیوں اور اسی ایک خاص علاقے کے ہاتھی کیوں ہلاک ہوئے۔ بہت سی دوسری تھیوریز بھی ہیں، جن کے حوالے سے تحقیق جاری ہے۔‘‘

موسمیاتی تبدیلیاں تمام اقسام کے سیانوبیکٹیریا خطرناک نہیں ہوتے لیکن ماہرین کے مطابق اب انسانوں اور جانوروں کے لیے خطرناک اقسام میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور ایسا ماحولیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے ہے۔ افریقہ کے جنوب میں درجہ حرارت زمین کے دیگر خطوں کی نسبت دگنی رفتار سے بڑھ رہا ہے۔ ہاتھیوں کی جنت؟ غیر قانونی شکار کی وجہ سے افریقہ میں پائے جانے والے ہاتھیوں کی مجموعی تعداد میں کمی واقع ہوئی ہے۔ براعظم افریقہ کے ایک تہائی ہاتھی بوٹسوانا میں پائے جاتے ہیں اور اس ملک میں ہاتھیوں کی تعداد میں اضافہ بھی ہوا ہے۔ اس ملک میں تقریبا ایک لاکھ تیس ہزار ہاتھی موجود ہیں۔

ا ا / ع ا (روئٹرز، اے ایف پی) 


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.

175