انڈین کسان تحریک کے 100 ویں دن ہائی وے بلاک کریں گے

انڈیا میں زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کرنے والے کسانوں نے کہا ہے کہ وہ اپنی احتجاجی مہم کے 100 ویں دن سنیچر کو نئی دہلی کے باہر ایک بڑے ایکسپریس وے کو بلاک کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق ان دسیوں ہزاروں کسانوں نے گذشتہ سال دسمبر سے دہلی کے باہر ڈیرے ڈال رکھے ہیں۔

یہ کسان انڈیا کے وزیر اعظم  نریندر مودی سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ وہ نجی کمپنیوں کے لیے ملک کی زراعت کی منڈیوں کو کھولنے والے تین فارم قوانین کو منسوخ کر دیں جن کے بارے ان کا کہنا ہے کہ  کہ وہ ان کو کمزور کر دیں گے۔

یونین رہنماؤں نے جمعے کو کہا  کہ پنجاب کی شمالی ریاستوں،ہریانہ اور اتر پردیش کے کسانوں کا منصوبہ چھ لین مغربی پیرفیرل ایکسپریس وے پر ٹریفک کو روکنا ہے جو نئی دہلی کے باہر پانچ گھنٹوں تک انگوٹھی بناتی ہے۔

کسان یونینز اتحاد متحدہ کسان مورچہ کے ترجمان درشن پال نے کہا ’ہمیں یقین ہے کہ 100 دن کے بعد  ہماری تحریک حکومت پر ہمارے مطالبات پر عمل کرنے کے لیے اخلاقی دباؤ ڈالے گی کیونکہ موسم بھی بدتر ہو جائے گا۔‘

 ’یہ تحریک حکومت کو کمزور کر دے گی جسے دوبارہ بات چیت کرنے کے لیے ہمارے ساتھ بیٹھنا پڑے گا۔‘

حکومت کا کہنا ہے کہ ان اصلاحات سے پرانی زراعت کی منڈیوں میں سرمایہ کاری آئے گی اور یہ نئے آنے والے حکومتی انتظام والے مارکیٹ یارڈ کے ساتھ کام کریں گے جہاں کاشتکاروں کو اپنی پیداوار کی کم سے کم قیمت کی یقین دہانی کرائی جائے گی۔

کسان نئی دہلی کے باہر ایکسپریس وے کو بلاک کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔( فوٹو روئٹرز)

حکومت اور کسان رہنماؤں کے مابین بات چیت کے متعدد مراحل ناکام ہو جانے کے بعد اس تحریک کو بین الاقوامی مشہور شخصیات سمیت وسیع پیمانے پر حمایت حاصل ہو گئی ہے۔

کسان یونینز اتحاد متحدہ کسان مورچہ کے ترجمان درشن پال نے کہا کہ اس ماہ کٹائی کا موسم شروع ہوتے ہی دیہات میں رہنے والے پڑوسی اور دوست کھیتوں میں کام کریں گے جبکہ وہ اور دیگر کسان احتجاج جاری رکھیں گے۔

انڈیا کے دارالحکومت نئی دہلی میں عام طور پر شدید گرمی پڑتی ہے اور درجۂ حرارت 45 ڈگری سینٹی گریڈ تک بڑھ جاتا ہے تاہم درشن پال نے کہا کہ سخت موسم بھی ان کی مہم میں رکاوٹ نہیں بنے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا ’نئے زرعی قوانین ہمارے لیے ڈیتھ وارنٹ کی طرح ہیں لیکن ہم طویل فاصلہ طے کرنے کے لیے تیار ہیں۔‘

واضح رہے کہ انڈین کسان حکومت سے نئے زرعی قوانین کو واپس لینے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ کسانوں کے مطابق ان حکومتی اقدامات سے زرعی شعبے پر بڑی کمپنیوں کا تسلط قائم ہو جائے گا، جو قیمتیں کم کرنے پر مجبور کریں گی۔

دوسری جانب حکومت کا کہنا ہے کہ ان نئے قوانین سے مڈل مین کا خاتمہ ہوگا جس سے کسانوں کو فائدہ ہوگا اور وہ خود اپنا غلہ بیچیں گے اور قیمت بھی مقرر کریں گے تاہم کسانوں کا کہنا ہے کہ حکومت کے ان نئے قوانین سے حکومت کے زیرانتظام منڈیاں ختم ہو جائیں گی اور ان کو کارپوریٹس کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا جائے گا۔


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.

84