عرب ممالک سے زیادہ تیل کے ذخائر، پاکستان اپنی زمینوں سے تیل کیوں نہیں نکالتا؟ اندرونی سازش یا بیرونی مداخلت

image

پاکستان اس وقت شدید معاشی بحران سے دوچار ہے کیونکہ پاکستان کی مجموعی آمدن کا تقریباً آدھاحصہ پیٹرولیم مصنوعات کی امپورٹ پر خرچ ہوجاتا ہے جس کی وجہ سے پاکستان کو ملک کے دیگر معاملات چلانے کیلئے بیرونی امداد پر انحصار کرنا پڑتا ہے- لیکن اگر پاکستان اپنی زمینوں میں موجود تیل نکالنا شروع کردے تو کئی عرب ممالک سے زیادہ تیل نکال کر متحدہ عرب امارات اور کئی دیگر خلیجی ممالک سے زیادہ امیر بن سکتا ہے۔پاکستان میں پیٹرولیم مصنوعات کی درآمدات کا بل رواں سال 17 ارب ڈالر سے بھی تجاوز کرچکا ہے جبکہ 10 جون تک ملکی زرمبادلہ کے مجموعی ذخائر 14اعشاریہ 94 ارب ڈالر رہے اور اس وقت صورتحال یہ ہے کہ ڈالر کی قیمت 210 روپے سے بھی اوپر ہے اور ملک میں ڈالر کی کمی کی وجہ سے فروخت بند ہوچکی ہے۔ملک میں تیل کے ذخائر کے حوالے سے بات کرنے سے پہلے ایک بات جاننا ضروری ہے کہ ہم اپنے بینکوں میں کرنسی نوٹ چھاپ کر ملک میں تو استعمال کرسکتے ہیں لیکن بیرون ممالک سے کچھ بھی منگوانے کیلئے ہمیں ڈالرز کی ضرورت ہوتی لیکن اگر ہمارے بینکوں کے پاس اتنی مالیت کے ڈالرز نہ ہوں تو ہم باہر سے کچھ نہیں منگوا سکتے۔اب اگر ہم بات کریں پاکستان میں تیل کے ذخائر کی تو پاکستان کو یومیہ تقریباً 6 لاکھ بیرل تیل کی ضرورت ہوتی ہے جبکہ پاکستان گزشتہ 10 سال سے صرف 83 ہزار بیرل کے قریب تیل اپنی زمینوں سے نکال رہا ہے جبکہ باقی تقریباً سوا پانچ لاکھ بیرل بیرون ممالک سے امپورٹ کیا جاتا ہے۔آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ پاکستان اپنی ضرورت کیلئے سب سے زیادہ تیل متحدہ عرب امارات سے امپورٹ کرتا ہے۔ جی ہاں وہی امارات جہاں چند دہائیوں پہلے دھول اڑتی تھی، چھوٹے چھوٹے گھروں کو دیکھ کر لوگ مذاق اڑاتے تھے اور آج تیل کی دولت سے متحدہ عرب امارات دنیا کا ایک باوقار ملک بن چکا ہے اور پاکستان متحدہ عرب امارات سے تیل درآمد کرکے اپنی ضرورت پوری کرتا ہے۔یہاں اگر ہم آپ کو بتائیں کہ پاکستان کے پاس تیل کے کتنے ذخائر ہیں تو یقیناً آپ کے ہوش اڑ جائینگے۔پاکستان اگر اپنے تیل کے ذخائر سے خود استفادہ کرنا شروع کردے تو ہمیں آئی ایم ایف ، ورلڈ بینک اور دیگر ممالک سے قرضوں کی بھیک مانگنے کی ضرورت نہیں پڑے گی اور پاکستان بھی عرب ممالک کی طرح معاشی طور پر مستحکم ہوکر ترقی کی راہ پر گامزن ہوسکتا ہے۔ہماری معاشی بدحالی کی وجہ یہ ہے کہ پاکستان اپنی ایکسپورٹ اور بیرون ممالک مقیم پاکستانیوں کی طرف سے بھیجے جانیوالے زرمبادلہ کا بڑا حصہ تیل پر خرچ کردیتا ہے لیکن اگر یہ پیسہ بچا لیا جائے تو پاکستان کو دیگر امور کیلئے قرضوں کی ضرورت نہیں پڑے گی جس سے ملک میں ٹیکسز میں کمی ہوگی اور مہنگائی کو قابو کیا جاسکتا ہے لیکن اپنے ملک میں تیل نکالنے کے بجائے باہر سے منگوانے کی وجہ سے حکومت کو خزانے کا بڑا حصہ لٹانا پڑتا ہے۔بھارت پاکستان کی سرحد سے صرف 10 کلو میٹر دور راجستھان کے علاقے سے یومیہ ایک لاکھ 75 ہزار بیرل تیل نکال رہا ہے لیکن پاکستان سرحد کے قریب موجود تیل کے ذخیرے سے فائدہ اٹھانے کے بجائے ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھا ہے، صرف راجستھان ہی نہیں سانگھڑ، سکھر، گھوٹکی، قصور، بہاولنگر اور رحیمیار خان کے اضلاع میں تیل اور گیس کے شواہد موجود ہیں اورلائسنس لینے والی کمپنیاں یہاں تیل اور گیس کی تلاش اور پیداوارپر توجہ نہیں دے رہیں جس سے بھارت کو فائدہ پہنچ رہا ہے ، بعض اطلاعات تو یہ بھی ہیں کہ بھارت تیل نہ نکالنے کیلئے کئی کمپنیوں کو پیسہ دیتا ہے تاکہ وہ کام نہ کریں اور بھارت تیل کی اس دولت سے فائدہ اٹھاتا رہے۔خیبر پختونخوا میں بھی تیل اور گیس کے بڑے ذخائر دریافت ہوچکے ہیں اور ماہرین کا کہنا ہے کہ پاکستان کی تیل پیدا کرنے کی صلاحیت 93 ہزار بیرل یومیہ ہے جس میں سے خیبر پختونخوا 53 ہزار بیرل یومیہ کی صلاحیت رکھتا ہے، خیبر پختونخوا میں گیس کے کل ذخائر کی مقدار 19 ٹریلین کیوبک فٹ جبکہ تیل کے 600 ملین بیرل ہیں اور یہی نہیں بلکہ خیبر پختونخوا میں موجود ذخائر میں سے ابھی صرف چند پر کام شروع ہوا ہے جبکہ دیگر سائٹس پر کام ہونا ہے۔او جی ڈی سی ایل نے گزشتہ دنوں سندھ اور پنجاب میں تیل اور گیس کے نئے ذخائر کی دریافت کا اعلان کیا ہے جبکہ اس سے پہلے پاکستان میں گزشتہ چند سالوں میں تیل اور گیس کے 100 سے زائد ذخائر دریافت ہوچکے ہیں اور چاروں صوبوں میں یہ ذخائر موجود ہیں لیکن اس کے باوجود کہیں بھارت فائدہ اٹھارہا ہے تو کہیں ایران ہمارے تیل کے ذخائر سے استفادہ کررہا ہے لیکن پاکستان اپنے ملک میں موجود وسیع ذخائر سے فائدہ اٹھانے کے بجائے عوام پر ٹیکسوں کا بوجھ لاد کر بیرونی قرضوں کے نیچے دبارہا ہے۔ماہرین کے مطابق اگر پاکستان میں موجود تیل اور گیس کے ذخائر کو نیک نیتی سے استعمال میں لایا جائے تو اگلے 50 سال تک پاکستان کو کسی ملک سے تیل خریدنے کی ضرورت نہیں پڑے گی اور ملک میں روزگار کے لاکھوں مواقع پیدا ہوسکتے ہیں لیکن اس کیلئے ملک میں معاشی و سیاسی استحکام اور نیک نیتی کی ضرورت ہے۔


News Source   News Source Text

مزید خبریں
پاکستان کی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.