امریکی سینیٹ میں روس جرمنی گیس منصوبے کے خلاف بل نامنظور

image
امریکی سینیٹ میں ریپبلکن سینیٹرز روس اور جرمنی کے نورڈ اسٹریم ٹو گیس پائپ لائن منصوبے کے خلاف قانون سازی کی حمایت حاصل کرنے میں کامیاب نہ ہوسکے۔

امریکی سینیٹ میں ریپبلکن قانون ساز روس سے جرمنی کو گیس کی ترسیل کے منصوبے نورڈ اسٹریم ٹو پائپ لائن کے خلاف بل منظور کروانے کے لیے مطلوبہ حمایتی ووٹ حاصل کرنے میں ناکام ہوگئے۔

اِس سلسلے میں بل کی منظوری کے لیے ریپبلکن سینیٹرز کو 66 سینیٹرز کی حمایت کی ضرورت تھی حالآنکہ گزشتہ روز اِس بل پر ہونے والی ووٹنگ میں صدر جو بائیڈن کی ڈیمو کریٹک پارٹی کے بعض قانون سازوں نے بھی اس بل کی حمایت کی تھی۔

اِس بل کے حق میں 55 اور مخالفت میں 44 ووٹ ڈالے گئے۔ سینیٹر ٹیڈ کروز کی جانب سے پیش کردہ اس بل میں روس سے جرمنی کے لیے نورڈ اسٹریم ٹو گیس پائپ لائن منصوبے کے حوالے سے پابندیوں کی سفارش کی گئی تھی۔

توانائی بحران سے لڑتے یورپی ممالک بالخصوص جرمنی کو روس سے گیس کی ترسیل حاصل کرنے کے لیے نورڈ اسٹریم ٹو گیس پائپ لائن منصوبے کی اشد ضرورت ہے۔

واضح رہے کہ روس یورپی ممالک کو گیس فروخت کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے جو یورپی گیس کی بڑی ضرورت کو پورا کرتا ہے۔

یوکرائن تنازع کے تناظر میں روس کی سرکاری کمپنی گیس پروم نے پولینڈ اور یوکرائن سے گزرنے والی پائپ لائنوں کے ذریعے اس مرتبہ یورپ کو کم گیس فروخت کی ہے۔

نورڈ اسٹریم ٹو پائپ لائن پولینڈ اور یوکرائن کو بائی پاس کرتے ہوئے سمندری راستے سے سیدھی جرمنی پہنچتی ہے جس کی وجہ سے یوکرائن کو خاصا نقصان ہوا ہے کیوںکہ وہ اپنے ہاں سے گزرنے والی روسی پائپ لائنوں کے ذریعے کافی معاوضہ کماتا ہے۔

کچھ تجزیہ کاروں نے روس کے اِس اقدام کو جرمنی جانے والی نورڈ اسٹریم ٹو گیس پائپ لائن شروع کرنے کے لیے دباؤ ڈالنے کی حکمت عملی بھی قرار دیا ہے۔

Square Adsence 300X250

News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.