گنز اینڈ روزز (قسط ٦)

(Hukhan, karachi)

اک چھوٹا سا دھماکہ ہوا،،،اور دوڑتا ہوا سایہ ساکت ہو گیا،،،
آفندی کے فائر کے ساتھ ہی اک اور سائے نے جمپ لگا کے اسے دبوچ لیا،،،
آفندی کے کانوں نے رانا کے حلق سے غصیلی سی غراہٹ سنی،،،سالے تو
کیا سمجھتا ہے،،،تو ہی دنیا میں پٹاخہ چلا سکتا ہے،،،تیری ایسی کی۔۔۔۔

آفندی نے اپنی ننھی مگر قیامت برپا کر دینے والی گن کو اس کی جگہ پہنچا
دیا،،،
باہر مت جانا،،،اس کا بندوست کرکے آنا،،،کال سپیشل برانچ میڈیکل ٹیم،،،ایز
سون ایز پوسیبل،،،آفندی نے کمرے میں بیٹھے ہوئے باجوہ کو دیکھ کر کہا
مجھے پہلے ہی شک تھا،،،کہ تمہارا پیچھا کیا ہو گا،،،یہی خبر تمہارے،،،،،
کور ایجنٹ نے بھی دی ہوئی تھی،،،وہ چاہتے تو پچاس لاکھ تم سے رستے میں
ہی چھین لیتے،،،

مگر وہ تمہارا ٹھکانہ دیکھ لینا چاہتے تھے،،،ان کو حیرت ہوئی ہو گی ،،،کہ
ایسٹیٹ ایجنسی میں کیا ہو رہا ہے،،جبکہ ہمارے زیر استعمال سب گاڑیوں
کے پلیٹ فارم بھی اصلی نہیں ہیں،،،مگر آج کے واقعے کے بعد ان کو یقین
ہو جائے گا،،،ہم لوگ کریمنل نہیں بلکہ ایجنسی کے لوگ ہیں،،،
باجوہ!! تم اپنے کسی رشتے دار یا دوست سے نہ ملنا،،،نہ ہی نامعلوم کال پر
کہیں آنا جانا،،،اپنی موومنٹ محدود کردو،،،

رانا غصے سے جھنجھلائے ہوئے انداز میں کمرے میں داخل ہوا،،ران ہلکی
سی زخمی ہے،،،اس کے پاس اب اک شارٹ ہے،،،اور رسی نام کی کوئی چیز
بھی آس پاس نہیں،،،اس کی شارٹ میں بھی بس اک ٹچ بٹن ہے،،،کمرے
میں لائٹ نہیں ہے،،،اب تک صرف فارسی بول رہا ہے،،،
دو جوتے پڑیں گے تو کم سے کم سات زبانیں تو بول ہی لے گا،،،

میں سمجھا بلّی ہو گی،،،کم بخت بلّا نکلا،،،پہلے تو رانا سے لڑکیاں ہی بھاگا
کرتی تھیں،،،اب تو مرد بھی،،،اب تو مرد بھی بھاگنے لگے مجھ سے،،،رات کو
بھی آرام نہیں،،،
اوہ،،،،،،،رانا کو جیسے بجلی کا جھٹکا لگا ہو،،جلدی سے فون اٹھا کے نمبر ڈائل
کیا،،،فون ریسیو ہوتے ہی ٹرٹر اور فرفر بولنے لگا،،،
جان صرف چارگھنٹے لیٹ ہوا ہوں،،،میں،،،بارہ ،،،وہاں سے ڈانٹ کی آواز سن
کر ،،،رانا ہکلا کر،،،،بارہ،،،جان،،،،صرف،،،،نہیں،،،اوہ سورررری،،،

فون کو بند کرکے صوفے پر پھینک دیتا ہے،،،یار،،،اگر بارہ بجے برتھ ڈے وش
نہ کرو،،،تو کہتی ہے،،،لعنت،،،میں کسی سبزی والے سے سیٹ ہو جاؤں گی
حد ہے،،،لڑکیوں کا کوئی لیول ہی نہیں،،،
کہاں ڈی ایس پی،،،کہاں سبزی والا،،،بھنڈی لو،،،توری لو،،،کدو لو،،،حد ہے،،،،!
رانا ڈوب مر،،،،!
آفندی کی بیپ بجتی ہے،،،آفندی غور سے سنتا ہے،،،حیرت سے،،،کیا،،،!!!!!!!!
(جاری)
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 1124 Articles with 878951 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
03 Jan, 2018 Views: 769

Comments

آپ کی رائے
nice go brother interesting and suspense
By: sohail memon, karachi on Jan, 03 2018
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Jan, 04 2018
0 Like